Hot Masala Board - Free Indian Sex Stories & Indian Sex Videos. Nude Indian Actresses Pictures, Masala Movies, Indian Masala Videos

UKBL ~ 10 Second Banner Rotator


Go Back   Hot Masala Board - Free Indian Sex Stories & Indian Sex Videos. Nude Indian Actresses Pictures, Masala Movies, Indian Masala Videos > Urdu Sex Stories - Urdu font sex stories, urdu kahani, urdu sex kahani

Reply
 
Thread Tools Display Modes
  #361  
Old 11-19-2015, 08:50 PM
kaamdev kaamdev is offline
Senior Member
 
Join Date: Jan 2012
Posts: 222,998
Default سالی: پورے گھر والی

کچھ دیر تک اکٹھے لیٹے رہنے کے بعد میں اپنا جسم صاف کرنے واش روم چلی گئی اور باتھ ٹب میں کھڑی ہوکر شاور کھول لیا اور اپنے جسم کو دھونے لگی۔ اتنے میں عمران بھی واش روم میں آگئے اور میں پیچھے کھڑے ہوکر میرے پیٹ پر ہاتھ پھیرنے لگے اور جسم صاف کرنے میں میری مدد کی۔ پھر انکے ہاتھ میرے مموں پر آگئے اور انہیں بھی صاف کرنے لگے۔ صاف کرنے کے بعد دھیرے دھیرے عمران نے میرے مموں کو دبانا شروع کر دیا۔ اور ساتھ ہی میری گردن پر اپنی زبان سے مساج شروع کر دیا۔ گردن پر زبان سے مساج اور ساتھ میں ممے دبانے سے مجھے بے پناہ لذت مل رہی تھی اور میں نے ہلکی سسکاریاں بھرنی شروع کر دیں۔ شاور کا پانی ہم دونوں کے اوپر گر رہا تھا۔ پھر عمران نے مجھے ٹب سے باہر نکالا اور ٹب میں پانی بھرنا شروع کر دیا، ساتھ ہی باہر نکل کر ہینڈ شاور کے زریعے میرے جسم کو دھونا شروع کیا۔ اب وہ میرے سامنے کھڑے تھے ایک ہاتھ میں ہینڈ شاور لیے میرے مموں پر پانی ڈال رہے تھے تو دوسرا ہاتھ میرے گول چوتڑوں پر رکھ کر مجھے اپنے قریب کیا ہوا تھا اور زبان سے میرے نپل پر گول گول دائیرے بنا رہے رہے تھے۔ میری لذت میں مسلسل اضافہ ہو رہا تھا اور اب مجھے اپنی چوت گیلی محسوس ہورہی تھی۔
[br]
پھر عمران نے شاور میرے ہاتھ میں پکڑا دیا اور مجھے اپنے سینے سے لگا کر اپنے ہاتھ میری کمر پر مسلنے لگے اور اپنے ہوںٹ میرے ہونٹوں پر لگا دیے۔ عمران میرے دونوں ہونٹوں کو بڑی شدت کے ساتھ چوم رہے تھے میرے گیلے ہونٹوں سے بہتا پانی انہیں کسی شربت سے کم نہیں لگ رہا تھا۔ پھر میں بھی عمران کا بھرپور ساتھ دینے لگی اور اپنی زبان عمران کے منہ میں داخل کر کے عمران کی زبان کو چوسنے لگی۔ میرے ہاتھ عمران کی کمر کا مساج کر رہے تھے اور عمران کا ایک ہاتھ میری کمر اور دوسرا میرے چوتڑوں کو دبا رہا تھا۔ ہم دونوں ایکدوسرے کی زبان چوسنے میں مصروف تھے اور زبان کو منہ میں گول گول گھما بھی رہے تھے۔ پھر عمران نے میرے منہ سے اپنی زبان نکالی اور میری گردن پر پیار کرنا شروع کر دیا، گردن سے ہوتے ہوئے میرے مموں تک آگئے اور میرے ممے چوسنے لگے۔ میرے نپل جو مکمل طور پر کھڑے تھے اور سخت ہو رے تھے انکو عمران ہلکے ہلکے کاٹ رہے تھے اور مزے کی شدت سے میرے منہ سے ام م م م ۔۔۔ آہ ہ ہ ہ ہ ۔۔۔ اف ف ف ف ف ف جیسی سسکاریاں نکل رہی تھیں۔ میں نے اپنے ہاتھ عمران کی کمر سے ہٹا کر لن پکڑنا چاہا تو وہ ابھی بہت چھوٹا اور نرم تھا جیسے کسی بچے کا ہوتا ہے۔ میں نے ہاتھ میں پکڑ کر اسکی مٹھ مارنی شروع کی تو اس میں کچھ تناو پیدا ہوا پھر میں عمران کے سامنے گھٹنوں ے بل بیٹھ گئی اور عمران کے لن پے اپنی زبان پھیرنی شروع کی۔ اب ہینڈ شاور عمران کے ہاتھ میں تھا اور پانی عمران کے جسم سے بہتا ہوا لن تک آرہا تھا جسکو میں چوس رہی تھی ۔ پھر میں نے اپنی زبان کی نوک لن کی ٹوپی پر گھمانی شروع کی جس سے عمران کو مزہ آنے لگا اور انہوں نے میرا سر زور سے پکڑ کر اپنی طرف کھینچا اور میں نے لن اپنے منہ میں ڈال کر چوسنا شروع کردیا۔ میری پوری کوشش تھی کہ اس بار لن کو اپنے دانتوں سے محفوظ رکھوں اور زیادہ سے زیادہ زبان اور ہونٹوں کا استعمال کروں۔ میرے منہ کی گرمی نے عمران کے لن کو دوبارہ سے 7 انچ لوہے کا راڈ بنا دیا تھا اور عمران بھی مزے سے منہ سے ہلکی ہلکی آوازیں نکال رہے تھے اور ساتھ ساتھ کہ رہے تھے فائزہ اور زور سے لن چوسو۔ ایک ہاتھ سے لن پکڑ کر منہ میں لیا ہوا تھا تو دوسرے ہاتھ سے میں عمران کے ٹٹے سہلا رہی تھی جس کی وجہ سے عمران کو دہری لذت مل رہی تھی۔
[br]
3 منٹ تک عمران کے لن نے میرے منہ میں ہی چدائی کی اور اسکے بعد عمران نے مجھے کھرڑا ہونے کو کہا۔ میں نے دوبارہ سے عمران کہ کہا کہ میری چوت چاٹ کر مجھے بھی مزہ دیں مگر عمران نے ایک بار پھر انکار کار دیا اور میرا منہ دیوار کی طرف کرکے مجھے دونوں ہاتھ دیوار پر رکھنے کو کہا اور کہا کہ اپنی گانڈ باہر کی طرف نکالو یعنی اب میرا منہ دیوار کی طرف تھا اور میں نے اپنے چوتڑ عمران کی طرف نکالے ہوئے تھے۔ عمران نے اپنی 2 انگلیاں میری چوت پر رکھ کر میرا گیلا پن چیک کیا اور چوت کی گرمی سے اندازہ لگایا کہ میں ایک بار پھر چدنے کے لیے تیار ہوں، یہ دیکھ کر عمران نے ایک بار پھر سے اپنا 7 انچ کا لن میر چوت پر سیٹ کیا اور دھیرے سے دھکا لگایا، مجھے ایک بار پھر سے تکلیف ہونا شروع ہوئی، اور میرے منہ سے چیخ نکلی اب کی بار عمران نے مجھے چِیخ مارنے دی اور واش روم میری چیخوں سے گونجنے لگا۔ عمران نے ہلکا ہلکا پریشر بڑھانا شروع کیا میری چوت پر اور کچھ ہی سیکنڈز میں سارا لن میری چوت میں تھا۔ پھر عمران نے لن کو آہستہ آہستہ آگے پیچھے کرنا شروع کر دیا۔ کچھ دیر درد محسوس کرنے کے بعد مجھے مزہ آنے لگا تو میں بھی گانڈ ہلا کر عمران کا ساتھ دینے لگی۔ یہ دیکھتے ہوئے عمران نے میری چوت میں اپنے لن سے زور دار دھکے لگانے شروع کر دیے۔ عمران نے اپنے دونوں ہاتھ میرے کولہوں کی سائیڈ پر رکھ کر میری گانڈ کو اپنی طرف نکالا ہوا تھا جسکی وجہ سے میری کمر میں ہکا سا درد بھی شروع ہوگیا، مگر چوت میں لگنے والی ضربوں نے وہ معمولی درد بھلا کر لذتیں دینا شروع کر دیں۔ عمران کے دھکوں کی سپیڈ بڑھتی جا رہی تھی اور مجھے اپنے جسم میں طاقت ختم ہوتی ہوئی محسوس ہونے لگی۔ میری چوت اب پانی چھوڑنے ہی والی تھی اور مزے کی شدت سے میرے منہ سے آوازاں کا نا رکنے والا سلسلہ جاری تھا، آہ ہ ہ آہ ہ ہ آہ ہ، اف ف ف ف عمران اور زور سے چودو مجھے، عمران تمہارا لن مجھے بہت مزہ دے رہا ہے، یہ چوت اب تمہاری ہے اسے پھاڑ ڈالو، اس طرح کی بے ربط باتیں کرتے ہوئے میری چوت نے پانی چھوڑ دیا
[br]
اب باتھ ٹب بھی پانی سے بھر چکا تھا عمران نے اپنا لن میری چوت سے باہر نکالا اور ہم دونوں باتھ ٹب میں بیٹھ گئے۔ پانی بہت ٹھنڈا تھا جس سے میرے جسم کو سکون ملا مگر عمران کے جسم کی گرمی ابھی ختم نہیں ہوئی تھی، عمران ٹب میں اپنی ٹانگیں پھیلا کر لیٹںے والی پوزیشن میں آگئے مگر انکا سر اور کندھے پانی سے باہر تھے، عمران نے مجھے اپنے لن پر سواری کرنے کی دعوت دی جو میں نے بغیر جھجک قبول کر لی اور عمران کی گود میں بیٹھ کر لن اپنے ہاتھ سے پکڑ کر چوت پر سیٹ کیا اور ایک جھٹکے سے لن پر بیٹھ کر پورا لن اپنی چوت میں لے لیا۔ اب میں نے اپنی ٹانگیں فولڈ کر لی تھیں اور اپنے دونوں ہاتھ عمران کے سینے پر رکھ کر اپنی گانڈ کو ہلکا سا اوپر اٹھا کر ہلا نے لگی۔ آہستہ آہستہ میں نے اپنی سپیڈ میں اضافہ کر دیا اور لن بڑی روانی کے ساتھ میرے چوت کو چودنے لگا۔ کچھ دیر اسی پوزیشن میں چودائی کروانے کے بعد میں تھک گئی تو عمران نے مجھے اپنی طرف کھیچ کر گلے سے لگا لیا اور اپنے دونوں ہاتھ میرے چوتڑوں پر رکھ کر گانڈ اوپر اٹھانے میں سہارا دیا اور خود نیچے سے دھکے مارنےجاری رکھے۔ لن مسلسل میری چدائی کر رہا تھا اور میری پھدی ایک بار پھر پانی چھورںے کو تیار تھی۔ میں نے عمران کو بتایا کہ میں چھوٹنے والی ہوں تو عمران نے اپنے دھکو کی سپیڈ اور بھی بڑھا دی۔ اب پانی میں چدائی کی وجہ سے پانی مسلسل ہل رہا تھا اور پانی کا اپنا ہی ایک شورتھا ، پانی کے اس شور اور میری سیکس میں ڈوبی سسکیوں نے ماحول کو بہت ہی سیکسی بنا دیا تھا کچھ ہی دھکوں کے بعد میری پھدی نے دوسری بار پانی چھوڑ دیا۔
[br]
اب کی بار عمران نے پھر اپنا لن باہر نکالا اور مجھے ڈوگی سٹائل میں آنے کو کہا۔ میں نے اپنے دونوں بازو باتھ ٹب کے ساتھ بچھا لیے اور اپنی گاںڈ اوپر اٹھا کر ڈوگی سٹائل میں عمران کو چودائی کی دعوت دی۔ عمران میرے پیچھے سے آئے اور لن میری چوت پر رکھ کر ایک ہی جھٹکے میں اند ر ڈال کر دھکے مارنے لگے۔ اس پوزیشن میں مجھے تھوڑا درد بھی محسوس ہورہا تھا کیونکہ میری چوت تھوڑی ٹائٹ ہوگئی تھی اور لن کی رگڑ زیادہ محسوس ہو رہی تھی۔ عمران کے جاندار دھکے جاری تھے اور پانی کا ہلنا بھی عمران کے دھکوں کے ساتھ ساتھ بڑھتا جا رہا تھا۔ لذت اہستہ آہستہ درد پر حاوی ہونے لگی تو میں نے بھی عمران کا ساتھ دینا شروع کیا۔ جب عمران لن باہر کی طرف نکالتے تو میں اپنی گانڈ آگے کی طرف لے جاتی اور جب عمران نے واپس لن چوت میں داخل کرنا ہوتا تو عمران کے دھکے کے ساتھ ہی میں اپنی گانڈ عمران کی طرف لے جاتی جس سے لن اور بھی زیادہ شدت کے ساتھ میری چوت کو چیرتا ہوا اندر تک جاتا۔ اب عمران نے اپنے دونوں ہاتھوں سے میرے 34 سائز کے ممے اپنے ہاتھو میں زور سے پکڑ لیے اور میری چدائی اور بھی مزیدار ہونے لگی۔ وہ اپنی انگلیوں سے میرے نپل دبانے لگے اور دھکوں کی سپیڈ میں اضافہ ہوگیا یہ اضافہ اتنا شدید تھا کہ میں سمجھ گئی عمران کا لن اب کی بار منی نکالنے لگا ہے، میں نے عمران کو فورا لن باہر نکالنے کو کہا تاکہ منی میری چوت میں نا جا سکے۔ عمران نے ہاں میں سر ہلایا اور دھکوں کی سپیڈ میں اور اضافہ کر دیا پھر ایک دم سے اپنا لن باہر نکالا اور ہاتھ میں پکڑ کر خود ہی مٹھ مارنے لگے اور ساری منی میری گانڈ اور چوتڑوں پر نکال دی۔ کچھ قطرے میری کمر تک بھی گئے۔ عمران نے چند جھٹکے مارے اور اپنی ساری منی نکالنے کے بعد پر سکون ہوگئے مگر میرا پانی ابھی نہیں نکلا تھا اس لیے مجھے مزید چدائی کی ضرورت تھی میں نے ٹب میں اپنی گانڈ اور کمر سے منی صاف کی اور عمران کو دوبارہ سے بیڈ روم میں چلنے کو کہا۔ عمران مجھے اٹھا کر بیڈ روم میں لے گئے اور بیڈ پر لٹا کر میرے ساتھ لیٹ گئے اور میرے نپل چاٹنا شروع کر دیا۔ میں نے فورا ہی عمران کا لن جو اب دوبارہ سے چھوٹا ہو چکا تھا اپنے ہاتھ میں لیا اور اسکو پھدی کے ساتھ ملا کر اندر ڈالنے کی کوشش کرنے لگی کیونکہ میری پھدی ابھی جل رہی تھی۔ عمران نے کہا یہ ایسے نہیں جائے گا پہلے اسے منہ میں لے کر کھڑا کرو پھر اپنی چوت کی پیاس بجھاو ا س سے میں نے یہ سنتے ہی فورا عمران کو نیچے لٹایا اور خود انکے اور آکر لن منہ میں لیکر کسی قلفی کی طرح چوسنے لگی۔ میرے منہ کی گرمی سے لن نے آہستہ آہستہ انگڑائی لینا شروع کی اور 2 منٹ میں ہی دوبارہ سے کھڑا ہوکر چدائی کے لیے تیار ہوگیا۔ یہ دیکھتے ہی میں فورا لیٹ گئی اور اپنی ٹانگیں پھیلا کر عمران کو چودنے کی دعوت دی، عمران نے میری دونوں ٹانگیں اٹھا کر اپنے کندھے پر رکھیں اور لن چوت میں ڈال کر فل سپیڈ میں چدائی شروع کر دی۔ میں نے بھی گانڈ اٹھا کر عمران کا بھرپور ساتھ دینا شروع کر دیا۔ اس بار میرے دونوں ہاتھ اپنے مموں پر تھے اور میں ممے دبانے کے ساتھ ساتھ بھرپور سسکیاں بھی نکال رہی تھی جس سے چدائی کا مزہ دوبالا ہوگیا تھا۔ پھر عمران نے اپنی پوزیسشن بدلی اور میری دونوں ٹانگیں نیچے بیڈ پر رکھ کر سیدھی بچھا دیں۔ میں اب بیڈ پر بالکل سیدھے لیٹی تھی اور ٹانگیی کھولنے کی بجائے لمبی پھیلائی ہوئی تھیں۔ عمران بھی میرے اوپر لیٹ گئے سیدھے اور اپنا لن میری پھدی پر رکھ کر اپنا وزن میرے اوپر ڈالا تو لن خود بخود پھدی میں چلا گیا مگر میری چیخیں ایک بار پھر کمرے میں گونجنے لگیں کیونکہ ٹانگیں ملی ہونے کی وجہ سے پھدی بالکل ٹائٹ ہوگئی تھی اور اس میں عمران کا موٹا لن پھدی کی دیواروں سے مسلسل ٹکرا رہا تھا۔ عمرا ن میرے اوپر بالکل سیدھے لیٹے تھے اور اب صرف وہ اپنی گانڈ ہلا کر مجھےچودنے میں مصروف تھے۔ 2 منٹ اسی پوزیشن میں چدائی کے بعد میرے جسم میں سوئیاں سی چبھنے لگی اور میں نے عمران کو سپیڈ بڑھانے کا کہا، عمران نے جیسے ہی اپنے دھکے پڑھائے میرے جسم نے جھٹکے کھانا شروع کیے اور پھدی نے پانی چھوڑ دیا۔ اب عمران نے میرے اوپر سے اٹھ کر میری ٹانگیں اٹھا کر مزید چودنا چاہا تو میں نے کہا کہ میں اب مزید چودائی نہیں کروا سکتی میری چوت کا برا حال ہو چکا ہے۔ مگر عمران نے کہا کہ انہیں بھی ابھی فارغ ہونا ہے اور اگر وہ فارغ نہیں ہوئے تو چین نہیں آئے گا۔
[br]
یہ سن کر میں عمران کے سامنے ڈوگی سٹائل میں بیٹھ گئی مگر اس بار عمران کے لن کی طرف میری گانڈ کی بجائے میرا منہ تھا۔ میں نے عمران کا لن اپنے منہ میں لیا اور اسکو لولی پاپ کی طرح اپنے ہونٹوں اور زبان سے چوسنے لگی۔ آہستہ آہستہ پورا لن میرے منہ میں تھا اور اب عمران میرے منہ کی چدائی کر رہے تھے۔ میرا پورا منہ کھلا ہوا تھا اور عمران اس میں اپنے لن کے دھکے لگا رہے تھے میرے دانت ہلکے سے عمران کے لن سے رگڑ کھا رہے تھے جس سے عمران کو کچھ تکلیف بھی ہورہی تھی مگر عمران نے دھکوں کا سلسلہ جاری رکھا اور میں منہ کھولے عمران کو فارغ کرنے میں مدد دیتی رہی۔ کچھ ہی دیر میں عمران کے لن میں تناو بڑھ گیا اور سپیڈ بھی بڑھ گی٫ پھر عمران ک لن نے 4، 5 جھٹکوں میں ہی اپنی منی میرے منہ میں چھوڑ دی، اس بار میں پہلے سے تیار تھی جیسے ہی منی نکلی میں نے اسکو منہ سے باہر نکالنا شروع کر دیا اور منہ میں جمع ہونے نہیں دی۔ 5 جھٹکے مارنے کے بعد عمران کو بھی سکون مل گیا۔ اور عمران نڈھال ہوکر بیڈ پر لیٹ گئے۔ جبکہ میں منہ دھونے واش روم میں چلی گئی۔ اتنے میں عمران کو صائمہ کا فون آیا کہ مجھے لینے آجاو۔ عمران نے کپڑے پہنے اور صائمہ کو لینے چلے گئے جب کہ میں نے بھی اپنے کپڑے الماری میں رکھے اور دوسرے کپڑے نکال کر پہنے اور کھانا بنانے کے لیے کچن میں چلی گئی۔ میرے لیے چلنا دشوار ہو رہا تھا کیوں کہ آج اپنی پہلی چدائی میں ہی میں اپنی چوت کا برا حشر کروا بیٹھی تھی۔ لیکن میں خوش تھی کہ میری زندگی کی پہلی چدائی مکلمل ہوچکی تھی۔ اور مجھے چودنے والا کوئی اور نہیں میرا اپنا بہنوئی تھا۔ اور میں اب آدھی گھر والی سے پوری گھر والی بن چکی تھی۔
Reply With Quote
Sponsored Links
CLICK HERE TO DOWNLOAD INDIAN MASALA VIDEOS n MASALA CLIPS
Sponsored Links - Indian Masala Movies
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator

"Uncensored Indian Masala Movies" - The hottest Indian Sex Movies and Mallu Masala clips

Check out beautiful Indian actress in sexy and even TOPLESS poses

Indian XXX Movies!

Widest range of Indian Adult Movies of shy, authentic Desi women.....FULLY NUDE DESI MASALA VIDEOS!!! Click here to visit now!!!
  #362  
Old 11-19-2015, 08:50 PM
aamjayadakha aamjayadakha is offline
Senior Member
 
Join Date: Feb 2009
Posts: 281,504
Default سالی: پورے گھر والی

yumy update
thnkxxx
Reply With Quote
Sponsored Links
CLICK HERE TO DOWNLOAD INDIAN MASALA VIDEOS n MASALA CLIPS
Sponsored Links - Indian Masala Movies
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator

"Uncensored Indian Masala Movies" - The hottest Indian Sex Movies and Mallu Masala clips

Check out beautiful Indian actress in sexy and even TOPLESS poses

Indian XXX Movies!

Widest range of Indian Adult Movies of shy, authentic Desi women.....FULLY NUDE DESI MASALA VIDEOS!!! Click here to visit now!!!

 

UKBL ~ 10 Second Banner Rotator
Sponsored Links
  #363  
Old 11-19-2015, 08:50 PM
lamboo lamboo is offline
Senior Member
 
Join Date: Jan 2012
Posts: 222,888
Default سالی: پورے گھر والی

رافعہ کی گانڈ پر زبان رکھی تو مجھے اسکا ٹیسٹ کچھ نمکین سا لگا۔ وہ کچھ دیر پہلے ہی ندیم سے گانڈ مروا رہی تھی تو اسکے لن کا ذائقہ بھی اسکی گانڈ سے آرہا تھا۔ رضوان رافعہ کے ممے چوسنے میں مصروف تھا اور میں پیچھے سے رافعہ کی گانڈ چاٹنے میں مصروف تھی۔ رافعہ شاید بہت عرصے سے چدوا رہی تھی اس لیے وہ چدائی کو بھرپور طریقے سے انجوائے کرنا جانتی تھی۔ جیسے ہی میں نے اسکی گانڈ پر اپنی زبان پھیرنا شروع کی تو اس نے منہ سے سسکیاں نکالنا شروع کر دیں۔ اسکی سسکیاں بہت سیکسی تھیں اور اسکی آواز میں موجود چاشنی کسی بھی سوئے ہوئے لن کو جگانے کے لیے کافی تھی۔ اسی وجہ سے رضوان کا لن جو میری چدائی کے بعد اب سو چکا تھا رافعہ کی سیکس سے بھرپور آوازیں سن کر اس نے ایک بار پھر اپنا سر اٹھانا شروع کر دیا۔ میں پیچھے سے گانڈ چاٹتے ہوئے تھوڑا نیچے ہوئی رافعہ کی چوت پر اپنی زبان رکھی تو وہ بہت گیلی ہو رہی تھی۔ اس پوزیشن میں چوت چاٹنا کافی مشکل تھا کیونکہ مجھے کافی جھکنا پڑ رہا تھا۔ اس مشکل سے بچنے کے لیے میں لیٹ گئی، میرا سر رضوان کے لن کے تھوڑا ہی اوپر تھا اور میرا منہ اوپر رافعہ کی چوت کی طرف تھا۔ لیٹنے کے بعد میں نے رافعہ کو چوتڑوں سے پکڑ کر اسکو چوت کو نیچے کیا تو اس نے فورا ہی اپنی چوت میرے منہ کے اوپر رکھ دی۔ اسکی چوت کافی کھلی تھی اور میری زبان بہت ہی آرام سے اسکی چوت کی سیر کر رہی تھی۔ مجھے اپنی گردن پر رضوان کے لن کا دباو بھی محسوس ہو رہا تھا جو اب کسی ناگ کی طرح کھڑا ہوجانا چاہتا تھا۔

رافعہ کی چوت کے گیلے پن میں مسلسل اضافہ ہورہا تھا جسکا مطلب تھا کہ وہ چدائی کے لیے مکمل تیار تھی۔ یہ ایک حقیقت ہے کہ لڑکی چاہے جتنی بھی ماہر ہو چدائی کی اور جتنے بھی لن لے چکی ہے، نئے لن کے لیے اسکی چوت ہمیشہ ہی مچلتی ہے۔ اور یہی کچھ رافعہ کے ساتھ بھی ہورہا تھا۔ رضوان کا لن اسکی چوت کے لیے بالکل نیا تھا اور اسکو لینے کے لیے وہ مکمل تیار تھی۔ سو میں نے اسکی چوت کو چاٹنا چھوڑ کر اپنی جگہ سے اٹھی اور رضوان کا لن اپنے منہ میں لیکر چوسنے لگی، تھوڑا سا لن چوسنے کے بعد جب لن گیلا ہوگیا تو میں نے رضوان کے لن کو پکڑ کر رافعہ کی چوت پر رکھ دیا، رافعہ اپنی چوت پر لن کو محسوس کر کے فورا ہی پیچھے ہوئی اور لن کی ٹوپی بڑے آرام سے اسکی چوت میں داخل ہوگئی، ساتھ ہی رضوان نے ہلکا سا دھکا مارا اور رضوان کا پورا لن جڑ تک رافعہ کی چوت پر تھا۔ اور رافعہ بہت ہی حیرت انگیز طور پر فورا ہی رضوان کے لن پر اچھلنے لگی۔ رضوان ساکت لیٹا تھا اور رافعہ اپنی گانڈ ہلا ہلا کر اپنی چوت کو چدوا رہی تھی۔ تھوڑی دیر یہ چدائی دیکھنے کے بعد میں اٹھی اور رافعہ کے سامنے جا کر کھڑی ہوگئی۔ رضوا نیچے لیٹا تھا میں اسکے اوپر بیڈ پر کھڑی تھی اور رافعہ اپنی چوت رضوان کے لن سے چدوا رہی تھی۔ میں نے اپنی چوت رافعہ کے سامنے کی تو اسنے فورا ہی اپنی زبان میری چوت پر رکھ دی۔ میری چوت مکمل خشک ہو چکی تھی ، رافعہ کی زبان کو محسوس کرتے ہی مجھے چوت کے اندر گیلا پن محسوس ہوا۔ یہ پہلا موقع تھا جب کسی لڑکی نے میری چوت پر اپنا منہ رکھا ہو۔ اس سے پہلے میری چوت کو صرف عمران، حیدر اور رضوان نے ہی چاٹا تھا۔ مگر آج رافعہ میری چوت کو چاٹ رہی تھی۔ میں نے اسکا سر پکڑ کر اپنی چوت کی طرف دھکیلا ہوا تھا اور رافعہ بہت مہارت کے ساتھ میری چوت چاٹ رہی تھی

اب رافعہ نے اپنی گانڈ ہلانا بند کر دی تھی کیونکہ وہ میری چوت چاٹنے میں مصروف تھی مگر رضوان کے لن کی ضربیں رافعہ کی چوت میں مسلسل لگ رہی تھی اور رضوان بھی ہلکی ہلکی آوازیں نکال رہا تھا۔ اسکے لن کو بھی ایک نئی چوت مل گئی تھی جس پر وہ خوش تھا۔ رافعہ نے میری چوت بہت مہارت سے چاٹی، اسکے بعد اس نے اپنا منہ میری چوت سے ہٹایا اور اپنی 2 انلگیاں ایک دم سے ہی میری چوت میں داخل کر دیں۔ رافعہ کا یہ حملہ میرے لیے بالکل غیر متوقع تھا جسکی وجہ سے میری چیخ نکل گئی۔ رافعہ نے بھی بغیر انتظار کیے اپنی دونوں انگلیوں کو میری چوت میں اندر باہر کرنا شروع کر دیا۔ پھر رافعہ نے اپنی دونوں انگلیاں باہر نکالیں اور انکو اپنے منہ میں ڈال کر چوسنے لگی۔ وہ اصل میں میری چوت کا پانی چاٹ رہی تھی۔ انگلیاں چاٹتے ہوئے اسکی آنکھیں بند تھی اور چہرے پر اطمینان تھا۔ وہ اپنی چودائی کو انجوائے کر رہی تھی ۔ جبکہ میں ندیم کا انتظار کر رہی تھی کہ کب وہ کمرے میں آئے اور میری چدائی شروع کرے۔ مگر اسکے آنے کے کوئی آثار نظر نہیں آرہے تھے۔

رافعہ نے ایک بار پھر سے اپنی انگلیاں میری چوت میں داخل کر دیں اور اپنی انگلیوں سے ہی میری چدائی کرنے لگی۔ وہ اپنی انگلیوں کو میری چوت کے اندر مسلسل گھما رہی تھی اور میری چوت کی دیواروں کے ساتھ رگڑ رہی تھی جیسے کچھ تلاش کرنا چاہتی ہو۔ اچانک ہی اسکی انگلی میری چوت کے ایک اندر ایک مخصوص جگہ کو ٹچ ہوئی تو میری سسکی نکل کر رہ گئی۔ رافعہ فورا میری طرف متوجہ ہوئی اور دوبارہ اسی جگہ کو چھوا تو میری پھر سے سسکی نکلی۔ رافعہ سمجھ گئی کہ یہی میرا جی سپاٹ ہے۔ اس نے اب مسلسل میرے جی سپاٹ کو مسلنا شروع کر دیا تھا اور میری سسکیاں اب ایسے نکل رہی تھیں جیسے کوئی بڑا سا لن میری چدائی کر رہا ہو۔ میری سسکیاں بہت شدید تھیں اور میری آوازیں لازمی طور پر کمرے سے باہر جا رہی تھیں۔ میری سسکیاں سن کر رضوان کے جوش میں بھی اضافہ ہوگیا اور اسنے رافعہ کی چوت اور بھی زور سے مارنی شروع کر دی تھی۔ اوپر سے میری برداشت بھی جواب دے رہی تھی کیونکہ رافعہ کی انگلیاں مسلسل میرے جی سپاٹ کو سہلا رہی تھیں۔ رافعہ یقینا بہت ماہر تھی سیکس میں تبھی اس نے فورا ہی میری چوت میں جی سپاٹ کو ڈھونڈ لیا تھا اور اب مجھے ایسے ہی مزہ آرہا تھا جیسے مجھے کوئی لن چود رہا ہو۔ میں نے اپنے دونوں ممے اپنے ہاتھوں سے دبانے شروع کر دیے اور اپنے نپلز کو مسلنا شروع کر دیا۔ کچھ ہی دیر میں میری سسکیاں اب چیخوں میں تبدیل ہوگئیں اور میری ٹانگیں سختی سے اکڑنے لگیں اور میں نے اپنی چوت کو بھی دبانا شروع کر دیا۔ میری یہ حالت دیکھ کر رافعہ سمجھ گئی کہ میں اب فارغ ہونے والی ہوں، اسنے اپنی انگلیوں کو مزید تیزی کے ساتھ حرکت دینا شروع کر دی اور جیسے ہی میری چوت نے پانی چھوڑا اس نے اپنی انگلیاں نکال کر اپنا منہ میری چوت پر رکھ دیا اور زبان نکال کر میری چوت کو مسلنے لگی۔ میری چوت کا پانی رافعہ کے منہ میں گیا اور رضوان کے اوپر بھی گرا۔

جب میری چوت سے سارا پانی نکل گیا تو میں نے رافعہ کی طرف دیکھا اس نے پوچھا سناو مزہ آیا؟؟؟ میں نے جواب دینے کی بجائے نیچے بیٹھ کر اپنے ہونٹ رافعہ کے ہونٹوں پر رکھ دیے۔ اس نے بھی فور ہی اپنی زبان نکالی اور میرے منہ میں داخل کر دی۔ اسکی زبان پر میری چوت کے پانی کا ذائقہ تھا جو مجھے بڑا ہی اچھا لگا اور میں نے اسکی زبان کو چاٹنا شروع کر دیا۔ کچھ دیر رافعہ سے کسنگ کرنے کے بعد میں تھوڑا نیچے جھکی اور رافعہ کے ممے چاٹنے لگی۔ اسکے 36 سائز کے ممے مجھے بڑے ہی پیارے لگے۔ کبھی کسی لڑکی کے ممے میں نے نہیں چاٹے تھے یہ میرا پہلا تجربہ تھا اور مجھے بہت اچھا لگ رہا تھا۔ آگے سے میں رافعہ کے ممے چاٹنے لگی اور اپنا ایک ہاتھ رافعہ کی گانڈ پر لیجا کر اسکے چوتڑ دبائے اور پھر اپنی بڑی انگلی رافعہ کی گانڈ کے سوراخ پر رکھ دی اور ہلکا سا دباو ڈالا تو میری انگلی بہت ہی آرام سے رافعہ کی گانڈ میں چلی گئی۔ نیچے اسکی چوت میں رضوان کا لن تھا اور پیچھے گانڈ میں میری انگلی گئی اور رافعہ کے ممے میرے منہ میں تھے۔ اتنا مزہ رافعہ کی برداشت سے باہر ہونے لگا تو کمرہ اسکی سسکیوں سے گونجنے لگا اور کچھ ہی دیر بعد اس نے جھٹکے مارنے شروع کیے۔ اسکی چوت اب پانی چھوڑ چکی تھی۔

رافعہ اب رضوان کے لن سے اتری اور فورا ہی اسکا لن اپنے منہ میں لیکر چاٹنے لگی۔ رافعہ کی چوت کا پانی رضوان کے لن کو بھگو چکا تھا اور رافعہ اب رضوان کے لن سے اپنی چوت کا پانی چاٹنے میں مصروف تھی۔ رضوان نے پیچھے سے میرے چوتڑوں کو پکڑا اور کھینچ کر اپنے منہ کی طرف کر لیا اور میری گانڈ چاٹنے لگا۔ گانڈ چٹوانے میں ایک بار پھر بہت مزہ آرہا تھا مجھے۔ کچھ دیر رافعہ نے رضوان کا لن چاٹا اور پھر مجھے دعوت دی کہ میں رضوان کے لن کی سواری کروں۔ اصل میں تو مجھے ندیم کا انتظار تھا کہ کب وہ کمرے میں آئے اور کب میں اسکا لن اپنی چوت میں لوں مگر اب وہ تو آیا نہیں سو مجھے رضوان کے لن سے ہی اپنی پیاس بجھانی تھی۔ میں فورا اٹھی اور اپنی چوت رضوان کے لن پر رکھ دی۔ رضوان نے ہلکا ہلکا دباو بڑھانا سروع کیا تو میں نے کہا ایک ہی جھٹکے میں اپنا لن میری چوت میں داخل کر دو۔ یہ سن کر رضوان نے ایک زور دار جھٹکا مارا اور اسکا پورا لن میری چوت میں تھا۔ میری ایک دلخراش چیخ نکلی اور مجھے ایسا لگا جیسے کوئی لوہے کا راڈ میری چوت کی دیواروں کو رگڑتا ہوا میری چوت کی گہرائیوں تک جا چکا ہو۔

رضوان نے مجھے اپنے اوپر لٹا لیا تھا اور میرے ہونٹوں کو چوس رہا تھا اور نیچے سے اسکا لن میری چوت چودنے میں مصروف تھا۔ میں جھکی تو رافعہ نے اپنی زبان میری گانڈ پر رکھ دی اور اسکو چوسنے لگی۔ رافعہ نے جیسے ہی اپنی زبان میری چوت پر رکھ کر اسکو چوسا تو بولی کہ ارے فائزہ تمہاری گانڈ تو ابھی تک کنواری ہے۔ کبھی گانڈ نہیں مروائی کیا؟ اس سے پہلے کہ میں جواب دیتی نیچے سے رضوان بول پڑا کہ اسکی چوت بھی کنواری ہی تھی جو میں نے ایک ہفتہ پہلے ہی پھاڑی ہے۔ یہ بات کہتے ہوئے رضوان کے لہجے میں فخر تھا کہ اس نے ایک کنواری چوت کو پھاڑا تھا۔ اس پر رافعہ نے کہا ارے تم تو بہت خوش نصیب ہو۔ پھر تو تمہیں میری چوت سے وہ مزہ نہیں ملا ہوگا جو فائزہ کی چوت مزہ دے رہی ہوگی۔ رضوان نے کہا کہ تم ایکسپرٹ ہو، تم جانتی ہو کہ اپنی چوت سے مرد کو مزہ کیسے دینا ہے۔ تمہیں چودنے میں بھی بہت مزہ آیا ، مگر فائزہ کی چوت واقعی میں بہت ٹائٹ ہے اس میں میرا لن جکڑا ہوا ہے اور اسکی چوت کا علیحدہ ہی مزہ ہے جو کسی اور چوت میں نہیں مل سکتا۔

اب میں رضوان کے اوپر ڈوگی سٹائل میں تھی مگر میری گانڈ تھوڑا نیچے تھی اور میں ہاتھوں کے بل رضوان کے اوپر جھکی ہوئی تھی۔ میری چوت میں مسلسل رضوان کا لن ضربیں مار رہا تھا جس سے میرے ممے رضوان کے اوپر جھول رہے تھے اور دائیں بائیں ہل رہے تھے جنکو دیکھ کر رضوان بہت خوش ہو رہا تھا۔ اتنے میں مجھے دروازہ کھلنے کی آواز آئی۔ میں نے گردن موڑ کر پیچھے مڑ کر دیکھا تو ندیم کمرے میں آ چکا تھا۔ میں نے دل ہی دل میں شکر کیا کہ جس مقصد کے لیے رضوان کو اجازت دی تھی غیر لڑکی کو چودنے کی بالاآخر وہ مقصد پورا ہونے لگا تھا۔ اور وہ مقصد یہی تھی کہ میں بھی ندیم کا لن اپنی چوت مین داخل کر سکوں۔ ندیم میرے قریب آیا اور رضوان سے پوچھا ہاں بئی چیتے سنا کیسا لگ رہا ہے 2، 2 لڑکیوں کی چدائی کر کے۔ رضوان کی خوشی کی کوئی انتہا نہیں تھی وہ بولا بس یار آج تو ایسا لگ رہا ہے جیسے میری عید ہوگئی ہو۔ ندیم نے ایک شارٹ پہن رکھا تھا جس میں اسکا لن کھڑا نظر آرہا تھا۔ شارٹ تھوڑا ٹائٹ تھا اسلیے اس میں سے ندیم کے لن کا ابھار بہت واضح نظر آرہا تھا۔

اب ندیم نے اپنا ہاتھ میری کمر پر پھیرنا شروع کر دیا اور بولا تم سناو فائزہ کیسا لگ ر رہا ہے رافعہ کے ساتھ ملک کر رضوان سے چدائی کروانا۔ میں بھی بولی کہ اچھا لگ رہا ہے۔ وہ مسلسل اپنا ہاتھ میری کمر پر پھیر رہا تھا اور مجھے اچھا لگ رہا تھا۔ مگر حیرت کی بات یہ تھی کہ رضوان نے بھی برا نہ منایا۔ جس سے مجھے حوصلہ ہوا۔ کمر پر ہاتھ پھیرتے پھیرتے ندیم اپنی انگلی میری گانڈ پر لے گیا اور انگلی میری گانڈ میں داخل کرنے کی کوشش کی تو میں نے گانڈ زور سے دبا لی۔ اور اسکی انگلی میری گانڈ میں نہ جا سکی۔ تو وہ بھی حیران ہوا اور کہا واہ تمہاری گانڈ تو بالکل ان ٹچ ہے۔ کسی نے تمہاری گانڈ نہیں ماری کیا؟ اس پر رضوان پھر بولا یار تجھے بتایا تو تھا کہ ابھی پچھلے ہفتے ہی میں نے فائزہ کا کنوارہ پن ختم کیا ہے۔ اس پر رضوان زیرِ لب مسکرایا جیسے کہنا چاہ رہا ہو کہ یہ چوت کنواری نہیں تھی، مگر بولا کچھ نہیں وہ۔

پھر وہ بولا کہ آج تو فائزہ کی گانڈ کی بھی چدائی ہونی چاہیے۔ جس پر میں فورا بول اٹھی کہ نہیں مجھے نہیں اپنی گانڈ مروانی۔ اس پر ندیم ہنس پڑا اور بولا اچھا ڈرو نہیں آرام سے فی الحال اپنی چدائی کرواو اور عیش کرو۔ اس نے پھر سے میری کمر پر ہاتھ پھیرنا شروع کیا اور اب میرے چوتڑوں پر ہاتھ بھی مارنے لگا۔ وہ میرے چوتڑوں پر زور سے ہاتھ مارتا تو کمرے میں آواز گونجتی اور میری ہلکی سی سسکی بھی نکلتی۔ جب میں نے دیکھا کہ رضوان نے اس بات کا بھی برا نہیں منایا کہ ندیم میری گانڈ کو چھو رہا تھا اور میرے چوتڑوں کو دبا رہا تھا تو میں نے ہمت کی اور رضوان کے لن پر سیدھی ہوکر بیٹھ ہوگئی اور اپنا ہاتھ ندیم کے شارٹ پر سے اسکے لن پر رکھ دیا۔ نیچے سے چوت میں رضوان کا لن دھکے مارنے میں مصروف تھا اور اوپر سے میں اپنا ہاتھ ندیم کے لن پر پھیر رہی تھی۔

پھر میں نے اپنا ہاتھ ندیم کی شارٹ میں داخل کر دیا۔ اور پہلی بار اسکے لن کو چھوا اور سائز کا اندازہ کرنے لگی۔ پھر میں نے اسکا لن باہر نکال لیا تو ندیم نے بھی اپنی شارٹ اتار دی اور اپنا 8 انچ کا موٹا تازہ لن میرے سامنے کر دیا۔ میں نے کچھ دیر تو للچائی ہوئی نظروں سے اسکے لن کو دیکھا اور کہا کہ بہت مظبوط لن ہے تمہارا۔ جس پر ندیم بولا کہ یہ چودتا بھی بہت خوب ہے۔ میں پھر سے ندیم کے لن پر ہاتھ پھیرنے لگی تو ندیم بولا اسکو منہ میں نہیں لوگی؟ تو میں نے اسکو قریب کیا اور اسکے لن کی ٹوپی پر ایک کس کی۔ پھر اس پر اپنے ہونٹ پھیرنے لگی۔ پھر اپنی زبان نکالی اور ندیم کے لن کی ٹوپی پر پھیرنے لگی۔ اسکا لن آگ کی طرح گرمی چھوڑ رہا تھا جس نے میری چوت کی گرمی کو بھی بڑھا دیا تھا۔ اور اب میں ندیم کا لن اپنے منہ میں لیکر اسکو چوس رہی تھی۔ رضوان نے جب مجھے غیر مرد کا لن چوستے ہوئے دیکھا تو بجائے غصہ کرنے کے اس نے اور بھی شدت کے ساتھ میری چدائی شروع کر دی۔ اب میں ایک بار پھر فارغ ہونے کے قریب تھی میں نے اپنے منہ سے ندیم کا لن نکالا اور رضوان کو کہا اور زور سے چدائی کرو میری اور زور دار جھٹکے مارو، میری بات سن کر رضوان کے دھکوں میں اور اضافہ ہوا ، میرے ہاتھ میں ابھی بھی ندیم کا لن تھا مگر اسکو اب میں نے منہ میں نہیں لیا کیونکہ اب سسکیاں برداشت نہیں ہو رہی تھیں اور کمرہ میری آوازوں سے گونج رہا تھا۔ رضوان کے دھکے حیرت انگیز طور پر پہلے سے بہت زیادہ ہو چکے تھے اور اسکا جسم بھی اب لذت کی انتہا پر تھا۔ پھر اچانک ہی ہم دونوں کے جسم کو جھٹکے لگے اور ہم دونوں نے ایک ساتھ پانی چھوڑ دیا۔

جب ہمارے جھٹکے ختم ہوئے اور سارا پانی چھوڑ چکے تو میں رضوان کے لن سے اتر گئی، ندیم نے فورا ہی مجھے بیڈ پر لٹا دیا اور بولا اپنی چوت کا پانی تو ٹیسٹ کرواو کیسا ہے۔ اور یہ کہ کر وہ میری چوت کو چاٹنے لگا میری ٹانگوں پر میری چوت کا پانی تھا اسنے میری ٹانگوں سے چوت کا پانی چاٹا اور مزے لیکر زبان اپنے ہونٹوں پر پھیرنے لگا۔ دوسری طرف رضوان کا لن رافعہ کے منہ میں تھا اور وہ بھی رضوان کی منی اور میری چوت کے پانی کا مکسچر رضوان کے لن سے چوس رہی تھی۔ ندیم نے جب میری چوت سے سارا پانی چوس لیا تو دوبارہ اپنا لن میرے آگے کر دیا اور میں بیٹھ کر اسکا لن چوسنے لگی۔ میں بیڈ پر ڈوگی سٹائل میں بیٹھی تھی جبکہ ندیم بیڈ سے نیچے کھڑا تھا اور میں ندیم کا لن چاٹنے میں مصروف تھی۔ دوسری طرف رافعہ بیڈ پر لیٹی تھی اور رضوان اسکی ٹانگیں اٹھا کر اپنا سر اسکی چوت پر رکھے اسے چاٹ رہا تھا۔ رافعہ نے اپنے ہاتھ رضوان کے سر پر رکھے ہوئے تھے اور رضوان مسلسل رافعہ کی چوت کو چاٹ رہا تھا۔ اتنے میں رافعہ بولی کہ تم نے آج تک کسی گانڈ کا مزہ نہیں لیا لہذا اب تم میری گانڈ میں لن ڈال کر گانڈ کا مزہ لو۔ تو رضوان بولا آج تو تمہاری گانڈ بھی ماروں گا اور فائزہ کی بھی۔ اس پر ندیم بولا کہ تم پہلے رافعہ کی گانڈ مار لو، فائزہ کی گانڈ میں لن پہلے میں ڈالوں گا، تمہیں تجربہ نہیں تم ڈالو گے تو فائزہ کو درد زیادہ ہوگا۔ میں طریقے سے اسکی گانڈ پھاڑوں گا جس سے اسکو کم سے کم تکلیف ہو۔ پھر بعد مِں تم جب چاہو فائزہ کی گانڈ مار لینا۔

اس پر رضوان نے تو ہاں میں سر ہلا دیا مگر میں چلائی کہ آخر تم لوگ میری گانڈ کے پیچھے کیوں پڑ گئے ہو؟ مجھے نہیں گانڈ مروانی تم بس میری چوت میں لن ڈالو اور بس۔ اس پرندیم ہنسا اور بولا جانِ من ایک بار گانڈ مروا کر تو دیکھو بہت مزہ آئے گا تمہیں۔ اور ویسے بھی جب تمہاری چوت کھلی ہوجائے گی تو رضوان کو اسکا مزہ نہیں آئے گا، پھر وہ بھی تمہاری گانڈ سے ہی مزہ لیا کرے گا۔ تو جب کل بھی گانڈ مروانی ہی ہے تو کیوں نہ آج ہی مروا لی جائے۔ میں نے ایک بار پھر انکار کیا اور کہا نہیں بس میری چوت میں لن ڈالو۔ اس پر ندیم نے اپنا لن میرے منہ سے نکالا اور مجھے منہ دوسری طرف کرنے کو کہا۔ میں نے ایسے ہی بیڈ پر منہ دوسری طرف کیا میں ابھی بھی ڈوگی سٹائل میں بیٹھی تھی اور ندیم بیڈ سے نیچے تھا۔ رضوان نے اب اپنی انگلیاں میری چوت میں داخل کیں اور گیلے پن کو چیک کرنے لگا۔ میری چوت پہلے سے ہی گیلی تھی اورندیم کے لن کا انتظار کر رہی تھی۔ میرے گیلے پن کو محسوس کرکے ندیم سمجھ گیا کہ میری چوت چدائی کے لیے مکمل تیار ہے۔

اس نے اپنا لن میری چوت کے سوراخ پر سیٹ کیا اور ایک ہی دھکے میں اپنا 8 انچ کا لن میری ٹائٹ چوت میں داخل کر دیا۔ میری دلخراش چیخ نکلی جس سے پورا کمرہ گونج اٹھا اور میں نے ندیم کو کہا کہ آرام سے کرو۔ تو وہ بولا آرام سے کرنے کا مزہ نہیں آتا۔ اور ساتھ ہی اسنے میری چوت کی تعریف کی کہ یہ واقعی بہت ٹائٹ ہے عرصہ ہوگیا ایسی ٹائٹ چوت کی چدائی کیے ہوئے۔ آج تو بہت مزہ آئے گا، یہ کہ کر اس نے میری چوت میں اپنا لن تیزی سے اندر باہر کرنا شروع کر دیا۔ پہلے پہل تو مجھے شدید درد ہوئی کیونکہ ندیم کا لن نہ صرف رضوان کے لن سے لمبا تھا بلکہ وہ موٹائی میں بھی موٹا تھا اور اسکے دھکوں کی سپیڈ بھی شروع سے ہی تیز تھی جبکہ رضوان شروع میں آرام سے چودتا تھا بعد میں سپیڈ پکڑتا تھا۔ ندیم نے سٹارٹ میں ہی تیزی سےچودنا شروع کیا، مگر تھوڑی ہی دیر بعد اب میرا درد مزے میں بدل چکا تھا ۔ میں ڈوگی سٹائل میں بہت مزے سے اپنی چوت چدوا رہی تھی تو دوسری طرف رافعہ بھی ڈوگی سٹائل میں بیٹھ چکی تھی مگر رضوان نے اپنا لن اسکی چوت پر رکھنے کی بجائے اسکی گانڈ پر رکھا اور زور دار دھکا مارا مگر لن گاند میں نہیں گیا۔ پھر اس نے دوبارہ سے گانڈ کے سوراخ پر رکھا اور آہستہ آہستہ دباو ڈالنا شروع کیا تو رضوان کے لن کی ٹوپی رافعہ کی گانڈ میں جا چکی تھی مگر رافعہ کے چہرے پر تکلیف کے آثار تک نہ تھے۔ تھوڑی ہی دیر میں رضوان کا پورا لن رافعہ کی گانڈ میں تھا۔ اور رضوان آہستہ آہستہ گانڈ میں لن داخل کرتا اور نکالتا۔

رضوان کے چہرے کے تاثرات اور اسکی آوازوں سے واضح پتہ لگ رہا تھا کہ رضوان کو گانڈ چودنے میں بے حد مزہ آرہا ہے۔ رافعہ کی گانڈ چاہے کتنی ہی کھلی کیوں نہ ہو مگر بحر حال وہ میری چوت سے تو تنگ ہی تھی۔ جسکو رضوان بہت مزے سے چود رہا تھا۔ اور جب رضوان نے اپنے دھکوں کی سپیڈ بڑھائی تو اب رافعہ کی بھی سسکیاں نکل رہی تھیں اور وہ اپنی گانڈ کی چدائی کو انجوائے کرنے لگی۔ ادھر میری چوت بھی ندیم کے دھکوں سے بے حال ہوئے جا رہی تھی۔ اب ندیم نے آگے بڑھر کر میرے مموں کو بھی دبانا شروع کر دیا۔ڈوگی سٹائل میں چدائی کرواتے ہوئے میرے ممے ہوا میں لٹک رہے تھے جنکو اب ندیم اپنے ہاتھوں سے دبا رہا تھا۔ پھر اچانک ندیم نے مجھے سینے سے پکڑ کر پیچھے کی طرف کھڑا کر لیا، میں اب بیڈ پر گھٹوں کے بل ڈوگی سٹائل میں بیٹھی تھی مگر میری کمر ندیم نے کھینچ کر اپنے قریب کر لی، اورمیرے مموں کو مسلنے لگا۔ میں نے بھی ایک ہاتھ ندیم کی گردن میں ڈال لیا اور منہ انچا کر کے اپنے ہونٹ ندیم کے ہونٹوں پر رکھ دیے۔ رضوان کا لن میری چودائی کر رہا تھا اسکے ہونٹ میرے ہونٹوں کو چوس رہے تھے ایک ہاتھ سے وہ میرے ممے دبا رہاتھا اور دوسرا ہاتھ وہ آگے سے میری پھدی مسل رہا تھا اور لائن پر مسلسل ہاتھ پھیر رہا تھا جس سے میری برداشت ختم ہوتی جا رہی تھی۔

ندیم نے اب دھکے بہت ہی زیادہ سپیڈ سے مارنے شروع کیے اور چند ہی دھکو ں کے بعد میری چوت جواب دے گئی اور اس نے پانی چھوڑ دیا۔ اتنے دھکے سہنے کے بعد میں اب بری طرح سے تھک چکی تھی۔ اور گہرے گہرے سانس لینے لگی۔ دوسری طرف رافعہ نے اب اپنی پوزیشن چینج کر لی تھی۔ وہ اب بیڈ پر لیٹی تھی اور اسنے اپنی دونوں ٹانگیں ہوا میں اوپر اٹھا رکھی تھیں۔ رضوان اسکے اوپر آیا اور اسکی ٹانگوں کو فولڈ کر کے اسکے سینے سے لگا دیا۔ اب رضوان کے لن کی ذد میں رافعہ کی پھدی اور گانڈ دونوں ہی تھے، رضوان نے رافعہ کی گانڈ کا انتخاب کیا اور ایک بار پھر اپنا لن رافعہ کی گانڈ میں داخل کر دیا، اس پوزشن میں شاید رافعہ کو کچھ تکلیف ہوئی اور اس نے ہلکی ہلکی چیخیں مارنی شروع کر دیں تھی۔ رضوان بہت ہی مزے سے گانڈ مارنے میں مصروف تھا۔

اب ندیم نے مجھے ایک بار پھر سے بیڈ پر الٹا لٹا دیا اور میرے چوتڑ کھول کر اپنی زبان میری گانڈ پر چلانے لگا۔ میں سمجھ گئی تھی کہ اب وہ میری گانڈ مارنا چاہتا ہے۔ مگر میجھ میں ہمت نہیں ہورہی تھی اتنا بڑا لن اپنی گانڈ میں لینے کی۔ مگر میں فی الحال مزاحمت بھی نہیں کر رہی تھی کیونکہ گانڈ چسوانے میں آج مجھے بہت مزہ آرہا تھا، پہلے حیدر نے میری گانڈ چوسی، پھر رضوان نے پھر رافعہ نے اور اب ندیم میری گانڈ چوس رہا تھا، پھر اس نے میرے چوتڑوں کو اوپر اٹھایا اور اپنی زبان میری چوت پر پھرینے لگا اور اپنی ایک انگلی میری گانڈ کے سوراخ پر رکھ دی۔ میری گانڈ ندیم کے تھوک سے اب کافی چکنی ہو چکی تھی، اسکی آدھی سے کم انگلی اب میری گانڈ میں تھی اور مجھے ایسے لگ رہا تھا جیسے میری گانڈ میں مرچیں لگ گئیں ہوں۔ میں نے ندیم کو سختی سے کہا کہ میری گانڈ سے انگلی نکال لے۔ مگر اس نے نہ نکالی اور آہستہ آہستہ انگلی میری گانڈ میں گھمانے لگا اور نیچے سے میری چوت بھی چاٹتا رہا۔ مجھے اب سمجھ نہیں آرہی تھی کہ گانڈ میں ندیم کی انگلی کی درد زیادہ ہے یا پھر چوت چاٹنے سے جو مزہ مل رہا ہے وہ زیادہ ہے۔

ندیم کی اب آدھی سے زیادہ انگلی میری گانڈ کو چیرتی ہوئی گانڈ میں جا چکی تھی اور میری برداشت ختم ہوتی جا رہی تھی۔ میں نے ندیم کو پھر کہا کہ میری گانڈ کا پیچھا چھوڑ دے اور جتنی بار چوت چودنا چاہے چود لے۔ پھر اچانک ندیم نے اپنی انگلی میری گانڈ سے نکال دی اور رافعہ کو کہا فائزہ کی گانڈ مارنے میں مدد کرے۔ یہ بات سن کر رافعہ نے رضوان کو پیچھے کیا اور اپنی گانڈ سے رضوان کا لن نکال لیا۔ ایک الماری کھول کر وہ ایک کریم لے آئی اور ندیم کو پکڑا دی۔ اور خود بیٹھ کر ندیم کا لن اپنے منہ میں لیکر چوسنے لگی۔ دوسری طرف رضوان میرے قریب آیا اور اپنا لن میرے منہ میں داخل کرنے لگا، میں نے رضوان کا لن اپنے منہ میں لے لیا اور اسکو چوسنے لگی۔ ندیم نے اپنی انگلی پر کریم لگائی اور میری گانڈ کے سوراخ پر مسلنے لگا جس سے میری گانڈ کی چکناہٹ میں اضافہ ہونے لگا۔

اب رافعہ ندیم کا لن چوس رہی تھی، رضوان کا لن میرے منہ میں تھا اور ندیم کی انگلی میری گانڈ کے اندر کریم لگا کر گانڈ کو اندر سے بھی چکنا کرنے میں مصروف تھیں۔ جب رضوان نے اچھی طرح میری گانڈ پر کریم لگا دی تو رافعہ اٹھی اور ایک اور کریم لے کر آئی وہ کریم رافعہ نے خود کھولی اور ندیم کے لن پر مسلنے لگی، ندیم نے اپنی پوری انگلی میری گانڈ میں داخل کی ہوئی تھی مجھے اس سے تکلیف تو ہو رہی تھی مگر اتنی نہیں جتنی پہلے تھی۔ شاید اسکی وجہ یہ کریم تھی جس نے میری گانڈ کو چکنا کر دیا تھا۔

جب رافعہ نے ندیم کے لن پر وہ کریم اچھی طرح مسل دی تو ندیم نے میری گانڈ سے انگلی نکال کر میری دونوں ٹانگوں کو ہوا میں اٹھا لیا، میں اندر ہی اندر ڈر رہی تھی کیونکہ آنے والا وقت بہت ہی تکلیف دہ تھا۔ میں نے ایک بار پھر کہا کہ پلیز میری گانڈ کو بخش دو چوت جتنی مرضی مار لو۔ مگر ندیم نے میری بات کو سنی ان سنی کر دیا۔ اب ندیم میری ٹانگیں اٹھائے میری گانڈ پھاڑنے کے لیے تیار کھڑا تھا تو رافعہ نے رضوان کو کہا کہ اگر تمہیں اپنا لن پیارا ہے تو فائزہ کے منہ سے نکال لو ورنہ یہ کاٹ ڈالے گی تمہارے لن کو۔ رضوان نے اپنا لن میرے منہ سے نکال دیا تو رافعہ نے مجھے کہا اپنی منہ میں کوئی کپڑا ٹھونس لو درد کی شدت کم ہوجائے گی، تو میں نے پاس پڑا ندیم کا شارٹ اٹھایا اور اسکو اپنے منہ میں ڈال لیا۔

اب میں ذہنی تور پر گانڈ مروانے کے لیے تیار تھی مگر میرا دل دھک دھک کر رہا تھا۔ رافعہ میرے ساتھ لیٹ گئی اور میرے نپلز اپنے منہ میں لیکر چوسنے لگی، رافعہ الٹی لیٹی تھی اور میری ممے چوس رہی تھی، اس نے رضوان کو اپنے پیچھے آنے کو کہا اور کہا چوتڑ کھول کر گانڈ میں ڈال دو لن۔ رضوان فورا رافعہ کے اوپر آیا اور اسکے چوتڑ کھول کر اپنا لن اسکی گانڈ میں داخل کر دیا اور چودنے لگا۔ اب ندیم نے اپنے لن کی ٹوپی میری گانڈ کے سوراخ پر رکھی اور مجھے کہا کہ تیار ہوجاو، اور ساتھ ہی ایک زور دار جھٹکا مارا۔ کپڑا منہ میں ہونے کے باوجود میری ایک زور دار چیخ نکلی اور میں نے اپنے آپ کو ندیم سے چحڑوانا چاہا مگر ناکام رہی۔ ندیم کے لن کی ٹوپی میری گانڈ میں تھی اور میرا درد کے مارے برا حال تھا۔ میری آنکھوں سے ایک ہی دھکے میں آنسو نکل آئے تھے۔ درد اتنی شدید تھی کے میری ٹانگیں اور پورا جسم بری طرح کانپ رہا تھا جب کہ رافعہ میرے اوپر میرے نپل چوسنے میں مصروف تھی۔ گانڈ کی درد اتنی شدید تھی کہ نپل چوسنے کا مزہ بھی اب محسوس نہیں ہورہا تھا۔ ندیم نے میری دونوں ٹانگیں مضبوطی سے پکڑ رکھی تھیں تاکہ میں چھڑوا نہ سکوں۔

کچھ دیر بعد ندیم نے ایک اور زور دار دھکا مارا اور اب کی بار میری چیخ پہلے سبھی زیادہ تھی۔ اور میں نے مسلسل چیخنا شروع کر دیا تھا اور اپنے جسم کا پورا زور لگانا شروع کریا کہ مجھے چھوڑ دو مجھے نہیں گانڈ مروانی۔ مگر ندیم نے مجھ پر ذرا بھی رحم نہ کھایا اور میرے جسم کو مضبوطی سے پکڑے رکھا۔ میں نے رضوان کی بھی منتیں کیں کہ پلیز مجھے اس مصیبت سے نجات دلواو مگر وہ تو اس وقت رافعہ کی گانڈ مارنے میں مصروف تھا اور وہ چاہتا تھا کہ ایک بار میری بھی گانڈ کی چودائی کرے ندیم تاکہ بعد میں رضوان بھی میری گانڈ مار سکے۔ لہذا وہ بھی میری مدد کو نہ آیا اور مجھے تسلی دینے لگا کہ حوصلہ رکھو ابھی تمہیں مزہ آنے لگے گا جیسے رافعہ مزے سے گانڈ چدوا رہی ہے۔ آخر کار ندیم نے ایک اور آخری دھکا مارا اور اسکا لن کافی حد تک میری گانڈ میں غائب ہوچکا تھا اور مجھے ایسے لگ رہا تھا کہ جیسے میں ابھی بے ہوش ہوجاوں گی۔ ایک تو ندیم کا لن بہت موٹا تھا اوپر سے وہ میری گانڈ میں تھا۔ میری چیخیں تھیں کہ رکنے کا نام نہیں لے رہی تھیں۔ اور میری ٹانگیں اب کانپ رہی تھیں۔ اور ٹانگوں میں جسیسے جان بالکل ختم ہوچکی تھی۔ آنکھوں سے مسلسل آنسو جاری تھے۔ ندیم کچھ دیر ایسی ہی میری گانڈ میں لن ڈالے کھڑا رہا۔ جب میری درد کی شدت کچھ کم ہوئی تو ندیم نے لن باہر نکالنا شروع کیا تو میری درد ایک بار پھر تیز ہوگئی اور میں نے پھر سے اسکی منتیں کیں کہ پلیز میری گانڈ مت مارو۔ مگر ندیم نے اپنا پورا لن میری گانڈ سے نکالا صرف ٹوپی اندر رہنے دی اور ایک بار پھر ایک زور دار دھکا مارا تو اسکا لن میری گانڈ کو چیرتا ہوا اندر تک چلا گیا۔ اور ایک بار پھر میری چیخوں سے کمرہ گونجنے لگا۔

ندیم نے پھر کچھ دیر انتظار کیا اور پھر سے لن باہر نکال کر دھکا مارا ۔ اب کی بار وہ انتظار نہیں کر رہا تھا وہ بہت آہستہ آہستہ اپنا لن باہر نکالتا اور اک دم سے دھکا مار کر میری گانڈ پھاڑ کر رکھ دیتا۔ ہر دھکے پر مجھے ایسا لگتا کہ جیسے میری گانڈ کو کسی لوہے کے راڈ نے چھیل کر رکھ دیا ہو۔ 10 منٹ تک یہ سلسلہ جاری رہا۔ ندیم آہستہ آہستہ لن باہر نکالتا اور پھر ایک زور دار دھکا مار کر لن اندر ڈال دیتا۔ اور میں مسلسل 10 منٹ سے تکلیف میں تھی ۔ اب تو میری چیخیں بھی نکلنا بند ہوگئی تھیں کیونکہ گلا خشک ہو کا تھا۔ رضوان ان 10 منٹ کے دوران اپنی منی رافعہ کی گانڈ میں نکال چکا تھا۔ اور اب رافعہ میرے نپل چھوڑ کر اسکا لن چوسنے میں مصروف تھی۔ میرا درد اور پیاس سے برا حال تھا۔ میں نے پانی مانگا تو رافعہ نے مجھے پانی پلایا تو مجھے کچھ حوصلہ ہوا۔ اب ندیم نے ایک بار اپنا لن میری گانڈ سے نکالا تو مجھے لگا کہ اس تکلیف سے نجات مل گئی۔ مگر ندیم نے میری گانڈ میں ایک بار پھر کریم لگائی اور بولا کہ تمہاری گانڈ کچھ زیادہ ہی ٹائٹ ہے، رافعہ کی گانڈ بھی پہلی بار میں نے ہی پھاڑی تھی مگر وہ اتنی ٹائٹ نہیں تھی اور 5 منٹ بعد ہی رافعہ مزے میں تھی۔ مزید کریم لگا کر ندیم نے ایک بار پھر لن میری گانڈ پر سوراخ پر رکھا اور ایک ہی دھکے میں پورا لن میری گانڈ میں داخل کر دیا۔ اور مجھے ایک بار پھر لگا کہ میری گانڈ میں پہلی بار لن گیا ہے۔ لیکن اب کی بار ندیم نے رکنے کی بجائے مسلسل میری گانڈ کی چدائی جاری رکھی۔ میری آنکھوں میں ابھی بھی آنسو تھے۔ مگر اب تکلیف کا احساس آہستہ آہستہ کم ہونے لگا تھا۔ مگرمزے کا دور دور تک کوئی نام و نشان نہیں تھا۔ مزید 5 منٹ کی چدائی کے بعد اب ندیم کا لن روانی کے ساتھ میری گانڈ میں داخل ہو رہا تھا اور اب اسکو میری گانڈ کی چدائی کا مزہ آرہا تھا۔

اب رافعہ اٹھی اور اپنی چوت میرے منہ پر رکھ کر بیٹھ گئی تو میں نے اسکی چوت چاٹنا شروع کی۔ میرا دھیان رافعہ کی چوت کی طرف ہوا تو مجھے اپنی گانڈ کی درد اور تکلیف ختم ہوتی محسوس ہوئی۔ تھوڑی دیر بعد ہی میرے منہ میں رافعہ کی چوت کا پانی تھا اور ندیم ابھی تک میری گانڈ کی چدائی میں لگا ہوا تھا۔ وہ ساتھ ساتھ میری چوت پر اپنا ہاتھ بھی پھیر رہا تھا جس سے مجھے مزہ آنے لگا تھا۔ اور کچھ دیر بعد میرے منہ سے سسکیاں نکلنا شروع ہوگئی تھیں۔ ابھی بھی یہ مزہ ویسا تو نہیں تھا جیسا کہ چوت کی چودائی میں آتا ہے مگر پھر بھی کچھ نہ کچھ مزہ آنے لگا تھا۔ رافعہ نے ایک بار پھر رضوان کا لن چوس چوس کر کھڑا کر دیا تھا۔ ندیم کو میری گانڈ کی چودائی کرتے ہوئے 25 منٹ ہو چکے تھے۔ اور بالا آخر میری گانڈ میں اپنی منی چھوڑ دی۔ منی چھوڑنے کے بعد وہ میرے اوپر گرگیا اورمجھے چومنے لگا اور کہا آج بہت عرصے بعد اتنی ٹائٹ گانڈ ملی ہے مزہ آگیا تمہاری گانڈ مار کر۔اب رضوان میری طرف متوجہ ہوا اور بولا اب میری باری ہے فائزہ کی گانڈ مارنے کی۔

میں نے رضوان کو کہا پلیز اب نہیں۔ پھر کبھی سہی۔ رضوان نے کہا نہیں پلیز مجھے اپنی گانڈ مارنے دو۔ میں نے پھر اسے کہا کہ آج مزید ہمت نہیں مجھ میں ۔ میری گانڈ بھی تمہاری ہے میری چوت بھی تمہاری ہے۔ پھر کسی دن مار لینا لیکن آج نہیں پلیز۔ جس پر رضوان نے مجھ پر ترس کھایا اور ایک بار پھر اپنا لن رافعہ کی چوت میں داخل کر دیا۔ رافعہ رضوان کے اوپر لیٹی اپنی چوت کی چدائی کروا رہی تھی۔ اور اپنی گانڈ ہلا ہلا کر لن کے مزے لے رہی تھی۔ اتنے میں ندیم کا لن دوبارہ کھڑا ہوا تو اس نے اپنے لن کا رخ رافعہ کی گانڈ کی طرف کیا۔ وہ رضوان کے پیچھے جا کر کھڑا ہوا اور رافعہ کو گانڈ تھوڑی اونچی کرنے کو کہا۔ رافعہ کی چوت میں رضوان کا لن تھا۔ اس نے گانڈ تھوڑی اونچی کی تو پیچھے سے ندیم نے اپنا 8 انچ کا لن رافعہ کی گانڈ میں داخل کر دیا۔ رافعہ کے چہرے پر اب تکلیف کے آثار تھے اور وہ ہلکی ہلکی چیخیں مار رہی تھی۔ اب رضوان اور ندیم دونوں ملکر رافعہ کی چودائی کر رہے تھے۔ میں نے ایک ہی ٹائم میں چوت اور گانڈ میں لن لیتے ہوئے فلموں میں دیکھا تھا۔ اور آج اصل زندگی میں رافعہ اپنی گانڈ اور چوت ایک ہی وقت میں چدوا رہی تھی۔ کچھ ہی دیر بعد اسکی تکلیف مزے میں چینج ہوگئی۔ وہ حیرت انگیز طور پر رضوان اور ندیم کے طوفانی دھکے اپنی گانڈ اور چوت میں برداشت کر رہی تھی اور اسکی سسکیاں ماحول کو اور سیکسی بنا رہی تھیں۔

کچھ دیر بعد ان دونوں نے پوزیشن چیج کی۔ اب ندیم کا لن رافعہ کی چوت میں تھا اور رضوان کا لن رافعہ کی گانڈ میں ۔ 10 منٹ کی چودائی کے بعد دونوں نے اپنی منی رافعہ کی گانڈ اور چوت میں چھوڑ دی۔ اس دوران رافعہ بھی 3 بار اپنی چوت کا پانی چھوڑ چکی تھی۔ اس زبردست چدائی کے بعد بھی رافعہ بہت مزے میں تھی جب کہ میرا انگ انگ دکھ رہا تھا کیونکہ آج پہلی بار میری گانڈ ماری تھی کسی نے اور وہ بھی 8 انچ کے لمبے اور موٹے لن کے ساتھ۔

کچھ دیر آرام کرنے کے بعد ہم نے وہیں پر کھانا کھایا اور پھر رضوان نے مجھے گھر پر چھوڑ دیا۔ گھر جا کر میں مطمئن تھی۔ گانڈ کی درد تو ابھی بھی محسوس ہو رہی تھی مگر اب یہ اطمینان تھا کہ رضوان نے اپنی آنکھوں کے سامنے مجھے کسی اور لڑکے سے چدواتے ہوئے دیکھا تھا تو آئندہ بھی مجھے اسکے کسی دوست کا لن لینے میں مشکل نہیں ہوگی۔

مگر اسکے ساتھ ساتھ میرے ذہن میں سائرہ اور حیدر گھوم رہے تھے۔ ان دونوں نے میرے ساتھ اچھا نہیں کیا تھا۔ سائرہ نے میری ویڈیو بنا کر حیدر کو دی تاکہ اسکی اپنی عزت بچ سکے اور حیدر نے مجھے بلیک میل کرنے کی کوشش کی۔ یہ اور بات کے اسکا لن اس قابل نہیں تھا کہ میری چوت کو سکون بخش سکے 2 جھٹکوں سے زیادہ وہ برداشت نہیں کر سکتا تھا اور منی چھوڑ دیتا تھا۔ اب میں اپنے ذہن میں دونوں سے بدلہ لینے کا سوچ رہی تھی۔ وہ امیر فیملی اور اثرو رسوخ والی فیملی تھی ان سے بدلی لینا آسان نہیں تھا۔ میں مسلسل 3 گھنٹوں سے اسی بارے میں سوچ رہی تھی کہ آخر ان دونوں بہن بھائیوں سے کیسے بدلہ لیا جائے۔ آخر کار حیدر سے بدلہ لینے کی ترکیب میرے ذہن میں آگئی جو بہت آسان تھی مگر سائرہ سے بدلہ لینے کی ابھی تک کچھ نہیں سوجھی تھی۔

آخر کار میں نے سوچا کہ پہلے حیدر سے تو بدلہ لیا جائے بعد میں سائرہ کے بارے میں بھی سوچ لیں گی۔ اب میں سکون سے لیٹ گئی اور دوبارہ سے ندیم کے تگڑے لن سے چدائی کے مزے کو یاد کرنے لگی اور یہی یاد کرتے کرتے میری آنکھ لگ گئی۔

جاری ہے۔
Reply With Quote
Sponsored Links
CLICK HERE TO DOWNLOAD INDIAN MASALA VIDEOS n MASALA CLIPS
Sponsored Links - Indian Masala Movies
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator

"Uncensored Indian Masala Movies" - The hottest Indian Sex Movies and Mallu Masala clips

Check out beautiful Indian actress in sexy and even TOPLESS poses

Indian XXX Movies!

Widest range of Indian Adult Movies of shy, authentic Desi women.....FULLY NUDE DESI MASALA VIDEOS!!! Click here to visit now!!!
  #364  
Old 11-19-2015, 08:50 PM
rocki rocki is offline
Senior Member
 
Join Date: Jan 2012
Posts: 221,463
Default سالی: پورے گھر والی

Hmmmmmmm imran ny tu apki pussy ko lick hi ni kiya tha tu upr kesy likh diya k imran haider rizwan ny chati thi...
Reply With Quote
Sponsored Links
CLICK HERE TO DOWNLOAD INDIAN MASALA VIDEOS n MASALA CLIPS
Sponsored Links - Indian Masala Movies
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator

"Uncensored Indian Masala Movies" - The hottest Indian Sex Movies and Mallu Masala clips

Check out beautiful Indian actress in sexy and even TOPLESS poses

Indian XXX Movies!

Widest range of Indian Adult Movies of shy, authentic Desi women.....FULLY NUDE DESI MASALA VIDEOS!!! Click here to visit now!!!

 

UKBL ~ 10 Second Banner Rotator
Sponsored Links
  #365  
Old 11-19-2015, 08:50 PM
aamjayadakha aamjayadakha is offline
Senior Member
 
Join Date: Feb 2009
Posts: 281,504
Default سالی: پورے گھر والی

کچھ ہی دیر میں رکشہ علی کے گھر کے سامنے رکا۔ میں نے رکشے والے کو پیسے دیے اور گیٹ سے علی کے گھر میں داخل ہوگئی۔ مین گیٹ کھلا تھا لہذا میں بے دھڑک اندر چلی گئی۔ اندر جا کر اب میرا رخ اسی دروازے کی طرف تھا جس دروازے پر پہلے رضوان نے میرے ممے دبائے تھے۔ میں جب اس دروازے پر پہنچی تو وہاں علی اپنی گرل فرینڈ کے ساتھ موجود تھا۔ دونوں آس پاس سے بے خبر ایک دوسرے کے ہونٹ چوسنے میں مصروف تھے۔ میں انکے پاس پہنچی مگر انہیں پتہ نہیں چلا۔ میں نے ہلکا سا اونہہ اونہہ کیا، یعنی کے ہلکا سا کھانسی تو علی کو ہوش آیا۔ اس نے اپنی گرل فرینڈ کے ہونٹوں سے اپنے ہونٹ ہٹائے اور میری طرف دیکھا۔ میں نے ہائے بولا تو علی فورا آگے بڑھااور مجھ سے ہاتھ ملایا اور میرا حال وغیرہ پوچھا۔ میں نے کہا میں ٹھیک ہوں آپ سنائے کیا چل رہا ہے۔ تو علی مسکرایا اور کہا جو چل رہا تھا تم نے دیکھ ہی لیا ہے۔ یہ کہ کر اس نے قہقہ لگایا اور میرے مموں پر نظر گاڑتے ہوئے بولا جاو نیچے رضوان نیچے ہی ہے۔ میں فورا نیچے چلی گئی، نیچے پہنچ کر جیسے ہی مین ہال میں داخل ہوئی تو وہاں جو میں نے دیکھا وہ دیکھ کر میرے ہوش اڑ گئے۔ میرے سامنے ندیم بالکل ننگا کھڑا تھا۔ یہ وہی لڑکا تھا جسکے ساتھ میں نے ڈانس کیا تھا اور ڈانس کرتے ہوئے وہ بار بار اپنا لن میری گانڈ سے ٹچ کر رہا تھا اور ایک بار میں نے اسکی گود میں بیٹھ کر اسکو کسنگ بھی کی تھی اور موقع ملنے پر اسکے لن پر اپنا ہاتھ بھی رکھا تھا۔

جو لن میں نے کپڑوں میں چھپا ہوا محسوس کیا تھا آج اس لن کو دیکھ بھی لیا۔ ندیم کا لن مکمل کھڑا تھا اور اسکے سامنے ایک لڑکی بیٹھی تھی وہ بھی ننگی تھی ایک ہاتھ سے وہ اپنا ایک مما دبا رہی تھی اور دوسرے ہاتھ سے اس نے ندیم کا لن پکڑا ہوا تھا اور منہ میں ڈال کر ندیم کا 8 انچ لمبا اور موٹا لن چوس رہی تھی۔ میرے قدموں کی آواز سن کر ندیم میری طرف متوجہ ہوا تو لڑکی نے اسکا لن اپنے منہ سے نکال دیا۔ جیسے ہی اس لڑکی نے ندیم کا لن چھوڑا وہ ایک دم سے تن کر کھڑا ہوگیا اور اسکا رخ چھت کی طرف تھا۔ میں اتنا بڑا لن دیکھ کرپھٹی پھٹی آنکھوں سے اسکو دیکھنے لگی تو اچانک مجھے ندیم کی آواز آئی "ہیلو فائزہ کیسی ہو تم؟" اسکی آواز سن کر میں نے اسکی طرف دیکھا اور رضوان کے بارے میں پوچھا اور دوبارہ اسکا لن دیکھنے لگی تو ندیم نے کہا رضوان اندر کمرے میں ہے تم چلی جاو کمرے میں۔ جس کمرے کا ذکر کیا ندیم نے وہ اسکے ساتھ ہی تھا جہاں ہو کھڑا تھا۔ میں ندیم کی طرف بڑھنے لگی اور میری نظریں مسلسل ندیم کے لن پر تھیں جس کو اب اس لڑکی نے دوبارہ سے منہ میں لے لیا تھا اور اسکو چوس رہی تھی۔ ندیم کے پاس پہنچ کر میں بائیں جانب بڑھی اور کمرے کا دروازہ کھول کر اندر داخل ہوگئی۔ میری پھدی مکلمل گیلی ہو چکی تھی اور اب میں جلد سے جلد رضوان کے لن سے اپنی پھدی کی پیاس بجھانا چاہتی تھی۔ جیسے ہی میں نے کمرے میں داخل ہو کر دروازہ بند کیا اندر کا نظارہ دیکھ کر تو میری ساری شہوت ختم ہوگئی اور اسکی جگہ غصے نے لے لی۔ میرے سامنے رضوان ایک لڑکی کے ممے چوسنے میں مصروف تھا۔ لڑکی کی گانڈ میری طرف تھی اور وہ مکمل ننگی تھی۔ موٹی گانڈ پر رضوان کے ہاتھ تھے اور وہ اسکی گانڈ کو اپنے ہاتھ سے دبا رہا تھا۔ جبکہ اسکے ممے رضوان کے منہ میں تھے۔

یہ دیکھ کر میں نے زور سے چیختے ہوئے رضوان کا نام لیا، رضوان کو جیسے ایک جھٹکا سا لگا اور اسنے ایک دم اسکے مموں کو چھوڑ کر میری طرف دیکھا۔ میں چلائی کہ یہ کیا کر رہے ہو تم؟ تو رضوان اسکو چھوڑ کر میری طرف بڑھا اور کہا کچھ نہیں یار تمہارا انتظار کرتے کرتے کافی دیر ہوگئی تو ۔۔۔۔ ابھی وہ اتنا ہی بولا تھا کہ میں دوبارہ چلائی "تو تم نے دوسری لڑکی کو پکڑ لیا؟" وہ بولا "نہیں یار، یہ میرے کمرے میں آئی تو میں تو بس کسنگ کر رہا تھا جیسے اس دن پارٹی میں بھی کی تھی مگر پھر ۔۔۔۔۔۔۔" یہ کہ کر اس نے سر جھکا لیا۔ وہ شرمندہ تھا اور مجھ سے نظریں نہیں ملا پا رہا تھا۔ میں زور سے چلائی کہ اب اسے سے کام چلاو اور آئندہ میرے بارے میں سوچنا بھی مت۔

یہ کہ کر میں کمرے سے نکلی اور واپس جانے لگی تو رضوان میرے پیچھے بھاگا اور سوری فائزہ، سوری یار کہتا ہوا مجھ تک پہنچ گیا اور مجھے منانے لگا۔ مگر میں نے اسکو سختی سے منع کر دیا کہ خبردار جو مجھے چھوا بھی ۔ رضوان میرا راستہ روک کر کھڑا تھا اور مسلسل مجھ سے معافی مانگ رہا تھا مگر میں تھی کہ اسکی ایک بات سننے کو تیار نہیں تھی۔ میرے ساتھ ہی ندیم اسی لڑکی کی چدائی میں مصروف تھا جو کچھ دیر پہلے اسکا لن چوس رہی تھی۔ ہمیں دیکھ کر اس نے لن اس لڑکی کی چوت سے نکالا اور ہماری طرف آکر بولاکہ کیا ہوا کس بات پر لڑائی ہو رہی ہے۔ تو رضوان نے اسکی طرف دیکھا اور کہا کہ یار وہ اندر رافعہ تھی نا میں اسکے ممے چوس رہا تھا تو یہ دیکھ کر فائزہ کو غصہ آگیا۔ میں ایک بار پھر چلائی کے میرے راستے سے ہٹ جاو اور جا کر اپنی رافعہ کے ساتھ ہی مستی کرو۔ یہ سن کر ندیم نے رضوان کو کہا تم اندر جاو میں فائزہ سے بات کرتا ہوں۔ میں نے کہا مجھے کسی سے کوئی بات نہیں کرنی۔ میں غصے سے کانپ رہی تھی اور اس وقت مجھے ندیم کے کھڑے ہوئے لن میں بھی کوئی دلچسپی نہیں تھی۔ ندیم نے ایک بار پھر رضوان سے کہا یار تو اندر کمرے میں جا فائزہ ابھی تیرے پاس آجائے گی۔ رضوان نے اسکی طرف دیکھا اور کہا کہ یار میں تو فائزہ سے سوری کر رہا ہوں مگر یہ مان ہی نہیں رہی۔ میں پھر سے چلائی کے رضوان میرے راستے سے ہٹ جاو مجھے واپس جانا ہے۔

یہ سن کر ندیم غصے سے بولا "ابے میں تجھے کہ رہا ہوں نہ تو اندر جا میں فائزہ سے بات کرتا ہوں ابھی یہ تیرے پاس آجائے گی تو جا اندر یہ کہتے ہوئے ندیم نے رضوان کو دھکہ دیا اور رضوان مرے ہوئے قدموں کے ساتھ کمرے میں جانے لگا، میں باہر نکلنے لگی مگر اب کی بار ندیم اپنے لن کے ساتھ میرے سامنے کھڑا تھا۔ اسکا لن ابھی تک کھڑا تھا۔ میں اب چپ چاپ کھڑی تھی مگر پھر مجھے غصہ آیا اور میں نے اب کی بار ندیم کو کہا کہ میرے راستے سے ہٹ جاو مجھے واپس جانا ہے۔ رضوان کمرے میں جا چکا تھا۔ ندیم بولا کیوں واپس جانا ہے تمہیں؟ تم تو یہاں رضوان سے چدوانے آئی تھی اب ایسا کیا ہوگیا کہ واپس جانا ہے؟ اسکے منہ سے یہ بات سن کر میں ایک دم چونکی کہ اسکو کیسے پتا کہ میں نے رضوان کو فون پر یہ کہا تھا؟ مگر میں نے اسکی بات کا جواب دینے کی بجائے کہا کہ یہ میرا مسئلہ ہے تم بیچ میں نہ آو۔

میری یہ بات سن کر ندیم غصے میں مگر آہستہ آواز میں بولا، ابے او رنڈی بند کر یہ ڈرامہ بازی اور چپ چاپ کمرے میں چلی جا اور اپنی چوت مروا۔ خود بھی مزے کر اور ہمیں بھی مزے کرنے دے۔ ورنہ میں رضوان کو بتا دوں گا کہ تو رضوان سے چدوانے سے پہلے بھی اپنی چوت کسی اور سے مروا چکی ہے۔ اسکی یہ بات سن کر مجھ پر جیسے سکتہ طاری ہوگیا۔ اور غصے میں مجھ سے کچھ بولا نہیں جا رہا تھا۔ میرے چہرے کا رنگ بھی غصے سے سرخ ہو چکا تھا۔ مگر پھر میں ہمت کر کے بولی یہ کیا بکواس کر رہے ہو تم؟ ندیم بولا کہ رضوان سیدھا سادھا لڑکا ہے وہ تیرے بارے میں نہیں جانتا مگر سب رضوان جیسے نہیں ہوتے۔ مجھے تو اس دن پارٹی میں ہی پتا چل گیا تھا کہ تو کنواری نہیں ہے جب کہ رضوان ہم سب کے سامنے قسمیں کھاتا تھا کہ اسکی منگیتر بہت شریف ہے۔ اسی کی خاطر کسی نے تیری طرف بری نظر سے نہیں دیکھا ورنہ ہم تو تجھ جیسا مال چھوڑتے ہی نہیں۔

میں اپنے دانت پیستے ہوئے بولی یہ کیا بکواس کیے جا رہے ہو تم۔ میں نے ایسا کچھ نہیں کیا۔ میری بات سن کر وہ ہنسا اور بولا یہ معصومیت کا ناٹک رضوان کے سامنے ہی کرنا میں تو لڑکی کی شکل دیکھ کر بتا دیتا ہوں کہ یہ لن لے چکی ہے یا نہیں۔ اور پھر وہ بولا اس دن میری گود میں بیٹھ کر جس طرح تو نے اپنی گانڈ میرے لن پر گھمائی تھی میں تو اسی وقت سمجھ گیا تھا کہ تو پہلے لن کا مزہ لے چکی ہے۔ اور پھر تو نے ڈانس کرتے ہوئے جس طرح بار بار اپنی گانڈ میرے لن پر دبائی تھی اس سے بھی اندازہ ہو رہا تھا مجھے کہ تیری چوت کو اس وقت لن کی طلب ہو رہی ہے۔ اور پھر جس طرح تو نے اپنا ہاتھ میرے لن پر پھیرا تھا اس سے تو مجھے یقین ہی ہوگیا کہ تو کنواری نہیں۔ یہ تو ہمارا دوست ہی معصوم ہے جس نے کبھی کسی لڑکی کو نہیں چھوا اور ہماری پارٹیز میں شامل ہوتا بھی تھا تو کبھی ڈانس اور کسنگ سے بات آگے نہیں بڑھائی تھی۔ میں نے پھر دانت پیسے ہوئے کہا تم بکواس کر رہے ہے۔ میں نے کچھ غلط نہیں کیا میں نے کسی سے چوت نہیں مروائی۔ مگر یہ بات کرتے ہوئے میری اپنی آواز کانپ رہی تھی اور میری بات میں بالکل بھی اعتماد نہیں تھا۔ کیونکہ ندیم صحیح کہ رہا تھا۔ میں پہلے ہی اپنی چوت اپنے بہنوئی سے مروا چکی تھی۔ میری بات سن کر ندیم ایک بار پھر ہنسا اور بولا بند کردو اب یہ ڈرامہ۔ چپ چاپ اندر جاو اور رضوان کے لن کو سکون دو۔ اپنی چوت کو بھی سکون دو۔ میں اسکو کبھی نہیں بتاوں گا کہ تم پہلے کسی اور سے چدوا چکی ہو۔ لیکن اگر تم نے یہ ڈرامہ بند نہیں کیا تو میں ابھی جا کر بتا دوں گا اسے اور میرے لیے یہ بات ثابت کرنا بھی مشکل نہیں ۔

مجھے نہیں معلوم تھا کہ ندیم کو واقعی یقین تھا کہ میں پہلے چوت مروا چکی ہوں یا پھر وہ ہوا میں تیر چھوڑ رہا تھا۔ اگر اس نے ہوا میں تیر بھی چھوڑا تھا تب بھی وہ بالکل ٹھیک نشانے پر لگا تھا اور اب میرے دل میں خوف تھا کہ اگر اس نے رضوان کو یہ بات کر دی تو رضوان یقین نہ بھی کرے مگر اسکے دل میں شک تو پیدا ہوجائے گا۔ اور اب میں اپنی جگہ پر ساکت کھڑی تھی مجھے کچھ سمجھ نہیں آرہی تھی کہ میں کیا کروں۔ اتنے میں مجھے ندیم کا قہقہ سنائی دیا اور وہ بولا اب کیا ارادہ ہے؟ اگر میرا لن چاہیے تو یہیں کھڑی رہو اور اگر رضوان کا لن چاہیے تو اندر چلی جاو۔ اسکا اتنا کہنا تھا میں فورا واپس مڑی اور کمرے میں چلی گئی۔

اندر گئی تو بیڈر پر رضوان اپنا سر پکڑ کر بیٹھا تھا اور دوسری لڑکی اسکے ساتھ بیٹھی اسے کہ رہی تھی کم سے کم میرے ساتھ تو سیکس کرو پورا فائزہ کو بعد میں مناتے رہنا، مگر رضوان نے کہا پلیز اس وقت مجھے اکیلا چھوڑ دو۔ پھر میں بولی رافعہ تم پلیز باہر چلی جاو۔ میری آواز سن کر رضوان نے چونک کر میری طرف دیکھا تو اسکے چہرے پر حیرت کے ساتھ ساتھ خوشی کے آثار تھے ،وہ ایک دم اپنی جگہ سے اٹھا اور مجھے اپنے گلے سے لگا لیا اور دوبارہ سوری کرنے لگا۔ میں نے کہا کوئی بات نہیں بھول جاو اس بات کو اب۔ اتنے میں رافع نے اپنا برا اور اپنے کپڑے اٹھائے اور مجھے گھورتی ہوئی کمرے سے باہر نکل گئی۔

اسکے جاتے ہی میں نے رضوان کو پیچھے کیا، کمرے کا دروازہ بند کیا اور واپس آکر رضوان کے سامنے آکر بیٹھ گئی اور اسکی پینٹ اتارنے لگی۔ پینٹ اتار کر میں نے رضوان کا انڈر وئیر بھی اتار دیا اور اسکا 7 انچ لمبا لن فورا ہی اپنے منہ میں لے لیا اور اسکے منہ میں اندر باہر کرنے لگی۔ رضوان نے اوپر سے میرا سر پکڑ لیا اور میرے منہ کو زور زور سے لن کے اوپر دھکیلنے لگا تاکہ پورا لن میرے منہ میں جا سکے۔ اب میری چوت بھی گیلی ہونے لگی تھی اور میں بہت مزے کے ساتھ رضوان کا لن چوسنے میں مصروف تھی، میرے ذہن میں اس وقت حیدر کا لن آرہا تھا جس نے 3 بار منی چھوڑی تھی مگر میری چودائی کرنے میں ناکام رہا تھا۔ اور ایک طرف اب یہ رضوان کا لن تھا جس نے میری چدائی تب تک کرنی تھی جب تک کہ میں تھک نا جاوں۔ میں نے رضوان کے لن پر تھوک بھی پھینکا اور اسکو اپنے ہاتھوں سے پورے لن پر مسل دیا اور دوبارہ سے لن منہ میں لیکر چوستی رہی۔ کچھ دیر بعد رضوان نے مجھے کھڑا کیا اور فورا ہی میرا اپر اتار دیا۔ میرا اپر اتارتے ہی رضوان نے بغیر دیر لگائے میرا برا بھی اتارا اور پھر میرا ٹراوزر اور پینٹی اتارنے میں بھی دیر نہیں لگائی۔

میری پینٹی اتار کر رضوان نے فورا ہی کھڑے ہوکر میرے ممے اپنے منہ میں لے لیے اور بڑی ہی شدت کے ساتھ میرے مموں کو چوسنے لگا۔ میرے تنے ہوئے نپلز پر وہ اپنی زبان پھیرتا اور انکو دانتوں سے کاٹتا تو میری سسکیاں نکلنے لگ جاتی۔ نیچے سے ایک ہاتھ سے رضوان میری چوت کو مسل رہا تھا جو مکمل طور پر گیلی ہو چکی تھی۔ کچھ دیر ممے چاٹنے کے بعد رضوان نے مجھے تھوڑا سا پیچھے دھکیلا اور مجھے دیوار کے ساتھ لگا دیا۔ اور نیچے بیٹھ کر میری ایک ٹانگ اٹھا کر اپنے کندھے پر رکھی اور اپنی زبان میری چوت پر پھیرنی شروع کر دی۔ رضوان کی اس حرکت نے میرے پورے جسم میں آگ لگا دی اور میرا پورا جسم جلنے لگا۔ وہ میری ٹانگ اپنے کندھے پر رکھے مسلسل اپنی زبان کو میری چوت میں پھیر رہا تھا۔ میرے منہ سے بے ہنگم آوازیں نکل رہی تھیں آہ آہ آہ۔۔۔۔ اف اف اف۔ ۔ ۔ ۔ ۔ آہ میری جان۔۔۔۔ اور زور سے چاٹو میری چوت کو، میری چوت کو زبان سے چودو، اف اف اف۔۔۔ مسلسل سسکیوں سے رضوان کا جوش بھی بڑھتا جا رہا تھا، کچھ دیر چوت چٹوانے کے بعد مجھے دوبارہ سے حیدر یاد آیا جس نے پہلی بار میری گانڈ چاٹی تھی۔ جیسے ہی مجھے گانڈ کی چٹائی یاد آئی میں نے اپنی ٹانگ رضوان کے کندھے سے نیچے اتاری اور دیوار کی طرف منہ کرکے کھڑی ہوگئی۔ میں نے اپنی گانڈ کو باہر کی طرف نکالا جس سے میری کمر اندر کی طرف دہری ہوگئی اور میں نے رضوان کو کہا میری گانڈ بھی چاٹے۔ میری اس فرمائش پر رضوان نے حیرت سے میری طرف دیکھا مگر پھر بغیر کچھ کہے اپنے ہاتھوں سے میرے چوتڑوں کو کھولا اور اپنی زبان میری گانڈ پر رکھ کر اسکو بھی چاٹنا شروع کر دیا۔ اُف ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ کیا مزہ آیا تھا مجھے جب رضوان نے میری گانڈ چاٹنی شروع کی۔ میری مسلسل سسکیاں نکل رہی تھی۔

کچھ دیر گانڈ چاٹنے کے بعد رضوان کھڑا ہوا، میں نے سیدھے ہونے کی کوشش کی تو رضوان نے مجھے روک دیا اور کہا ایسے ہی کھڑی رہو، یہ کہ کر اس نے اپنا ایک ہاتھ میری چوت پر رکھا اور اپنی انگلی میری چوت میں داخل کر دی۔ میں کانپ کر رہ گئی۔ اسکی انگلی پوری کی پوری میری چوت میں داخل ہوگئی تھی اور وہ انگلی سے میری چوت کی چودائی کرنے لگا ساتھ ہی دوسرے ہاتھ سے اس نے اپنا لن پکڑا اور اس پر اپنا تھوک پھینک کر اسکی مٹھ مار کر اسکو تیار کرنے لگا کچھ ہی دیر بعد رضوان نے میری چوت سے اپنی انگلی نکالی اور پیچھے سے اپنا لن میری چوت پر رکھا کر ہلکا سا زور لگایا تو چوت کے گیلے پن کی وجہ سے رضوان کی ٹوپی میری چوت میں چلی گئی اور میری ہلکی سی چیخ نکلی، پھر رضوان نے ایک زور کا دھکا لگایا تو پورا لن میری چوت میں تھا اور پورا کمرہ میری چیخ سے گونج گیا۔ میری چیخ لازمی طور پر بھی باہر سنائی دی ہوگی مگر مجھے اس وقت اسکی فکر نہیں تھی، رضوان کا لن مسلسل میری پھدی میں دھکے لگا رہا تھا اور میں دیوار کے ساتھ ہاتھ لگائے انکو مسلسل برداشت کر رہی تھی۔ رضوان کے لن کی ضربیں بہت شدید تھیں، جب پورا لن میری چوت میں جاتا تو اسکے ٹٹے بھی میری چوت کے قریب ٹکراتے جن سے بڑا مزہ آرہا تھا اسکے ساتھ ساتھ رضوان کا جسم جب میرے گول، نرم اور گوشت سے بھرے ہوئے چوتڑوں سے ٹکراتا تو کمرے میں دھپ دھپ کی آواز گونجتی۔ غرض اس وقت کمرے میں سیکس کا ماحول گرم تھا اور میری سکسکیاں اور دھپ دھپ کی آوازیں ماحول کو اور سیکسی بنا رہی تھیں۔ کچھ ہی دیر کی چودائی کے بعد میری چوت نے رضوان کے لن کی زور دار ضربوں کے آگے ہار مان لی اور پانی چھوڑ دیا۔ پانی چھوڑتے ہوئے میری ٹانگیں کانپ رہی تھی اور جسم اکڑ گیا تھا۔ جیسے ہی مکمل پانی چھوڑ دیا چوت نے تو میں سیدھے ہوگئی اور لن میری چوت سے نکل گیا۔

اب رضوان نے میرا منہ اپنی طرف کیا اور اپنے ہونٹ میرے ہونٹوں پر رکھ کر چوسنے لگا اور ساتھ ہی مجھے اپنی گود میں اٹھا لیا۔ گود میں اٹھا کر اسنے دوبارہ سے میری کمر دیوار کے ساتھ لگائی اور نیچے سے اپنا لن میری چوت میں داخل کر دیا۔ میں نے اپنی ٹانگیں رضوان کی کمر کے گرد لپیٹ لیں اور اسے زور لگا کر اپنے قریب کر لیا تاکہ لن اپنی جڑ تک میری چوت میں جا سکے۔ اب میں رضوان کی گود میں تھی اور رضوان کا لن میری چوت میں تھا۔ رضوان نے ایک بار پھر سے میری چوت میں زور دار ضربیں لگانی شروع کر دیں۔ اس بار میری سسکیاں دب رہیں تھیں کیونکہ رضوان نے اپنی زبان میرے منہ میں ڈالی ہوئی تھی اور میں مسلسل اسکی زبان چوس رہی تھی۔ اب کی بار لن کی ضربیں پہلے سے زیادہ شدید تھیں کیونکہ اب لن سامنے سے اندر ڈالا ہوا تھا۔ میں اب زیادہ سے زیادہ مزہ لینے کے لیے اپنی چوت کو تنگ کر رہی تھی۔ میں نے اپنی چوت کو ٹائٹ کر لیا۔ جب رضوان نے لن باہر نکالنا ہوتا تو میں چوت کو ڈھیلا چھوڑ دیتی، مگر جیسے ہی لن ٹوپی تک باہر نکلتا اور رضوان دوبارہ سے اندر دھکا لگانے لگتا تو میں اپنی چوت کو دوبارہ ٹائٹ کر لیتی۔ اس سے لن میری چوت کی دیواروں کے ساتھ رگڑ کھاتا ہوا اندر تک جاتا اور میری شہوت کو اور زیادہ بڑھانے لگا۔

اب میری لن کی ہوس اتنی بڑھ چکی تھی کہ رضوان کا لن کافی نہیں تھا۔ اب میرے ذہن میں ندیم کا 8 انچ لمبا لن گھوم رہا تھا جسکو میں کچھ ہی دیر پہلے باہر دیکھ کر آئی تھی۔ میری چوت ابھی بھی رضوان کے لن کی ضربیں سہ رہی تھی اور میں نے اپنا سر اسکے کندھے پر رکھا ہوا تھا اور میری سسکیاں کمرے میں گونج رہی تھیں۔ مگر میرے دماغ میں ندیم کا لن گھوم رہا تھا اور سوچ رہی تھی آخر اسکا لن کیسے لوں؟ اچانک ہی میرے ذہن میں ایک آئیڈیا آگیا۔ میری چودائی جاری تھی میں نے ایسے ہی سر اٹھایا اور رضوان کی آنکھوں میں پیار سے دیکھنے لگی، اس نے بھی خوش ہوکر مجھے دیکھا تو میں نے اس سے پوچھا میرے آنے سے پہلے تم نے صرف رافعہ کے ممے ہی چوسے تھے یا کچھ اور بھی کیا تھا؟ تو رضوان کے چہرے پر شرمندگی آئی اور اس نے اپنے لن کی ضربیں روک دیں اور بولا یار اب بھول جاو اس بات کو۔ میں نے رضوان کو کہا تم چودائی جاری رکھو اسکو نہ روکو تو اس نے دوبارہ سے ضربیں لگانا شروع کر دیں، پھر میں نے پوچھا کہ بتاو نا صرف ممے چوسے تھے یا کچھ اور بھی کیا تھا؟ تو اسنے کہا کہ میں نے رافعہ کی چوت بھی چاٹی تھی اور جب ممے چاٹ رہا تھا تو تم آگئی۔ تو میں نے پوچھا کیسی تھی اسکی چوت؟ تو رضوان نے بتایا کہ تمہاری چوت اس سے اچھی ہے۔ میں نے کہا مکھن نہیں لگاو صحیح صحیح بتاو۔ اس پر رضوان نے پھر کہا کہ ہاں تمہاری چوت کافی ٹائٹ ہے کیونکہ تم تو صرف دوسری بار ہی چدائی کروا رہی ہو اور میں نے خود تمہاری ٹائٹ چوت کا پردہ پھاڑہ تھا پچھلے ہفتے۔ مگر رافعہ کی چوت بہت کھلی ہے۔ وہ بہت عرصے سے لن کی سواری کر رہی ہے۔ ندیم اور علی کے علاوہ بھی وہ بہت لڑکوں کے لن لے چکی ہے اپنی چوت میں۔ میں نے شرارتی انداز میں پھر پوچھا کہ تمہیں کیسے پتا کہ اسکی چوت کھلی ہے ؟ کیا تم نے لن ڈال کے دیکھا ہے تو بولا نہیں یار انگلی ڈالی تھی۔ اور زبان سے چاٹتے ہوئے بھی صاف پتہ لگ رہا تھا اسکی چوت کے لب کھلے ہوئے تھے مگر تمہارے ٹائٹ ہیں اور آپس میں جڑے ہوئے ہیں۔

میں نے محسوس کیا کہ اب رضوان کا لن اور زیادہ سخت ہوگیا تھا اور اسکی ضربوں کی شدت میں بھی اضافہ ہوگیا تھا جو مجھے اپنی چوت کی گہرائی تک محسوس ہو رہی تھی۔ پھر میں نے پوچھا، اچھا یہ بتاو اسکے ممے کیسے ہیں۔ اس پر وہ بولا کہ اسکے ممے تمہارے مموں سے بڑے ہیں۔ اسکا سائز36 ہے اور انکو دبانے میں زیادہ مزہ آرہا تھا۔ میں نے پوچھا اب دبانا چاہتے ہو اسکے ممے؟؟؟ تو رضوان نے بے یقینی سے میری طرف دیکھا لیکن پھر بولا، نہیں میں بس اپنی فائزہ کے ممے ہی دباوں گا اور اسی کی چوت کو چودوں گا۔ میں نے پھر ہنستے ہوئے پوچھا نہیں مجھے بتاو اگر تم اسکے ممے دوبارہ دبانا چاہتے ہو اور انکو چوسنا چاہتے ہو تو مجھے کوئی اعتراض نہیں ہوگا۔ میرا یہ کہنا تھا کہ رضوان کے لن کی ضربوں میں اور بھی شدت آگئی۔ میں ابھی تک رضوان کی گود میں تھی اور میری چوت ایک بار پھر سے پانی چھوڑنے کے قریب تھی۔ رضوان نے میری طرف دیکھا اسکی آنکھوں سے لگ رہا تھا کہ وہ رافعہ کے ممے چوسنا چاہتا تھا مگر بول نہیں رہا تھا۔ بس اسکے جسم کا بڑھتا ہوا جوش مجھے بتا رہا تھا کہ اسکے دماغ میں ابھی رافعہ کے ممے ہی گھوم رہے ہیں جسکی وجہ سے میری چودائی میں بھی شدت آتی جا رہی تھی۔ میں نے اپنے ہونٹ رضوان کے ہونٹوں پر رکھ کر ایک بھرپور کس کی، اور اپنی گانڈ زور زور سے ہلا کر رضوان کا ساتھ دینے لگی۔ جس سے میری سسکیاں اور بھی بڑھ گئیں۔ اور ہم دونوں کو مزہ آنے لگا۔ میں نے ایک بار پھر رضوان کو کہا بتاو نا جان، کیا تم رافعہ کے ممے چوسنے چاہتے ہو؟ کیا تم اسکے مموں کو اپنے ہاتھوں سے دبانا چاہتے ہو؟ کیا تم اسکے نپلز کو اپنی انگلیوں سے رگڑنا چاہتے ہو؟؟؟ میرے لہجے میں ہوس ہی ہوس بھری ہوئی تھی اور رضوان کی برداشت بھی اب جواب دے چکی تھی اس نے بھی کانپتی ہوئی آواز میں کہ دیا کہ ہاں رافعہ کے ممے چوسنے کا بہت مزہ آیا تھا مجھے اسکے ممے چاہیے، کہ کہتے ہی اس نے کچھ زور دار ضربیں لگائیں میری پھدی میں اور اسکے لن نے میری پھدی کے اندر ہی منی چھوڑ دی۔ ان آخری دھکوں نے میری چوت کی برداشت کو بھی ختم کر دیا اور میں نے بھِی پانی چھوڑ دیا۔

اب رضوان نے مجھے اپنی گود سے اتارا تو میں کچھ تھک چکی تھی، میں نے رضوان کو بیڈ کی طرف دھکیلا اور اسکو بیڈ پر لٹا کر خود اسکے اوپر چڑھ گئی اور اسکے ہونٹ چوسنے لگی۔ رضوان کا لن اب سکڑ کر چھوٹا ہو چکا تھا۔ میں نے کچھ دیر رضوان کو کسنگ کی اور دوبارہ سے اسکو پوچھا کہ رافعہ کو بلاوں اندر ؟؟ تم اسکے ممے چوس لینا جی بھر کے؟؟ اسنے للچائی ہوئی نظروں سے میری طرف دیکھا مگر منہ سے کچھ نہیں بولا۔ میں اسکا اشارہ سمجھ گئی اور ایسے ہی میں باہر چلی گئی۔ میں بالکل ننگی تھی اور میری ٹانگوں پر ابھی رضوان کی منی اور اپنی چوت کا پانی چمک رہا تھا۔ میں باہر نکلی تو رافعہ ایک ٹیبل پر الٹی لیٹی ہوئی تھی اور ندیم نے اسکی گانڈ میں اپنا لن ڈالا ہوا تھا۔ اور دوسری لڑکی جو پہلے ندیم سے چدائی کروا رہی تھی وہ اپنی چوت رافعہ کے منہ کے ساتھ لگا کر بیٹھی تھی اور رافعہ اپنی زبان سے اسے چاٹ رہی تھی۔ میں باہر نکلی تو رافعہ اور ندیم نے میری طرف دیکھا۔ رافعہ کی نظروں میں حیرت تھی کیونکہ کچھ دیر پہلے جس طرح میں نے اسکو کمرے سے نکالا تھا اور اب میں ننگی کمرے سے باہر نکل آئی تھی یہ اسکے لیے حیران کن تھا۔ مگر ندیم کی آنکھوں میں شیطانیت تھی اور وہ میرا اشارہ سمجھ گیا تھا۔ ایک ایسا اشارہ جو میں نے کیا بھی نہیں تھا مجض میرے دماغ میں ہی تھا، مگر ندیم اسکو بھی سمجھ گیا۔ میں نے اسکی طرف مسکراتے ہوئے دیکھا اور رافعہ کو کہا کہ پلیز تم اندر آسکتی ہو کمرے میں؟ تو ندیم نے اسکی گانڈ سے اپنا لن نکال دیا اور دوسری لڑکی کی طرف اپنا لن کیا جو فورا ہی اس کے اوپر جھک کر اسکو چاٹنے لگی۔ رافعہ اپنی جگہ سے کھڑی ہوگئی اور اسنے کہا کیوں کیا ہوا؟ تو میں نے اسے کہا ک رضوان تمارے ممے چاٹنا چاہتا ہے آجاو پلیز۔ یہ کہتے ہوئے میری نظریں ندیم کے لن پر ہی تھیں اور میرے چہرے پر بھی ایک مسکراہٹ تھی جو ندیم کے لیے واضح اشارہ تھا۔ رافعہ نے میری بات سن کر میری طرف طنزیہ مسکراہٹ سے دیکھا اور کہا تو پہلے تمہیں کیا تکلیف ہوئی تھی۔ یہ کہ کر وہ میری طرف بڑھی اور ہم دونوں اکٹھی ہی واپس کمرے میں آگئیں۔ 2 ننگی لڑکیوں کو اپنی طرف آتا دیکھ کر رضوان کا چہرہ خوشی سے چمک اٹھا۔ رافعہ نے بھی جیسے ہی ندیم کو ننگا دیکھا تو فوار ہی اسکے اوپر چھلانگ لگا دی اور اپنے ممے رضوان کے حوالے کر دیے۔

رافعہ رضوان کے اوپر لیٹی ہوئی تھی، وہ ڈوگی سٹائل میں تھی، اپنی کہنیوں کے بل وہ رضوان کے اوپر اس طرح چھکی کہ اسکے ممے رضوان کے منہ کے اوپر لٹکنے لگے جنکو فورا ہی رضوان نے ہاتھوں سے پکڑ کر زور سے دبایا اور ایک مما اپنے منہ میں ڈال کر اسکو کسی بچے کی طرح چوسنے لگا۔ پیچھے سے رافعہ اپنے گھٹنوں کے بل بیٹھی تھی جس سے اسکی گانڈ کافی انچی اور اوپر اٹھی ہوئی تھی۔ میں نے اسکی گانڈ پر نظر ڈالی تو وہ کسی حد تک کھلی ہوئی تھی، میں رافعہ کے پیچھے گئی اور اپنی زبان رافعہ کی گانڈ پر رکھ کر چاٹنے لگی۔

جاری ہے۔
Reply With Quote
Sponsored Links
CLICK HERE TO DOWNLOAD INDIAN MASALA VIDEOS n MASALA CLIPS
Sponsored Links - Indian Masala Movies
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator

"Uncensored Indian Masala Movies" - The hottest Indian Sex Movies and Mallu Masala clips

Check out beautiful Indian actress in sexy and even TOPLESS poses

Indian XXX Movies!

Widest range of Indian Adult Movies of shy, authentic Desi women.....FULLY NUDE DESI MASALA VIDEOS!!! Click here to visit now!!!
  #366  
Old 11-19-2015, 08:50 PM
totapuri totapuri is offline
Senior Member
 
Join Date: Jan 2012
Posts: 220,374
Default سالی: پورے گھر والی

Zabardast update-------------------------next ka shidat sey intizar rahey ga.
Reply With Quote
Sponsored Links
CLICK HERE TO DOWNLOAD INDIAN MASALA VIDEOS n MASALA CLIPS
Sponsored Links - Indian Masala Movies
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator

"Uncensored Indian Masala Movies" - The hottest Indian Sex Movies and Mallu Masala clips

Check out beautiful Indian actress in sexy and even TOPLESS poses

Indian XXX Movies!

Widest range of Indian Adult Movies of shy, authentic Desi women.....FULLY NUDE DESI MASALA VIDEOS!!! Click here to visit now!!!

 

UKBL ~ 10 Second Banner Rotator
Sponsored Links
  #367  
Old 11-19-2015, 08:50 PM
totapuri totapuri is offline
Senior Member
 
Join Date: Jan 2012
Posts: 220,374
Default سالی: پورے گھر والی

buhat achi story he aj ki update zara choti thi next jaldi de dein
Reply With Quote
Sponsored Links
CLICK HERE TO DOWNLOAD INDIAN MASALA VIDEOS n MASALA CLIPS
Sponsored Links - Indian Masala Movies
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator

"Uncensored Indian Masala Movies" - The hottest Indian Sex Movies and Mallu Masala clips

Check out beautiful Indian actress in sexy and even TOPLESS poses

Indian XXX Movies!

Widest range of Indian Adult Movies of shy, authentic Desi women.....FULLY NUDE DESI MASALA VIDEOS!!! Click here to visit now!!!
  #368  
Old 11-19-2015, 08:50 PM
goldfish goldfish is offline
Senior Member
 
Join Date: Dec 2007
Posts: 282,110
Default سالی: پورے گھر والی

bht achi kahani hai apki....sach mein geeli kr di tm ny....
Reply With Quote
Sponsored Links
CLICK HERE TO DOWNLOAD INDIAN MASALA VIDEOS n MASALA CLIPS
Sponsored Links - Indian Masala Movies
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator

"Uncensored Indian Masala Movies" - The hottest Indian Sex Movies and Mallu Masala clips

Check out beautiful Indian actress in sexy and even TOPLESS poses

Indian XXX Movies!

Widest range of Indian Adult Movies of shy, authentic Desi women.....FULLY NUDE DESI MASALA VIDEOS!!! Click here to visit now!!!

 

UKBL ~ 10 Second Banner Rotator
Sponsored Links
  #369  
Old 11-19-2015, 08:50 PM
sherkhan sherkhan is offline
Senior Member
 
Join Date: Jan 2012
Posts: 221,781
Default سالی: پورے گھر والی

kamal kamal kamal

kep it up bhot achi ja rahi hai story
Reply With Quote
Sponsored Links
CLICK HERE TO DOWNLOAD INDIAN MASALA VIDEOS n MASALA CLIPS
Sponsored Links - Indian Masala Movies
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator

"Uncensored Indian Masala Movies" - The hottest Indian Sex Movies and Mallu Masala clips

Check out beautiful Indian actress in sexy and even TOPLESS poses

Indian XXX Movies!

Widest range of Indian Adult Movies of shy, authentic Desi women.....FULLY NUDE DESI MASALA VIDEOS!!! Click here to visit now!!!
  #370  
Old 11-19-2015, 08:51 PM
desiman7 desiman7 is offline
Senior Member
 
Join Date: Jan 2012
Posts: 221,141
Default سالی: پورے گھر والی

Achi updtae hae....
Reply With Quote
Sponsored Links
CLICK HERE TO DOWNLOAD INDIAN MASALA VIDEOS n MASALA CLIPS
Sponsored Links - Indian Masala Movies
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator

"Uncensored Indian Masala Movies" - The hottest Indian Sex Movies and Mallu Masala clips

Check out beautiful Indian actress in sexy and even TOPLESS poses

Indian XXX Movies!

Widest range of Indian Adult Movies of shy, authentic Desi women.....FULLY NUDE DESI MASALA VIDEOS!!! Click here to visit now!!!

 

UKBL ~ 10 Second Banner Rotator
Sponsored Links
Reply

Thread Tools
Display Modes

Posting Rules
You may not post new threads
You may not post replies
You may not post attachments
You may not edit your posts

BB code is On
Smilies are On
[IMG] code is On
HTML code is Off

Forum Jump


All times are GMT -4. The time now is 04:20 AM.


Powered by vBulletin® Version 3.8.3
Copyright ©2000 - 2018, Jelsoft Enterprises Ltd.

Masala Clips

Nude Indian Actress Masala Clips

Hot Masala Videos

Indian Hardcore xxx Adult Videos

Indian Masala Videos

Uncensored Mallu & Bollywood Sex

Indian Masala Sex Porn

Indian Sex Movies, Desi xxx Sex Videos

Disclaimer: HotMasalaBoard.com DOES NOT claim any responsibility to links to any pictures or videos posted by its members. HotMasalaBoard has a strict policy regarding posting copyrighted videos. If you believe that a member has posted a copyrighted picture / video, please contact Hotman super moderator. Members are also advised not to post any clandestinely shot material.