Hot Masala Board - Free Indian Sex Stories & Indian Sex Videos. Nude Indian Actresses Pictures, Masala Movies, Indian Masala Videos

UKBL ~ 10 Second Banner Rotator


Go Back   Hot Masala Board - Free Indian Sex Stories & Indian Sex Videos. Nude Indian Actresses Pictures, Masala Movies, Indian Masala Videos > Urdu Sex Stories - Urdu font sex stories, urdu kahani, urdu sex kahani

Reply
 
Thread Tools Display Modes
  #161  
Old 11-19-2015, 07:33 PM
gabbar gabbar is offline
Senior Member
 
Join Date: Jan 2012
Posts: 221,811
Default سالی: پورے گھر والی


ان لوگوں نے جیسے ہی ہماری ناک پر رومال رکھا ہم دونوں نے چیخیں مارنا شروع کر دیں۔ ۔۔۔۔ سائرہ بے بسی سے میری طرف دیکھ رہی تھی اور میں سائرہ کی طرف دیکھ رہی تھی۔ لیکن ہماری چیخیں ہمارے منہ تک ہی محدود رہیں کیونکہ انہوں نے رومال اس قدر زور سے دبا کر منہ اور ناک پر رکھا تھا کہ ہماری چیخیں اندر ہی دم توڑ گئیں۔ ابھی ہمارے ناک اور منہ پر رومال رکھے محض چند سیکینڈ ہی گزرے ہونگے کہ مجھے محسوس ہوا جیسے سائرہ کی آنکھیں آہستہ آہستہ بند ہو رہی ہیں اور اس پر غنودگی چھا رہی ہے۔ گاڑی چل رہی تھی اور کالے شیشے ہونے کی وجہ سے باہر سے گاڑی کے اندر کچھ نظر نہیں آرہا تھا۔ ایک ہٹے کٹے شخص نے سائرہ کو اپنی گود میں بٹھایا ہوا تھا اور سائرہ اسکی گود میں مچل رہی تھی اور اپنے بچاو کی کوشش کر رہی تھی۔ مگر رومال میں موجود بے ہوشی کی دوا نے جلد ہی سائرہ کی جدو جہد کو ختم کر دیا۔

آخر کار سائرہ نے ہاتھ پیر مارنا بند کیے اور بے ہوش ہوگئی۔ جیسے ہی پیچھے بیٹھے دونوں لوگوں کو یقین ہوگیا کہ سائرہ اب بے ہوش ہو چکی ہے انہوں نے میرے منہ سے رومال ہٹا دیا۔ اور میں سیدھی ہوکر سائرہ کا جائزہ لینے لگی کہ آیا وہ واقعی بے ہوش ہوئی بھی ہے یا نہیں؟؟ سائرہ مکمل بے ہوش تھی اور میں پرسکون ہوکر انہی لوگوں کے درمیان بیٹھ گئی۔ اصل میں یہ لوگ سب انسپیکٹر ماجد خان کے لوگ تھے ۔ جی ہاں وہی ماجد خان جو مجھے تھانے میں ملا تھا اور بعد میں میرے کہنے پر وہ میرے پلان پر عملدرآمد کرنے کے لیے ہمیں اغواہ کر رہا تھا۔ میرے ناک اور منہ پر جو رومال رکھا گیا اس میں کسی قسم کی دوائی موجود نہیں تھی، وہ محض سائرہ کو دکھانے کے لیے رکھا گیا تھا جب کہ سائرہ بے ہوش ہو چکی تھی اور بے ہوش ہونے سے پہلے وہ مجھے بے بسی کے عالم میں دیکھ رہی تھی۔ وہ شاید یہی سوچ رہی ہوگی کے اسکے بابا کے دشمنوں نے ہمیں اغوا کیا ہے اور بے چاری فائزہ مفت میں ہی پھنس گئی ہے۔۔۔

بحر حال کچھ دیر کے بعد ہماری گاڑی ایک ویران سی جگہ میں موجود ایک حویلی کے سامنے جا کر رکی۔ ہارن دینے پر چوکیدار نے بڑا سا گیٹ کھولا تو گاڑی اندر چلی گئی ۔ اندر جا کر گاڑی رکی تو پہلے میرے ساتھ بیٹھا ہوا شخص نیچے اترا جو کہ سب انسپکٹر ماجد خان تھا اور اسکے پیچھے میں بھی نیچے اتری۔ پھر باری باری سب لوگ اترے۔ ان میں سے ایک شخص نے سائرہ کو گود میں اٹھایا اور اندر کمرے میں لے گئے۔ میں بھی انکے ساتھ ساتھ اندر تک گئی۔

یہ ایک ویران سا گھر تھا۔ جہاں شاید کافی عرصے سو کوئی نہیں آیا ہوگا۔ کمرے میں جا کر جس شخص نے سائرہ کو گود میں اٹھا رکھا تھا اس نے سائرہ کو کمرے میں موجود بیڈ پر لٹایا اور ماجد خان کی طرف دیکھتے ہوئے بولا باس اب کیا کرنا ہے؟؟؟ تو ماجد خان نے کہا کہ تم سب لوگ اپنے اپنے چہرے سے ماسک نہیں اتارو گے اور جتنا ہو سکے اپنا بچاو کرو گے تاکہ کیمرے میں بھی تم لوگ پہچانے نا جا سکو۔ اور اس لڑکی کے ہوش میں آنے کا انتظار کرو گے۔ ساتھ ہی اسنے ڈرائیور کو کہا کہ وہ گاڑی لیکر یہاں سے چلا جائے اور اس گاڑی کو کہیں غائب کر دے اور اسکی جگہ کوئی اور پرانی چوری شدہ گاڑی لے آئے۔

اسکے بعد ماجد نے مجھے ایک مردانہ لباس لا کر دیا جو میں نے اپنے کپڑوں کے اوپر سے ہی زیب تن کر لیا اور اسکے نیچے مردانہ جوتے جو سائز میں تھوڑے بڑے تھے مگر میں نے وہ بھی پہن لیے۔ اور جس طرح کے ماسک انہوں نے اپنے چہرے پر چڑھا رکھے تھے اسی طرح کا ایک ماسک مجھے بھی دے دیا گیا جو میں نے اپنے چہرے پر لگا لیا۔ میرے ہاتھ میں ایک کیمرہ موجود تھا جس سے میں نے سائرہ کی چدائی یعنی کے اسکے ریپ کی ویڈیو بنانی تھی ۔ اور مردانہ لباس پہننے کا مقصد یہ تھا کہ جب سائرہ کی نظر مجھ پر پڑے تو وہ مجھے پہچان نہ پائے۔

اب ان میں سے ایک شخص نے گلاس میں پانی لیا اور سائرہ کے چہرے پر چھینٹے مارے جس سے کچھ ہی دیر میں سائرہ کو ہوش آگیا اور وہ چلانے لگی دوبارہ سے۔ اس نے ادھر ادھر دیکھا اور اپنے آپکو 4 غنڈوں میں گھرا ہوا پایا۔ اصل میں 3 غنڈے تھے چوتھا غنڈہ میں خود تھی جو مردانہ لباس میں ملبوس تھی۔ سائرہ نے کچھ دیر بچاو بچاو کی آوازیں ماری پھر رونے لگی اور ان لوگوں سے پوچھنے لگی کہ وہ کون ہیں اور کیوں اغوا کیا ہے اسے؟ اور فائزہ کہاں ہے؟ مگر باقی 3 لوگ اس پر ہنسنے لگے اور میں خاموشی سے سائرہ کا تماشہ دیکھنے لگی۔ میں اپنا کیمرہ آن کر چکی تھی اور ماجد خان سائرہ کی طرف بڑھنے لگا تھا۔ سائرہ ڈر کے مارے بیڈ کی ٹیک کے ساتھ جڑ کر بیٹھی تھی رونے کے ساتھ ساتھ چیخیں بھی مار رہی تھی۔ اس نے بھاگنے کی بھی کوشش کی مگر ماجد خان نے ایک ہی ہاتھ سے اسکو دبوچ لیا اور اسکو اپنے سینے سے لگا لیا۔

جیسے ہی ماجد خان نے سائرہ کو اپنے سینے سے لگایا سائرہ نے اور زور سے چلانا شروع کر دیا۔ ماجد خان نے ایک قہقہ لگایا اور بولا جتنا چلانا ہے چلا لو میری جانِ من یہاں دور دور تک تمہاری آوازیں سننے والا کوئی نہیں ہے۔ یہ کہ کر ماجد خان نے اپنے ہونٹ سائرہ کے ہونٹ پر رکھ دیے اور انکو چوسنے لگا جب کہ سائرہ بری طرح سے اپنے آپکو چھڑوانے کی کوشش کرنے لگی۔ مگر ماجد خان کی مضبوط گرفت میں وہ بے بس تھی۔ میرا کیمرہ سائرہ اور ماجد کے جڑے ہوئے ہونٹوں کی ویڈیو بنا رہا تھا ماجد بہت ہی پیار اور شدت کے ساتھ سائرہ کے خوبصورت ہونٹ چوسنا چاہ رہا تھا جنکو سائرہ نے مضبوطی کے ساتھ بند کر رکھا تھا۔ لیکن ماجد خان پھر بھی اسکے ہونٹوں پر ہونٹ پھیرتا اور کبھی اپنی زبان نکال کر ان پر پھیرنے لگتا۔

سائرہ کسی بن پانی مچھلی کی طرح اسکی بانہوں میں تڑپ رہی تھی اور اپنے آپ کو چھڑوانے کی کوشش کر رہی تھی۔ اتنے میں دوسرا غنڈہ بھی سائرہ کے قریب گیا اور پیچھے سے سائرہ کی قمیص اٹھائی اور ایک ہی جھٹکے میں پھاڑ ڈالی۔ جب اس شخص نے سائرہ کی قمیص جھٹکے سے کھینچی تو اسکی پوری کمر ننگی ہوگئی۔ سائرہ کی گوری کمر دیکھتے ہی وہ سائرہ کی کمر پر زبان پھیرنے لگا اور اس پر پیار کرنے لگا جبکہ ماجد خان ابھی بھی سائرہ کے خوبصورت گلابی ہونٹوں کو چوسنے کی کوشش کر رہا تھا۔ جب کچھ دیر ماجد نے ہونٹ چوس لیے تو وہ تھوڑا سا پیچھے ہٹا اور آگے سے سائرہ کی قمیص پکڑ کر کھینچ ڈالی اسکا پچھلا حصہ تو پہلے ہی پھٹ چکا تھا اور اب قمیص کا اگلا حصہ بھی اسکے جسم سے علیحدہ ہو چکا تھا۔ اب سائرہ کا گورا جسم سرخ رنگ کے برا میں بہت ہی پیارا لگ رہا تھا اور میرا اپنا دل کرنے لگا کہ میں بھی جا کر سائرہ کے جسم پر پیار کروں، مگر مجھے اسکی مووی بنانی تھی۔ میں نے کیمرے کا فوکس سائرہ کے برا پر کیا اور اسکی کمر سے لیکر سامنے سینے تک کی ویڈیو بنا ڈالی۔ اسکے مموں کا ابھار اس برا میں بہت ہی پیارا لگ رہا تھا۔ ماجد خان نے سائرہ کو چوتڑوں سے پکڑا اور نیچھے جھک کر اسکے مموں پر پیار کرنے لگا۔ اور میں اس پیار کی ریکارڈنگ کرنے میں مصروف تھی۔

سائرہ ابھی تک چلا رہی تھی اور اپنے آپ کو چھڑوانے کی کوشش کر رہی تھی مگر اسکی ساری کوششیں ناکام تھیں۔ کچھ دیر اسکے مموں کے ابھاروں پر پیار کرنے کے بعد ماجد خان نے سائرہ کو بیڈ پر دھکا دیا تو سائرہ بیڈ پر اوندھے منہ گر گئی اور گرتے ہی اس نے پھر سے بھاگنے کی کوشش کی مگر اس بار دوسرے غنڈے نے سائرہ کو اوپر سے ہی دبوچ لیا اور دوبارے سے اسکی کمر پر پیار کرنے لگا۔ ماجد خان بھی کسی بھوکے بھیرڑیے کی طرح سائرہ کی گوری کمر کو نوچنے میں مصروف ہوگیا، اب کی بار تیسرا غنڈہ جو میرے ساتھ ہی کھڑا تھا وہ بھی آگے بڑھا اور اسنے سائرہ کی شلوار پکڑ کر ایک ہی جھٹکے میں اتار دی۔

سائرہ نے نیچے سے پینٹی نہیں پہنی ہوئی تھی، شلوار اترتے ہی اسکے گول گول اور نرم نرم گوشت سے بھرے ہوئے چوتڑ اس شخص کے سامنے اگئے جسکو اسنے پہلے اپنے ہاتھوں سے دبایا اور پھر اسکے اوپر اپنا منہ رکھ کر چوسنے لگا۔ پورا کمرہ سائرہ کی چیخوں سے گونج رہا تھا مگر وہ تینوں کسی بھوکے بھیڑیے کی طرح سائرہ کے پھولوں جیسے نرم اور ملائم جسم کو نوچنے میں مصروف تھے۔ ایک غنڈہ سائرہ کے چوتڑوں کو کھول کر اسکی گانڈ پر اپنی زبان پھیر رہا تھا جبکہ ماجد خان اور دوسرا غنڈہ سائرہ کی گردن اور کمر پر پیار کرنے میں مصروف تھے۔ ماجد نے سائرہ کے برا کی ہُک پیچھے سے کھول دی تھی اور اب وہ سائرہ کی گردن سے لیکر اسکے چوتڑوں کے ابھار تک اپنی زبان سائرہ کے جسم پر پھیر رہا تھا جب کے نیچے والا شخص سائرہ کے چوتڑوں اسکی گانڈ اور اسکی ٹانگوں پر پیار کرنے میں مصروف تھا۔ اور تیسرا شخص اپنے کپڑے اتار کر اپنے 8 انچ کے لوڑے کو سہلا رہا تھا۔

کچھ دیر بعد ماجد نے سائرہ کو سیدھا کیا اور اسکا برا اسکے مموں سے علیحدہ کر دیا۔ جیسے ہی سائرہ کا برا مموں سے علیحدہ ہوا، اسکے 34 سائز کے ممے دیکھ کر ماجد اپنی زبان ہونٹون پر پھیرنے لگا اور فورا ہی اسکے اوپر جھک کر اسکے مموں کو چاٹنا شروع کردیا۔ سائرہ نے اپنے ہاتھ اپنے مموں پر رکھ کر انکو چھپانا چاہا مگر پہلے شخص نے اسکا ہاتھ پکڑ کر اپنے لوڑے پر رکھ دیا ۔ لوڑے کو ہاتھ لگتے ہی سائرہ کو جھٹکا لگا اور اسنے اپنی مٹھی بند کر لی مگر اس شخص نے پھر بھی زبردستی اسکی مٹھی کہ ہی اپنے لوڑے کے ساتھ لگائے رکھا۔ وہ چاہتا تھا کہ سائرہ اسکا لوڑا اپنے ہاتھ میں پکڑے مگر سائرہ اسطرح نہیں کر رہی تھی اور اسکی آنکھوں سے مسلسل آنسو جاری تھے۔ نیچے موجود دوسرے غنڈے نے سائرہ کے سیدھے ہونے کے بعد اسکی پھدی پر نظر ڈالی تو اسکی آنکھوں میں بھی چمک آگئی۔ کنواری پھدی کا اپنا ہی نشہ ہوتا ہے۔ سائرہ کی پھدی کے لب آپس میں جڑے ہوئے تھے اور اسکے پھدی کے اوپر ہلکے ہلکے سے براون بال بہت دلکش لگ رہے تھے۔ شاید کچھ دن پہلے ہی سائرہ نے اپنی پھدی کی شیو کی تھی۔ اس شخص نے سائرہ کی ٹانگیں کھولیں اور اپنی انگلی اسکی پھدی کی لائن کے اوپر بہت ہی پیار سے پھیرنے لگا۔ سائرہ کی پھدی بالکل خشک تھی جسکا مطلب تھا کہ ابھی تک وہ اپنی چدائی کے لیے راضی نہیں ہوئی تھی اور مسلسل بچاو کا ہی سوچ رہی تھی۔ میں کبھی ماجد خان کو سائرہ کے ممے چوستے ہوئے کی ویڈیو بنا رہی تھی تو کبھی پہلے شخص کے لوڑے پر سائرہ کے ہاتھ کی ویڈیو بنا رہی تھی اور کبھی نیچے موجود شخص کی ویڈیو بنا رہی تھی جو سائرہ کی نرم و نازک پھدی پر بہت ہی پیار سے اپنی انگلی پھیر رہا تھا۔

اب کی بار ماجد خان نے سائرہ کے مموں کی جان چھوڑی اور کھڑا ہوکر اپنے کپڑے اتارنے لگا۔ ماجد خان نے ایک ہی باری میں اپنے سارے کپڑے اتار دیے۔ جیسے ہی ماجد خان نے اپنے کپڑے اتارے میرا اوپر کا سانس اوپر اور نیچے کا سانس نیچے رہ گیا۔ اور میری زبان خود بخود باہر نکل آئی۔ ماجد خان کا لن کسی لوہے کے راڈ کی طرح سخت تحا۔ اسکی ٹوپی کا سائز بھی بہت بڑا تھا اور اسکا رخ سیدھا چھت کی طرف تھا۔ اتنی سختی میں نے پہلے کسی کے لن میں نہیں دیکھی تھی اور اسکی لمبائی 9 انچ تھی جب کہ موٹائی میں بھی وہ کسی طرح کم نہیں تھا۔ میں نے کیمرہ کا فوکس ماجد خان کے لن پر کیا اور اسکے لن کی ٹوپی سے لیکر اسکے ٹٹوں تک کی ویڈیو بنا ڈالی۔

ماجد نے کپڑے اتارنے کے بعد کپڑے ایک سائیڈ پر پھینکے اور دوبارہ سائرہ کے قریب ہوکر بیٹھ گیا اور اسکو اپنا لن پکڑنے کے لیے کہا۔ سائرہ کی نظر جب اسکے تگڑے لن پر پڑی تو اسکی بھی آنکھیں خوف کے مارے کھلی کی کھلی رہ گئیں۔ وہ جان گئی تھی کہ اب اسکا جان بچانا ممکن نہیں آج اسکی کنواری پھدی کی چدائی ہوکر ہی رہے گی۔ اور اتنا موٹا اور تگڑا لن دیکھ کر اسکی پھدی اور گانڈ ویسے ہی پھٹ گئی تھیں۔ جب ماجد نے اسکو اپنا لن پکڑے کو کہا تو سائرہ نے انکار کر دیا اور اپنا ہاتھ پیچھے کھینچ لیا مگر ماجد خان نے اسکو گالی دی اور بولا اگر ہاتھ میں نہیں پکڑے گی تویہیں تیرے منہ میں ڈال دوں گا چپ کر کے اسکو اپنے ہاتھ میں پکڑ کر پیار کر۔ منہ میں ڈالنے کی دھمکی کام کر گئی اور سائرہ نے فورا ہی ماجد کا 9 انچ لمبا لن اپنے ہاتھ میں پکڑ لیا۔ اور بغیر کچھ کہے اسکی مٹھ مارنی شروع کر دی۔ یہ دیکھ کر پہلے والا شخص بھی تیار ہوگیا اور اسنے سائرہ کے دوسرے ہاتھ میں اپنا لن پکڑا دیا، اب کی بار سائرہ نے اسکا لن بھی اپنے ہاتھ میں پکڑ لیا اور ان دونوں کی مٹھ مارنے لگی۔ مگر ابھی بھی اسکی آنکھوں سے آنسو جاری تھی اور وہ کسی بھی طرح اس صورتحال سے خوش نہیں تھی۔

دونوں کے لمبے لن دیکھ کر تیسرے شخص سے بھی رہا نہیں گیا اور اس نے بھی اپنا لوڑا اپنے کپڑوں کی قید سے آزاد کروا لیا۔ اسکا لن بھی لمبا تھا مگر پہلے دونوں کا لن اسکے لن سے بڑا تھا۔ اب اس تیسرے شخص نے اپنے لن کی اپنے ہی ہاتھ سے کچھ دیر مٹھ ماری اور اسکے بعد سائرہ کی ٹانگیں کھول کر اسکے درمیان گھٹنوں کی مدد سے بیٹھ گیا اور اپنا چہرہ سائرہ کی نرم و نازک پھدی کے اوپر رکھ دیا جو ابھی تک خشک پڑی تھی۔ اس شخص نے سائرہ کی چوت کی لائن میں اپنی زبان پھیرنا شروع کر دی۔ زبان کا مزہ ملتے ہی سائرہ نے اپنی ٹانگوں کو آپس میں ملا کر اپنی پھدی کو چھپانا چاہا مگر وہ ایسا نہ کر سکی کیونکہ درمیان میں وہ شخص خود بیٹھا تھا جو اپنی زبان سے سائرہ کی چوت کو چاٹنے میں مصروف تھا۔ اسکی زبان نے سائرہ کی چوت میں جادو جگانا شروع کر دیا تھا۔ اب سائرہ کی چیخیں ختم ہو چکی تھیں اور اسکے آنسو بھی تھم گئے تھے مگر اسنے اپنی آنکھیں بند کی ہوئی تھی اور اسکے چہرے پر کسی بھی قسم کے تاثرات نہیں تھے۔ وہ کسی بھی طور پر اپنے آپ کو ان تین غنڈوں کے حوالے کرنے پر تیار نہیں تھی۔ مگر اسکے ہاتھ ابھی تک ماجد خان اور پہلے شخص کے لن کی مٹھ مارنے میں مصروف تھے۔

اب کی بار ماجد خان نے اپنا لن اسکے ہاتھ سے چھڑوایا اور اسکے منہ کے قریب کیا اور سائرہ کو حکم دیا کہ اب اسکا لن اپنے منہ میں لیکر چاٹے مگر سائرہ نے انکار کر دیا۔ جس پر ماجد خان نے اپنا لن اسکے ہونٹوں کے ساتھ لگا دیا اور اسکے ہونٹوں پر رگڑنے لگا۔ سائرہ نے اپنے دونوں ہونٹ زور سے بھینچ لیے اور اپنا منہ ادھر ادھر مارنے لگی اور دوسرا لن بھی اپنے ہاتھ سے چھوڑ دیا۔

ماجد خان مسلسل اپنا 9 انچ لمبا لن سائرہ کے ہونٹوں پر رگڑ رہا تھا۔ اسکے لن کی ٹوپی پر مذی کے 2 قطرے بھی تھے جو اسنے سائرہ کے گلابی ہونٹوں پر مسل دیے۔ پہلا شخص سائرہ کے مموں پر جھکا اور اسکے چھوٹے مگر سخت گلابی نپل کو اپنے منہ میں لیکر زور سے چوس ڈالا۔ اس نے کچھ ایسے زور سے سائرہ کے نپل کو چوسا تھا کہ سائرہ کی ایک سسکی نکلی اور اسنے اپنا منہ کھول دیا۔ جیسے ہی سائرہ نے اپنا منہ کھولا ماجد خان نے موقع کا فائدہ اٹھاتے ہوئے اپنا لن سائرہ کے منہ میں ڈال دیا۔ سائرہ نے فورا ہی دوبارہ سے اپنا منہ زور سے بند کیا تو اسکے دانت ماجد کے لن پر لگے جس سے ماجد کی بھی ایک چیخ نکلی اور اس نے سائرہ کو ایک بڑی سی گالی دی اور اسکے منہ پر تھپڑ مارا۔ مگر اسنے اپنا لن سائرہ کے منہ سے نہیں نکالا اور اپنے ہاتھ سے اسکا منہ سائڈوں سے پکڑ لیا جیسے کسی بچے کو دوائی پلاتے ہوئے ماں بچے کا منہ پکڑ کر کھولتی ہے۔ اس طرح منہ کھول کر ماجد نے اپنا لن مزید اندر گھسا دیا اور سائرہ کا منہ اب ماجد کے لن کو چوس رہا تھا۔

ماجد خان اپنا لن مسلسل سائرہ کے منہ میں اندر باہر کر رہا تھا جسکی وجہ سے سائرہ کا منہ تھوک سے بھر چکا تھا۔ یہ تھوک سائرہ نے باہر پھینکا اور ایک بار پھر سائرہ کے منہ میں ماجد خان کا لن چدائی کرنے میں مصروف ہوگیا۔ نیچے سائرہ کی چوت پر مسلسل تیسرے غنڈے کی زبان اپنا جادو دکھا رہی تھی۔ لیکن ابھی تک سائرہ کی چوت کو گیلا کرنے میں ناکام رہی تھی۔ اسکا مطلب تھا کہ سائرہ نے ابھی تک مزہ لینا شروع نہیں کیا تھا بلکہ اسکو ابھی تک اپنے اس گینگ ریپ کی فکر تھی۔ دوسرا غنڈہ سائرہ کے سخت نپلز کو چوسنے میں مصروف تھا اور دوسرا مما اپنے ہاتھ سے پکڑ کر دبا رہا تھا۔

لیکن اب سائرہ کے لیے مزید ممکن نہیں تھا کہ وہ کوئی مزاحمت کر سکتی کیونکہ اسکی چوت پر مسلسل ایک زبان رگڑائی کر رہی تھی اور اسکا ایک نپل بھی مسلسل چوسا جا رہا تھا۔ آخر کا سائرہ نے ان کے سامنے ہار مان لی اور اب اسکی چوت پر پانی واضح ہونے لگا۔ یہ چکنا پانی سائرہ کی چوت کو گیلا کر رہا تھا جسکا مطلب تھا کہ اب اسکی چوت لن مانگ رہی ہے۔ اب ماجد خان نے سائرہ کو اٹھ کر بیٹھنے کو کہا تو وہ چپ چاپ اٹھ کر بیٹھ گئی ، ماجد خان نے اسکو گھٹنوں کے بل بیٹھنے کو کہا تو وہ گھٹنے بیڈ پر لگا کر اونچی ہوکر بیٹھ گئی اور ماجد خان نے اسکے سامنے اپنا لن کیا تو اس نے خود ہی اسکا لن اپنے ہاتھ میں پکڑ کر اپنے منہ میں ڈال لیا اور اسکو چوسنا شروع کر دیا۔ دوسرے غنڈے نے بھی اپنا لن سائرہ کو پکڑایا تو سائرہ نے اسکا لن پکڑ کر اسکی بھی مٹھ مارنی شروع کر دی جبکہ تیسرا غنڈہ نیچے لیٹ گیا اور اپنا چہرہ سائرہ کے گھٹنوں کے درمیان رکھ دیا پھر اسنے سائرہ کو چوتڑوں سے پکڑا اور تھوڑا نیچے کیا تو سائرہ نے اپنی چوت اسکے منہ کے اوپر رکھ دیا جس پر نیچے سے زبان چلنا شروع ہوگئی۔

مجھے یہ سارا سین بہت سیکسی لگ رہا تھا اور میرا اپنا دل کر رہا تھا کہ میں بھی انکو جوائن کر لوں مگر اس وقت یہ کسی بھی طور پر ممکن نہیں تھا۔ میں نے چہرے پر ماسک چڑھا رکھا تھا اور باقی تین غنڈوں کے چہرے پر بھی ماسک تھا۔ انکی صرف آنکھوں کی جگہ سے اور منہ سے ماسک میں گیپ تھا باقی پورا چہرہ ماسک نے چھپا رکھا تھا۔ سائرہ اپنی چوت ایک غنڈے کے چہرے پر رکھ کر بیٹھی تھی اور اسکے ہاتھ میں 2 لمبے اور تگڑے لن تھے جنکو وہ باری باری چوسنے میں مصروف تھی۔ کچھ دیر ااپنا لن چوسوانے کے بعد ماجد خان نے اپنا ہاتھ سائرہ کی چوت پر رکھ کر وہاں موجود چکناہٹ کو اپنی انگلی پر لگا کر اپنے منہ میں لے لیا۔

سائرہ کی چوت کی چکناہٹ نے ماجد خان کو بتا دیا کہ اب یہ لن لینے کے لیے تیار ہے۔ ماجد خان نے سائرہ کو اب بیڈ پر لٹا دیا اور خود اسکی ٹانگوں کو اٹھا کر اپنے بازوں پر رکھا اور ٹانگیں کھول کر بیچ میں چوت کے قریب ہوکر بیٹھ گیا۔ باقی دونوں سمیرا کے پاس بیٹھے تھے سمیرا نے دونوں کے لوڑے اپنے ہاتھ میں پکڑے ہوئے تھے اور انکی مٹھ مار رہی تھی۔ مگر جیسے ہی اسکی نظر اپنی ٹانگوں کے درمیان پڑی جہاں ماجد خان اپنا 9 انچ کا لوڑا تیار کیے بیٹھا تھا اور سائرہ کی نازک اور کنواری پھدی کو پھاڑنے والا تھا تو سمیرا کی آنکھوں میں ایک دم خوف کے آثار نظر آنے لگے اور وہ مٹھ مارنا بھول گئی۔ سائرہ نے اپنی جگہ سے اٹھنے کی کوشش بھی کی مگر ماجد خان نے اپنے مضبوط بازوں سے اسکی ٹانگوں کو اپنی طرف کھینچ کر اسے اور بھی قریب کر لیا، اب ماجد کے لن کا ٹوپا سائرہ کی چوت کے ساتھ تث ہونے لگا تھا۔

جیسے ہی لن کا ٹوپا سائرہ کی چوت کے ساتھ لگا تو اسنے ایک بار پھر چلانا شروع کر دیا اور ماجد کی منتیں کرنےلگی کہ پلیز مجھے چھوڑ دو میں نے تمہارا کیا بگاڑا ہے۔ اسکی یہ بات سن کر میں نے دل ہی دل میں اسے جواب دیا کہ تم نے اپنے بھائی کی خوشی کے لیے ایک لڑکی کی ویڈیو بنا کر اسکو بلیک میل کرنے میں مدد کی ہے لہذا اب اسکی سزا بھگتو۔ ابھی میں یہ سوچ ہی رہی تھی کہ سائرہ کی ایک زور دار چیخ سنائی دی۔ میں اپنے خیالوں سے باہر نکلی تو سائرہ کا چہرہ آنسووں سے تر تھا اور اس پر تکلیف کے آثار نمایاں تھے۔ پھرمیں نے سائرہ کی چوت کی طرف دیکھا تو ماجد کے لن کا ٹوپا سائرہ کی چوت میں غائب ہو چکا تھا۔ ماجد نے ایک بار لن باہر نکالا اور اپنا ٹوپا سائرہ کی چوت پر رکھ کر ایک دھکا اور مارا تو سائرہ نے پورا گلا پھاڑ کر چیخ ماری۔ اسکی چوت پھٹ چکی تھی۔ اور جب ماجد نے دوبارہ لن باہر نکالا تو اس پر سرخی واضح تھی۔ سائرہ کی چوت کا خون ماجد کے لن پر لگا ہوا تھا اور تھوڑا سا خون نکل کر بیڈ پر بھی لگا۔ مگر ماجد رکا نہیں اور اس نے ایک دھکا اور مارا اور اپنے لن کا 7 انچ تک حصہ سائرہ کی چوت میں اتار دیا۔ سائرہ بری طرح تڑپ رہی تھی اور رحم کی بھیک مانگ رہی تھی مگر ماجد خان نے اس پر بالکل بھی ترس نہیں کھایا۔

کچھ دیر انتظار کرنے کے بعد ماجد خان نے ایک بار پھر لن باہر نکالا اور ایک اور جاندار دھکا لگایا جس سے اسکا 9 انچ کا لاوڑا سائرہ کی چوت میں گم ہوگیا۔ ماجد اپنا لن جڑ تک سائرہ کی چوت میں اتار چکا تھا اور اب ماجد کے ٹٹے سائرہ کی چوت کے نچلے حصے سے ٹکرا رہے تھے درد کی شدت سے سائرہ کی چیخیں بھی بند ہوگئیں تھیں اور اسکی آنکھیں پھٹی ہوئی تھیں۔ درد کی شدت اتنی تھی کہ وہ چیخیں بھی نہیں مار پا رہی تھی اور ماجد خان نے اپنے لوڑے سے سائرہ کی چوت میں کھدائی شروع کر دی تھی، ماجد خان کے ہر دھکے پر سائرہ کا پورا جسم ہل جاتا مگر وہ کسی لاش کی طرح پڑی اپنی چدائی کروا رہی تھی۔ اس میں نہ تو چخیں مارنے کی ہمت تھی اور نہ ہی اسکی سسکیاں نکل رہی تھی، آنکھوں سے آنسو مسلسل جاری تھی اور ماجد خان کے دھکے نان سٹاپ مشین کی طرح چل رہے تھے۔

میرا کیمرا کبھی سمیرا کے چہرے کو اور کبھی اسکی چوت میں جاتے ماجد کے لن کی ویڈیو بنا رہا تھا۔ 5 منٹ کی چودائی کے بعد جب ماجد کا لن باہر نکلا تو اس پر کافی چکناہٹ موجود تھی۔ سائرہ کی چوت نے پانی چھوڑ دیا تھا مگر ماجد خان کے لوڑے کی سختی کی وجہ سے اسکے چہرے پر مزے کے آثار بالکل بھی نہیں تھے بلکہ ابھی تک وہ کسی زندہ لاش کی طرح بستر پر پڑی تھی اور ماجد کے دھکوں سے اسکا جسم اوپر نیچے ہل رہا تھا۔

ماجد نے جب اپنے لن پر سائرہ کی چوت کا پانی دیکھا تو بہت خوش ہوا اور اسکو گالی دیتا ہوا بولا تیری چوت نے تو خوب مزہ لیا ہے میرے لوڑے کا اب تو بھی مزے لے ۔ یہ کہ کر اس نے اپنا لوڑا بستر سے صاف کیا اور دوسرے شخص کو چدائی کی دعوت دی۔ وہ تہ پہلے ہی اس انتظار میں تھا کہ کب اسے کنواری چوت جہ محض 5 منٹ پہلے ہی پھٹی تھی چودنے کا موقع ملے۔ دوسرا شخص فورا سمیرا کی ٹانگوں کے درمیان میں آکر بیٹھ گیا، اس نے ایک ٹانگ اٹھا کر اپنے کندھے پر رکھی اور دوسری ٹانگ اٹھا کر اپنے بازو پر رکھی۔ اپنے لن کی ٹوپی سائرہ کی چوت کے سوراخ پر رکھ کر آہستہ سے دباو ڈالا تو چوت کی چکنائی کی وجہ سے لن خود بخود پھسلتا ہوا سائرہ کی چوت میں غائب ہوگیا۔ اس شخص کا لن ماجد خان کے لن جیسا نہیں تھا اس لیے سائرہ کو زیادہ تکلیف نہیں ہوئی۔

اس نے بھی سائرہ کی چدائی شروع کی اور مسلسل 5 منٹ سائرہ کی چوت مارتا رہا ، اب سائرہ کی سسکیاں نکلنا شروع ہوگئیں تھی۔ اسکو شاید مزہ آنے لگا تھا چدائی کا۔ 5 منٹ کی چدائی کے بعد اس شخص نے اپنے دھکے تیز کر دیے اور سائرہ کی بھی آوچ چ چ چ آوچ، ، اف، ، ام ، ام ، ام آہ، آہ ، اف آوچ کی آوازیں نکل رہی تھیں ساتھ ہی سائرہ اپنی گانڈ ہلا ہلا کر اسکی چدائی کا ساتھ دے رہی تھی۔ 2 منٹ کی مزید چدائی کے بعد سائرہ کی چوت نے پانی کا فوارہ چھوڑ دیا اور ساتھ ہی دوسرا شخص بھی سائرہ کی چوت کے اندر ہی پچکاریاں مارنے لگا۔

اب سائرہ کے چہرے پر تھوڑا سکون تھا اور اس نے اپنی چدائی کا بھرپور مزہ لیا تھا۔ دوسرے شخص کے فارغ ہونے کے بعد وہ بھی اپنا لن بستر سے صاف کر کے ایک سائیڈ پر لیٹ گیا اور تیسرا شخص اپنا لوڑا ہاتھ میں پکڑے سائرہ کی ٹانگوں کے درمیان آگیا۔ اسکا لوڑا 8 انچ لمبا تھا جو یقیننا سائرہ کو تکلیف دے سکتا تھا۔ ماجد خان نے اپنا لوڑا اب سائرہ کے منہ میں ڈال دیا تھا جسکو سائرہ بہت مزے سے چوپے لگا رہی تھی۔ تیسرے شخص نے بھی سائرہ کی ٹانگوں کے درمیان میں آکر اسکی ٹانگیں اٹھا لیں اور اپنا لوڑا سائرہ کی چوت کے سوراخ پر رکھا تو ایک زور دار دھکا لگایا اور اپنا آدھے سے زیادہ لن سائرہ کی چوت میں اتار دیا۔ سائرہ نے ایک بار پھر چیخ ماری مگر اس نے پرواہ نہیں کی اور ساتھ ہی دوسرا دھکا مار کر اپنا پورا لوڑا سائرہ کی چوت میں اتار دیا۔ سائرہ کچھ دیر کو رکی اور اوپر اٹھ کر اپنی چوت کی طرف دیکھنے لگی جس میں 8 انچح کا لوڑا اپنی پوری سپیڈ کے ساتھ چودائی کرنے میں مصروف تھا پھر سائرہ نے دوبارہ سے اپنا سر نیچے تکیے پر رکھ دیا اور ماجد کا لوڑا چوسنے لگی۔

اس شخص نے بھی 5 منٹ تک جم کر دھکے مارے سائرہ کی چوت میں اور اسکے بعد سائرہ کواٹھ کر بیٹھنے کو کہا۔ سائرہ نے ماجد کا لن منہ سے نکالا اور اٹھ کر بیٹھ گئی۔ اس شخص نے سائرہ کو کہا کہ وہ بیڈ کی ٹیک کے ساتھ اپنے بازو رکھے اور اپنی گانڈ باہر کی طرف نکالو۔ سائرہ نے اپنے بازو بیڈ کی بیک سائیڈ پر رکھ دیے اور گھٹنوں کے بل بیٹھ گئی، اسکی گانڈ ہوا میں تھی اور باہر کی طرف نکالی ہوئی تھی۔ وہ شخص پیچھے سے آیا اور اسکے چوتڑوں پر 2 تھپڑ مارے اور اسکے بعد اپنا لوڑا سائرہ کی چوت میں کے سوراخ پر رکھ کر ایک زور دار دھکا مارا اور پورا لن سائرہ کی چوت میں اتار دیا۔ سائرہ کے منہ سے اب سسکیاں نکل رہی تھیں اور وہ اس چدائی کو انجوائے کر رہی تھی۔ آہ، اف، اف ، آہ آہ آہ ، ہمممم، اس طرح کی آوازوں سے سائرہ کی چدائی جاری تھی۔

اس پوزیشن میں چودائی کے دوران جب سائرہ کے چوتڑ اس شخص کے پیٹ کے ساتھ ٹکراتے تو کمرے میں دھپ دھپ کی آوازیں آتیں۔ جن سے کمرے کا ماحول اور سیکسی بن رہا تھا۔ سائرہ اب بالکل نارمل ہوکر اپنی چدائی کروا رہی تھی۔ کبھی کبھی وہ میری طرف بھی دیکھتی تھی مگر وہ مجھے پہچان نہیں پائی کیونکہ میں مردانہ لباس میں تھی اور اسکے ذہن میں یہی ہوگا کہ میں صرف ویڈیو بنانے کے لیے یہاں موجود ہوں۔

اچانک پیچھے سے چودنے والے شخص نے اپنے دھکوں میں بلا کا اضافہ کر دیا اور سائرہ کی چیخوں میں بھی اضافہ ہونے لگا۔ کچھ مزید دھکے لگانے کے بعد سائرہ کے جسم نے جھٹکے کھائے اور ساتھ ہی اس شخص کے جسم کو بھی جھٹکے لگے اور اس نے اپنی منی سائرہ کی چوت میں نکال دی۔

سائرہ کو چودنے کے بعد یہ شخص بھی سائیڈ پر ہوگیا اوگ گہرے گہرے سانس لینے لگا۔ کچھ دیر بعد اسکی سانسیں بحال ہوئیں تو وہ ماجد سے بولا استاد اس لڑکی کی چوت تو بہت ہی ٹائٹ ہے۔ مزہ آگیا اسکو چود کر تو۔ اس پر ماجد بولا دعائیں دے اپنے استاد کو جس نے تجھے اتنی چکنی چوت دلائی۔ ابھی وہ یہ بات کر ہی رہا تھا کہ سائرہ نے ماجد کو مخاطب کر کے پوچھا کہ فائزہ کہاں ہے؟؟؟ اپنا نام سن کر میں ایک دم چونک گئی۔۔۔ اور ماجد خان بھی ایک دم چپ ہوگیا۔ مگر پھر اس نے پوچھا کون فائزہ؟؟؟ تو سائرہ نے کہا وہ دوسری لڑکی جسکو تم نے میرے ساتھ ہی اغوا کیا تھا۔ تو اسکی بات سن کر ماجد بولا کہ دوسری لڑکی کو اسکا دوست اپنی گاڑی میں لے گیا وہ ادھر اپنے دوستوں کے ساتھ مل کر اسکی چدائی کر رہا ہوگا۔ یہ سن کر سائرہ کے چہرے پر فکر کے آثار نظر آئے۔ وہ میرے لیے فکر مند تھی۔ مجھے پہلے پہل تو اس پر ترس آیا مگر پھر سوچا کہ اس نے بھی میرے ساتھ کچھ اچھا سلوک تو نہیں کیا جو میں اس پر ترس کھاوں۔

اب کی بار ماجد خان نے سائرہ کو گھوڑی بننے کے لیے کہا تو سائرہ چپ چاپ گھوڑی بن گئی۔ ماجد خان پیچھے سے آیا اور اسکی چوت پر ہاتھ رکھ کر اسکی چکناہٹ کو چیک کیا۔ وہ ابھی تک چکنی تھی۔ پھر ماجد نے اپنے لن کا ٹوپا سائرہ کی چوت پر رکھا اور ایک ہی دھکے میں آدھا لن اندر گھسا دیا۔ گھوڑی بن کر چدائی کرواتے ہوئے چوت تھوڑی ٹائٹ ہوجاتی ہے۔ یہی وجہ تھی کہ سائرہ نے ایک بار پھر دلخراش چیخ ماری جس سے پورا کمرہ گونچ اٹھا مگر ظالم ماجد نے ساتھ ہی ایک اور دھکا مارا اور پورا لن سائرہ کی چوت میں گھسا دیا۔ پھر ماجد نے سائرہ کو اسکے چوتڑوں سے پکڑ لیا اور نان سٹاپ دھکے لگانا شروع کر دیے۔

جیسے جیسے ماجد خان دھکے لگاتا ویسے ویسے سائرہ کی اف، آوچ چ چ چ چ اف، اف آہ، ہ ہ ہ ہ ہ ہ آہ ہ ہ ہ آوچ آوچ کی آوازیں آتیں اور ساتھ ہی ساتھ دھپ دھپ کی آوازیں بھی ارہی تھیں جو سائرہ کے چوتڑ اور ماجد کے پیٹ کے ملاپ پر نکلتی تھی۔ 5 منٹ کی چدائی کے بعد سائرہ کی چوت نے ایک بار پھر ہار مان لی اور پانی چھوڑ دیا۔ مگر ماجد کا لن ابھی بھی پوری سختی کے ساتھ کھڑا تھا۔

اب کی بار ماجد نے سائرہ کو اپنی گود میں بٹھا لیا اور لوڑا اسکی چوت میں ڈال کر خود اپنی ایڑیوں کے بل بیٹھ گیا۔ سائرہ نے ٹانگیں ماجد کے جسم کے گرد لپیٹ لیں اور ماجد نے تھوڑا سا اوپر اٹھ کر نان سٹاپ دھکے لگانے شروع کیے تو سائرہ کی چوت کے پرخچے اڑ گئے۔ ماجد کا لن ٹوپے تک باہر آتا اور پھر سپیڈ کے ساتھ اپنی جڑ تک سائرہ کی چوت میں گم ہوجاتا۔ سائرہ نے اپنے دونوں ہاتھ ماجد کی گردن کے گرد لپیٹے ہوئے تھے اور اسکی چیخیں اور سسکیاں ساتھ ساتھ جاری تھیں جب کے دھپ دھپ کی آوازیں کمرے کے ماحول کو اور بھی سیکسی بنا رہی تھی۔
اب کی بار ماجد خان کے دھکے طوفانی تھے مگر اس بار سائرہ بھی اسکا پورا پورا مقابلہ کر رہی تھی۔ اب اسکی چوت ماجد کے لن کے موٹائی کے برابر کھلی ہو چکی تھی اور اس نے اپنی چوت سے ماجد کے لن کو جکڑ رکھا تھا سائرہ کے چہرے پر مزے کے آثار واضح تھے اور وہ ماجد کے لن کو پوری طرح انجوائے کر رہی تھی۔ بالآخر 5 منٹ کے مزید دھکوں کے بعد سائرہ کی چوت اور ماجد کے لن نے اکٹھے ہی الٹی کر دی اور اپنا اپنا پانی باہر نکال دیا۔ اسکے بعد سائرے بستر پر ڈھے گئی اور لمبے لمبے سانس لینے لگی۔

ابھی سائرہ اپنے سانس بحال کر رہی تھی کہ ان میں سے ایک شخص نے دوبارہ سے سائرہ کے منہ پر ایک رومال رکھا اور سائرہ تھوڑی دیر ٹانگیں مارنے کے بعد بے ہوش ہوگئی۔ اسکے بے ہوش ہوتے ہی میں نے بھی اپنے چہرے سے ماسک اتارا اور سکھ کا سانس لیا۔ ماجد خان کے دونوں غنڈے اپنے کپڑے پہن چکے تھے انکو ماجد نے حکم دیا کہ لڑکی کو پرانی گاڑی میں ڈال کر گاڑی کینٹ کے کسی بھی چوک میں کھڑی کر آو۔ اس سے پہلے کہ وہ سائرہ کو اٹھاتے میں نے اسکے جسم کو اچھی طرح چادر سے ڈھانپ دیا اور انکو سائرہ کے گھر کا ایڈریس سمجھایا اور کہا اسکو گھر کے آس پاس ہی چھوڑ آو اور کسی پبلک کال آفس سے اسکے گھر فون کر کے بتا دینا۔

یہ کرنے کا مقصد صرف اتنا تھا کہ اسکی زیادہ بدنامی نہ ہو اور یہ بات باہر کسی کو پتہ نہ لگے۔ ماجد خان نے اپنے بندوں کو کہا کہ جیسے فائزہ نے کہا ویسا ہی کرو۔ یہ سن کر ان میں سے ایک نے سائرہ کو اٹھایا اور دوسرا اسکے ساتھ ساتھ چل پڑا۔ ماجد خان ابھی تک ننگا بیٹھا تھا اور اسکا لوڑا اب بالکل چھوٹا ہو چکا تھا۔ کسی بوٹی کی طرح۔ مں نے کمرہ ایک سائیڈ پر رکھا اور اپنے مردانہ کپڑے اور بوٹ اتار دیے۔ اسکے بعد میں فورا جمپ لگا کر ماجد خان کے لن کے قریب پہنچ گئی اور اسکا لوڑا اپنے منہ میں لے لیا۔ ماجد خان اس اچانک حملے پر حیران بھی ہوا اور خوش بھی کیونکہ وہ مجھے چودنا تو چاہتا ہی تھا مگر میں نے اسکو کہا تھا کہ مجھے بھول جائے البتہ اسکی جگہ اسے ایک اچھی چوت دلواوں گی۔ جو میں نے سائرہ کی دلوا دی۔ اب اسکو امید نہیں تھی کہ اسکو فورا ہی ایک چوت اور مل جائے گی۔ ماجد خان کا لوڑا دیکھ دیکھ کر میں نے ویڈیو بناتے ہوئے بہت مششکل سے اپنے اوپر کنٹرول کرا تھا۔ ایک بار تو میری چوت نے پانی بھی چھوڑ دیا تھا۔

ایسے زبردست لوڑے سے چدائی کروانے کا موقع میں ضائع نہیں جانے دینا چاہتی تھی۔ سائرہ کے چلے جانے کے بعد میں نے محض 5 منٹ کے چوپوں سے ماجد خان کے لوڑے کو پہلے کی طرح لوہے کا راڈ بنا دیا اور اس پر سواری شروع کر دی۔ ماجد کے لن نے میری بھی بس کروا دی تھی حالانکہ میں پہلے بھی ندیم کا 9 انچ کا لن اپنی چوت میں لے چکی تھی مگر ماجد کے لن کی بات ہی کچھ اور تھی۔ ایک تو اسکے ٹوپے کا سائز بڑا تھا دوسرا اسکی موٹائی بھی زیادہ تھی اور پولیس والا ہونے کی وجہ سے اسکا جسم بھی ورزشی تھا۔ اسکے نان سٹاپ دھکوں نے میری چوت سے 3 بار پانی نکلوا دیا۔

اسکے بعد میں اپنے گھر چلی گئی اور جاتے ہی بستر پر لیٹ کر سونے کی ایکٹنگ کرنے لگی۔ امی نے پوچھا تو میں نے کہا طبیعت خراب ہے مجھے سونے دیں۔ آج سائرہ کی کنواری چوت کا گینگ ریپ کروا کر مجھے دلی سکون ملا تھا۔ اور میرا بدلہ پورا ہوگیا تھا۔ ساتھ ہی ساتھ سونے پر سہاگہ ماجد خان کے لن سے چدائی کا موقع بھی مل گیا۔ اسکے لن کو میں کبھی نہیں بھول سکتی۔ بستر پر لیٹی میں سائرہ کے بارے میں ہی سوچ رہی تھی کہ میرے موبائل پر بیل بجی۔ میں نے موبائل اٹھا کر دیکھا تو یہ سائرہ کی ہی کال تھی ۔ ٹائم دیکھا تو رات کے 2 بج رہے تھے۔ میں سمجھ گئی کہ اب سائرہ ہوش میں آئی ہوگی اور اس نے فورا ہی مجھے کال کی۔ میں نے اسکی کال اٹینڈ نہیں کی۔ اسکی ایک بار پھر کال آئی میں نے پھر اٹینڈ نہیں کی۔ پھر تیسری بار دوبارہ اسکی کال آئی تو میں نے اٹینڈ کی۔

میں نے اپنی آواز میں نقاہت پیدا کی اور روہانسی آواز نکال کر ہیلو کہا اور ساتھ ہی رو پڑی۔ آگے سے سائرہ کی بھی رونے کی آواز آئی اور اس نے مجھے سے پوچھا کہ تم گھر پہنچ گئی ہو؟؟؟ تو میں نے اسے بتایا کہ ہاں مجھے نہیں پتا کہ میں کب اور کیسے گھر پہنچی بس پہنچ گئی ہوں۔ سائرہ نے بتایا کہ وہ ہسپتال میں ہے اور ساتھ اسکے امی ابو بھی ہیں۔ جو شاید اس وقت سو چکے تھے۔ اس نے روتے ہوئے بتایا کہ 3 غنڈوں نے اسکا زبردستی ریپ کیا ہے اور ریپ کرنے کے بعد بے ہوشی کی حالت میں ایک پرانی سی گاڑی میں ڈال کر چھوڑ گئے ہیں۔

میں نے بھی اسی طرح کی سٹوری گھڑ کر اسکو سنا دی اور یہ شو کروایا کہ میرے سے بات نہیں ہو پار ہی۔ تھوڑی دیر کے بعد میں نے خود ہی فون بند کر دیا۔ اسکے بعد دوبارہ بھی سمیرا کی کال آئی مگر میں نے اٹینڈ نہیں کی۔ وہ یہ سمجھ رہی تھی کہ شاید فائزہ کا بھی ریپ ہوا ہے اس لیے وہ صدمے میں ہے اور اس سے بات نہیں ہو پارہی ۔

کچھ دن اسی طرح گزر گئے میں گھر سے باہر نہیں نکلی۔ جس کیمرے سے ویڈیو بنائی تھی وہ میرے پاس ہی تھا میں نے اس کی ویڈیو دیکھی اور اسکو کسی حد تک ایڈیٹ کر لیا جس سے ماجد خان اور اسکے لوگوں کے پہچانے جانے کا بالکل بھی احتمال نہ ہو محض چند جگہوں پر سائرہ کا چہرہ دکھایا باقی کی ویڈیو اسکی چیخوں اور اسکی چدائی کی ہی تھی جسمیں لن اسکی چوت کے آر پار ہوتا دکھائی دے رہا تھا۔

یہ ویڈیو ایڈیٹ کر کے میں نے ماجد خان کو بھجوا دی اور 4 دن بعد میں نے سائرہ سے بات کی۔ وہ ابھی تک صدمے کی حالت میں تھی مجھ سے صحیح بات نہ کر سکی مگر اس نے میرے سے معافی مانگی کہ ہمیں اغوا کرنے والے لوگ ابو کے دشمن تھے انہوں نے ابو سے بدلہ لینے کے لیے مجھے اغوا کر کے میرا ریپ کرنا تھا مگر ساتھ میں تم بھی تھی اس لیے تمہیں بھی انکے انتقام کا نشانہ بننا پڑا۔ یعنی وہ سمجھ رہی تھی کہ ہم دونوں کے ساتھ ریپ ہوا ہے، اسے نہیں معلوم تھا کہ اسکا ریپ میں نے ہی کروایا ہے اور اسکے وہاں سے جانے کے بعد میں نے ماجد کے لن پر بیٹھ کر خوب مزے کی چودائی کروائی تھی۔

ایک ہفتے بعد میں سائرہ سے ملنے اسکے گھر گئی تو وہ اپنے کمرے میں بند تھی۔ میری ملاقات اسکی امی سے ہوئی تو انہوں نے بتایا کہ وہ جب سے ہسپتال سے واپس آئی ہے اپنے کمرے سے باہر ہی نہیں نکلتی۔ میں نے بھی بہت مسکین سا چہرہ بنا رکھا تھا کیونکہ آنٹی کے ذہن میں بھی یہی بات تھی کہ اس دن صرف انکی بیٹی کا ہی نہیں بلکہ فائزہ یعنی میرا ریپ بھی ہوا ہے۔ انہوں نے میرے سے بھی ہمدردی کی اور پھر مجھے کہا کہ میں سائرہ کو کسی طرح کمرے سے باہر نکالوں۔

میں سائرہ کے کمرے میں گئی تو وہ میرے گلے لگ کر خوب روئی ۔ گو کہ اس نے آخر میں اپنی چدائی کا مزہ لیا تھا مگر بعد میں یہ احساس اسے جینے نہیں دے رہا تھا کہ اسکا گینگ ریپ ہوا ہے۔ جب وہ خوب رو چکی تو وہ بولی کہ فائزہ مجھے معاف کر دو۔ میں نے تمہاری ویڈیو بنا کر اپنے بھائی کو دی تھی جسکو استعمال کر کے اسنے تمہیں بلیک میل کیا تھا اور تمہاری چودائی کی تھی ۔ اسی بات کی مجھے سزا ملی ہے کہ میرا بھی ریپ ہوگیا اور میری بھی کسی نے ویڈیو بنا ڈالی۔ اب وہ میرے بابا کو بلیک میل کر سکتے ہیں اس ویڈیو کے ذریعے۔ میں نے اسے تسلی دی کہ فکر نہ کرو ایسا کچھ نہیں ہوگا مگر وہ بولی کہ نہیں میرے بابا کے بہت دشمن ہیں انکا مقصد یہی ہے۔

ابھی ہم یہ باتیں کر ہی رہے تھے کہ سائرہ کی امی کمرے میں آئیں اور انہوں نے بتایا کہ باہر کوئی سب انسپیکٹر ماجد خان آیا ہے۔ وہ تمہارے ابو کے پاس بیٹھا ہے اور اسکو کسی طرح پتا لگ گیا ہے اس گینگ ریپ کے بارے میں لہذا تم دونوں اندر ہی رہنا اور باہر نہ نکلنا۔ ہم اسکو کسی طرح پیسے دیکر اس معاملے کو دبانے کی کوشش کریں گے۔

یہ کہ کر آنٹی چلی گئیں اور سائرہ کے چہرے پر ہوائیاں اڑنے لگیں۔ وہ بولی دیکھا میں نے کہا تھا نہ۔ یہ انسپیکٹر بھی ابو کو بلیک میل کرنے ہی آیا ہوگا۔ میں نے اسکو تسلی دی اور کہا تم ادھر ہی رہو میں دیکھ کر آتی ہوں۔ سائرہ نے مجھے روکا کہ امی منع کر کے گئی ہیں مگر میں نے سائرہ کو کہا فکر نہیں کرو وہ انسپیکٹر تمہیں جانتا ہوگا مجھے نہیں۔ میں دیکھتی ہوں کیا معاملہ ہے۔

یہ کہ کر میں نیچے ڈرائنگ روم میں چلی گئی جہاں مہمانوں کو بٹھایا جاتا تھا۔ مجھے دیکھ کر ماجد خان اپنی سیٹ سے اٹھ کھڑا ہوا اور بولا تو یہ ہیں آپکی بیٹی۔ اس پر آنٹی بھاگ کر میرے پاس آئیں اور بولیں بیٹا میں نے تمہیں منع کیا تھا ادھر نہیں آنا تو میں نے آنٹی کو کہا آنٹی آپ فکر نہ کریں آپ اوپر جائیں سائرہ کے پاس میں دیکھنا چاہیتی ہوں کہ یہ یہاں کیوں آیا ہے۔ میری بات سن کر آنٹی اوپر چلی گئیں جبکہ سائرہ کے ابو اور وہ سب انسپیکٹر وہیں بیٹھا رہا۔

مجھے سائرہ کے ابو نے بھی کہا کہ بیٹا آپ اوپر سائرہ کے پاس جاو میں ان سے بات کر لوں گا۔ مگر میں نہ مانی اور وہیں بیٹھ گئی۔ میں نے ماجد خان سے پوچھا کہ آپ یہاں کیوں آئے ہیں۔ تو اس نے کہا کہ پہلے آپ اپنا تعارف کروائیں۔ تو میں نے کہا میں انکی بیٹی سائرہ کی دوست ہوں اور اس سے ملنے انکے گھر آئی ہوں۔ میری بات سن کر ماجد خان نے کہا کیا آپکو معلوم ہے کہ پچھلے کچھ دنوں کے دوران آپکی دوست سائرہ کے ساتھ کوئی حادثہ پیش آیا ہے؟؟؟

میں نے کہا نہیں ایسا کچھ نہیں ہوا وہ بالکل ٹھیک ہے۔ اور میرے ساتھ ہی ہوتی ہے وہ۔ سائرہ کے ابو نے بھی کہا کہ ہاں اسکو کوئی حادثہ پیش نہیں آیا آپکو کوئی غلط فہمی ہوئی ہے۔ اس پر ماجد خان نے کہا آپ پولیس سے کچھ چھپائیں گے تو یہ بھی جرم ہوگا۔ بہتر ہے میرے ساتھ تعاون کریں اور اصل حقیقت مجھے بتائیں کہ آپکو کیا معلوم ہے۔ سائرہ کے ابو نے بھی اسکو کرخت لہجے میں بولا کہ ایسا کوئی مسئلہ نہیں ہے آپ نے بلاوجہ زحمت کی ہے آنے کی ہم سب بالکل ٹھیک ہیں۔ آپ برائے مہربانی یہاں سے جائیں۔

اس پر ماجد خان نے پرسکون لہجے میں کہا کہ 3 دن پہلے اسکو بہالپور روڈ سے ایک چوری شدہ گاڑی ملی ہے۔ اس گاڑی میں ایک لڑکی کے پھٹے ہوئے کپڑَ موجود تھے اور ایک بیگ موجود تھا۔ اس بیگ میں آپکا کارڈ تھا جسکا مطلب ہے کہ وہ لڑکی آپکو جانتی ہے۔ اور ساتھ ہی ایک لاش بھی ملی ہے ۔ جو کسی نامی گرامی غنڈے کی ہے۔ اس لاش کے کپڑوں میں سے ایک موبائل ملا ہے جس میں ایک لڑکی کے ریپ کی ویڈیو موجود ہے۔ ریپ کرنے والے 3 لوگ تھے اور لڑکی کا چہرہ بہت واضح طور پر اس ویڈیو میں دیکھا جا سکتا ہے۔ لہذا آپ پولیس کے ساتھ تعاون کریں تاکہ ہم مجرموں تک پہنچ سکیں۔

ویڈیو کا سن کر میں نے بھی حیران ہونے کی ایکٹنگ کی اور سائرہ کے ابو بھی حیران ہوگئے۔ میں نے ہکلاتی ہوئی آواز میں کہا کہ وہ لڑکی سائرہ نہیں کوئی اور ہوگی۔ آپ جائیں پلیز یہاں سے، مگر ماجد خان نے موبائل میرے سامنے کیا اور ایک ویڈیو آن کر دی جو کہ سائرہ کی چدائی کی تھی اور میں نے ہی بنائی تھی۔ اسکو دیکھتے ہی میں نے اسکو بند کرنے کا کہا اور سائرہ کے ابو کے کندھے پر سر رکھ کر رونے لگی۔ وہ بھی سمجھ گئے تھے کہ یہ ویڈیو سائرہ کی ہی ہے اور اب بدنامی سے بچنے کا کوئی راستہ انہیں سجھائی نہیں دے رہا تھا۔ انہوں نے مجھے بھی دلاسہ دیا اور کپکپاتی ہوئی آواز میں سب انسپیکٹر ماجد خان کو بولے کہ دیکھو میاں ہم پہلے ہی بہت پریشان ہیں ہم اس معاملے کی تحقیقات نہیں کروانا چاہتے۔ اگر ہم نے کوئی رپورٹ درج کروائی تو میری بہت بدنامی ہوگی بات میڈیا تک جائے گی۔

مگر ماجد خان بضد رہا کہ اسکو اس کیس کی انویسٹیگیشن کرنی ہے۔ وہ مجرموں تک پہنچنا چاہتا ہے۔ ماجد خان نے سائرہ کے ابو کو کہا آج آپکی بیٹی کے ساتھ ایسا ہوا ہے کل کسی اور کی بیٹی کے ساتھ بھی ایسا ہو سکتا ہے۔ میں ایک ایماندار اور فرض شناس پولیس والا ہوں میرا فرض ہے کہ میں معاملے کی تحقیقات تک پہنچوں۔ آپکی بیٹی کا ریپ کس نے کیا اور کیوں کیا؟ اور وہ لاش کس کی تھی۔ کیا اسی شخص کی تھی جس نے آپکی بیٹی کا ریپ کیا اور آپ نے اسکو قتل کروا دیا یا کوئی اور تھا وہ؟؟؟

اس بات پر سائرہ کے ابو بولے کو وہ کسی لاش کے بارے میں نہیں جانتے مگر وہ ان پر رحم کرے اور اس معاملے کو یہیں پر چھوڑ دے۔ مگر ماجد خان کسی بھی طرح راضی نہیں تھا۔ سائرہ کے ابو نے اسکو 1 کروڑ روپے کی آفر بھی دی مگر وہ نہیں مانا ۔ بال آخر وہ اٹھ کر جانے لگا اور بولا کہ اگر آپ تعاون نہیں کریں گے تو میں یہ ویڈیو اپنے اعلی افسران تک پہنچا وں گا اور پھر یہ میڈیا پر بھی خبر آئے گی۔ وہ ہر صورت میں اس کیس کی تحقیقات کرے گا۔ اب سائرہ کے ابو کی شکل دیکھنے لائق تھی۔ انکو کچھ سمجھ نہیں آرہا تھا کہ وہ کیسے اس بدنامی سے چھٹکارا پائیں۔

تبھی میں نے مداخلت کی اور کہا کہ دیکھو اس کیس کی تحقیقات کر کے آپکو کچھ نہیں ملے گا۔ صرف انکل کی بدنامی ہوگی، جس نے یہ کام کیا وہ تو مارا گیا۔ اور اسکو انکل نے نہیں بلکہ انکل کے کسی دشمن نے مروایا ہوگا تاکہ شک انکل پر جائے۔ آپکے اوپر جو افسر بیٹھے ہیں وہ سب کے سب بے ایمان اور رشوت خور ہیں۔ مگر آپ رشوت بھی نہیں لیتے۔ آپکے افسر اس کیس کا ناجائز فائدہ اٹھائیں گے اگر آپنے یہ ویڈیو ان تک پہنچا دی۔ اور اس میں نقصان سرا سر انکل کا ہوگا۔ پہلے ہی انکی بیٹی کے ساتھ زیادتی ہوگئی ہے اب اگر آپ اس ویڈیو کو اپنے افسران تک پہنچائیں گے تو اس سے انکل کی مزید بدنامی ہوگی۔ اور مجرم پھر بھی بچ جائیں گے۔

آپ ہم پر رحم کریں اور اس ویڈیو کو یہیں پر ضائع کر دیں بدلے میں ہم آپکی پروموشن کروا دیں گے اور تھانے کا ایس ایچ و بنوا دیں گے۔ تاکہ آپ اپنے تھانے سے بے ایمانی اور رشوت خوری کا خاتمہ کر سکو۔ اس طرح آپ آنے والے ایسے کسی حادثے کو پہلے ہی روک سکو گے۔ کیونکہ اگر پولیس کے افسر اچھے اور ایماندار ہونگے تو بہت سے جرائم کو انکے ہونے سے ہہلے ہی روکا جا سکتا ہے۔

میری یہ بات سن کر انکل فورا بول اٹھے کہ ہاں میں کل ہی اعلی حکام سے بات کر کے تمہاری پروموشن کروا دوں گا۔ بس تم یہ ویڈیو مجھے دے دو اور اس کیس کو یہیں پر بند کر دو۔ اس پر ماجد خان سوچ میں پڑ گیا اور بالآخر مان گیا۔ مانتا کیسے نا وہ، آخر کار یہ سب ہمارے پلان کا حصہ تھا۔ ماجد خان پہلے ہی اپنے ایس ایچ و سے گالیں سن سن کر اسے ناخوش تھا اور جب میں نے آئسکریم پارلر میں بیٹھ کر اسکو سائرہ کے ساتھ یہ کرنے کو کہا تو اس نے فورا ہی انکار کر دیا کہ اسکے ابو بہت طاقتور انسان ہیں وہ اسکو چھوڑیں گے نہیں۔ مگر میں نے اسکو پورا پلان بتایا کہ کس طرح وہ ہم دونوں کو اغوا کرے گا پھر اسکی ویڈیو بنے گی اور پھر کچھ دنوں کے بعد وہ انکے گھر پولیس والے کی حیثیت سے آئے گا اور کسی نہ کسی طرح اسکی پروموشن کروا دی جائے گی۔ کیونکہ میں جانتی تھی کہ سائرہ کے ابو کبھی بھی نہیں چاہیں گے کہ یہ بات پولیس تک پہنچے اور انکی بدنامی ہو۔

سب کچھ پلان کے مطابق ہوگیا تھا۔ میں جانتی تھی کہ آج ماجد خان نے آنا ہے اسی لیے میں سائرہ کے گھر گئی تھی کہ بات کو کسی طرح اسکی پروموشن کی طرف لے جا سکوں۔ اور آخر کار ماجد خان پروموشن کا سن کر مان گیا اور وہ ویڈیو انکل کے حوالے کر دی۔ مگر ساتھ ہی بولا کہ اسکی ایک کاپی اسکے پاس موجود ہے جو وہ پروموشن ہونے کے بعد دے گا۔

نا تو کوئی اور کاپی اسکے پاس موجود تھی اور نہ ہی کوئی لاش ملی تھی اور نہ ہی کسی لڑکی کے پھٹے ہوئے کپرڑے ملے تھے گاڑی سے۔ یہ سب جھوٹ تھا جو پلان کے مطابق بولا گیا۔ اسطرح میرا بدلہ بھی پورا ہوگیا اور ماجد خان کی پروموشن بھی ایک ماہ کے اندر ہوگئی۔

سائرہ اس گینگ ریپ کے بعد کسی طور بھی نارمل نہیں ہورہی تھی دوسری طرف سائرہ کا بھائی بھی اپنی حرکت پر شرمندہ تھا اور چپ چپ رہنے لگ گیا تھا۔ وہ بھی یہی سوچ رہا تھا کہ اسکی بہن کے ساتھ جو ہوا وہ فائزہ کو بلیک میل کرنے کی سزا ملی ہے۔ دونوں بچوں کی حالت دیکھ کر انکل سے رہا نہیں گیا اور نہوں نے پاکستان چھوڑنے کا ارادہ کر لیا۔ سائرہ کے گینگ ریپ کے 2 ماہ کے بعد وہ سب لوگ پاکستان چھوڑ کر امریکا شفٹ ہوگئے۔

اس واقعہ کے ایک سال بعد تک مسلسل ہر ہفتے باقاعدگی سے سائرہ مجھے کال کرتی اور مجھ سے باتیں کرتی۔ وہ اکثر اوقات مجھ سے معافی بھی مانگتی لیکن آہستہ آہستہ اسکی حالت بہتری کی طرف جا رہی تھی۔ ایک سال بعد مجھے پتہ لگا کہ وہاں کسی بڑے بزنس میں کے بیٹے کے ساتھ سائرہ کی شادی ہوگئی ہے اور وہ اسکے ساتھ بہت خوش ہے۔

ادھر رضوان کے ساتھ میرے جنسی تعلقات لمبے عرصے تک رہے۔ وہ بلا تردد اپنے دوستوں کے سامنے مجھے چودتا اور انکو بھی دعوت دیتا کہ وہ اسکی منگیتر کو جی بھر کر چودیں۔ میں نے بھی رضوان کے ساتھ مل کر بہت سے لوڑوں کی سواری کی کسی سے گانڈ چدوئی تو کسی سے چوت۔ بہت سے لن اپنے منہ میں لیے۔ مگر اب رضوان کی نظر میں میری عزت نہیں رہی تھی۔ حالانکہ اپنے دوستوں کے ساتھ چدائی کروانے والا رضوان ہی تھا۔ میرے ساتھ دوسری لڑکی رافعہ کی چودائی کا شوق رضوان کو تھا اور اسی کے لیے اس نے مجھے ندیم سے چدائی کروانے پر بھی منع نہیں کیا۔ اور بھی اسکے جتنے دوست تھے وہ مجھے چود چکے تھے۔

پھر ایک دن رضوان نے میرے ساتھ اپنی منگنی توڑ دی۔ مجھ پر یہ خبر پہاڑ بن کر ٹوٹی۔ میں نے رضوان سے وجہ جاننی چاہی تو اس نے حقارت کے ساتھ کہا تم جیسی لڑکی سے کون شادی کرے گا جو پتا نہیں کس کس کے لن کو اپنی چوت میں لے چکی ہے۔ میں نے اسکو چلا کر کہا کہ تم بھی تو دوسری لڑکیوں کو چودتے ہو اور تمہاری اجازت سے ہی یہ سب کچھ ہوتا رہا ہے۔ جس پر وہ بولا میں تو مرد ہوں۔ جو مرضی کروں مگر تم ایک لڑکی ہو تمہیں اپنی عزت کی حفاظت خود کرنی چاہیے۔ اسنے میرے گھر والوں کے سامنے بھی کہ دیا کہ آپکی بیٹی کا کریکٹر ٹھیک نہیں اس لیے میں اس سے شادی نہیں کر سکتا۔

میں اسکے آگے کچھ نہ بول پائی اور میرے والدیں کو بھی رضوان کے سامنے رسوا ہونا پڑا۔ میرے بہنوئی عمران نے بھی میرے ساتھ جنسی تعلق قائم رکھا انکو جب کبھی موقع ملتا وہ میری چوت لازمی لیتے۔ ایک دن جب میں انکے لن پر سواری کر رہی تھی تو ہم دونوں کو صائمہ نے دیکھ لیا۔ اور عمران بھی فوری طور پر سارا الزام مجھ پر لگانے لگے کہ رضوان نے اس سے منگنی اسی لیے توڑی کہ یہ ٹھیک لڑکی نہیں آج اس نے اپنے بہنوئی کو بھی نہیں چھوڑا اور اپنے ننگے جسم سے مجھے ورغلانے لگی اور بال آخر میرا لن اپنے منہ میں لیکر چوسنے لگی۔ اور بات یہاں تک پہنچ گئی کہ اب یہ میرے لن پر سوار ہے۔ صائمہ نے بھی انے شوہر کی بات پر یقین کیا اور مجھے دھتکار دیا ۔ اس نے یہ بات امی ابو کو تو نہیں بتائی مگر وہ دوبارہ کبھی مجھ سے نہیں ملی۔ اور اسی طرح عمران بھی اپنا دامن بچا کر نکل گئے۔ آخر وہ بھی ایک مرد تھے انکے لیے سب کچھ جائز تھا۔ جب انہوں نے پہلی بار مجھے گھر میں اکیلا پا کر میری چدائی کی تب میرا کریکٹر برا نہں تھا۔ لیکن جب انکی بیوی نے پکڑ لیا تو میرا کریکٹر برا ہوگیا۔

مجھے اس غلط راستے پر لگانے والے عمران ہی تھی۔ سب سے پہلے انہوں نے ہی کم عمر میں مجھے لن کا مزہ چھکایا۔ اسکے بعد رضوان نے مجھے سیکس کے لیے ابھارا۔ مگر جب میں رضوان کے ساتھ کھل کر سیکس کرنے لگی تو اسکو لگنے لگا کہ میں اسکے قابل نہیں۔ اور جب عمران کے ساتھ پکڑی گئی تو عمران نے بھی اپنا دامن جھاڑ لیاا ور مجھے تنہا چھوڑ دیا۔

اب گھر میں میری خوب بدنامی ہوچکی تھی۔ کوئی بھی مجھے اچھی نظر سے نہیں دیکھتا۔ میری اس کہانی میں ان تمام لڑکیوں کے لیے ایک سبق ہے جو غلط راستے پر چل نکلی ہوں۔ یہ معاشرہ مردوں کا ہے صرف۔ اس میں لڑکی کی کوئی عزت نہیں۔

میں مانتی ہوں کہ میری بھی غلطی ہے اس سب میں۔ مگر کیا باقی لوگوں کی عمران اور رضوان کی کوئی غلطی نہیں؟؟ کیا انہوں نے مجھے اس غلط راستے پر ڈالنے میں اہم کردار ادا نہیں کیا؟؟ بلاشبہ وہ اس میں برابر کے شریک تھے۔ مگر وہ تو بہت صفائی کے ساتھ اپنا دامن بچا کر نکل گئے۔ اگر کسی کا نقصان ہوا تو صرف میرا۔ کیونکہ میں ایک لڑکی ہوں۔

میری ان تمام لڑکیوں کو نصیحت ہے جو شادی سے پہلے سیکس کا مزہ لینا چاہتی ہیں۔ اپنی عزت کی حفاظت آپ نے خود کرنی ہے۔ مشکل وقت میں کوئی آپکے ساتھ نہیں ہوگا۔ سب آپ پر ہی انگلیاں اٹھائیں گے۔ لہذا اپنے جسم کی اور اپنی عزت کی حفاظت لازمی کریں۔ چاہے آپکا منگیتر ہی کیوں نہ ہو اسکو بھی شادی سے پہلے اپنے قریب نہ آنے دیں۔ ورنہ وہ آپکے جسم سے لطف اندوز ہوتا رہے گا اور جب اسکا دل بھر جائے گا تب وہ آپکو ایک بد کردار لڑکی کہ کر ٹھوکر مار دے گا۔

سائرہ آج اپنے گھر میں خوش ہے، اسکی ایک وجہ شاید یہ ہے کہ اسنے جو غلط کام کیا تھا اسکا میرے سامنے اقرار کیا اور مجھ سے معافی بھی مانگی۔ مگر میں نے اسکے ساتھ جو کیا نہ تو اسکو آج تک پتا لگا اور نہ ہی مجھ میں اس سے معافی مانگنے کی ہمت پیدا ہوئی۔ جسکی مجھے یہ سزا ملی۔

آپ سب بھی اپنے گناہوں کی معافی ضرور مانگیں۔ ورنہ آپکا کونسا گناہ آپکو لے ڈوبے گا انسان کو اس چیز کا پتا بھی نہیں لگتا۔
ختم شد۔
Reply With Quote
Sponsored Links
CLICK HERE TO DOWNLOAD INDIAN MASALA VIDEOS n MASALA CLIPS
Sponsored Links - Indian Masala Movies
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator

"Uncensored Indian Masala Movies" - The hottest Indian Sex Movies and Mallu Masala clips

Check out beautiful Indian actress in sexy and even TOPLESS poses

Indian XXX Movies!

Widest range of Indian Adult Movies of shy, authentic Desi women.....FULLY NUDE DESI MASALA VIDEOS!!! Click here to visit now!!!
  #162  
Old 11-19-2015, 07:33 PM
lamboo lamboo is offline
Senior Member
 
Join Date: Jan 2012
Posts: 222,888
Default سالی: پورے گھر والی

miss faiza story ki oping bohat achi hai agy bi is ki pakar ko pakar kar rako take maza aye parne main any help for me
jaldi agy ki story send karo i'm w8


(*****Email Id dena allow nahi hai***** )
Reply With Quote
Sponsored Links
CLICK HERE TO DOWNLOAD INDIAN MASALA VIDEOS n MASALA CLIPS
Sponsored Links - Indian Masala Movies
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator

"Uncensored Indian Masala Movies" - The hottest Indian Sex Movies and Mallu Masala clips

Check out beautiful Indian actress in sexy and even TOPLESS poses

Indian XXX Movies!

Widest range of Indian Adult Movies of shy, authentic Desi women.....FULLY NUDE DESI MASALA VIDEOS!!! Click here to visit now!!!

 

UKBL ~ 10 Second Banner Rotator
Sponsored Links
  #163  
Old 11-19-2015, 07:33 PM
kamina_pati kamina_pati is offline
Senior Member
 
Join Date: Jan 2012
Posts: 222,034
Default سالی: پورے گھر والی

:zabardast:
Reply With Quote
Sponsored Links
CLICK HERE TO DOWNLOAD INDIAN MASALA VIDEOS n MASALA CLIPS
Sponsored Links - Indian Masala Movies
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator

"Uncensored Indian Masala Movies" - The hottest Indian Sex Movies and Mallu Masala clips

Check out beautiful Indian actress in sexy and even TOPLESS poses

Indian XXX Movies!

Widest range of Indian Adult Movies of shy, authentic Desi women.....FULLY NUDE DESI MASALA VIDEOS!!! Click here to visit now!!!
  #164  
Old 11-19-2015, 07:33 PM
kaamdev kaamdev is offline
Senior Member
 
Join Date: Jan 2012
Posts: 222,998
Default سالی: پورے گھر والی

Bohat umdaaaaaaaaaa

ho update
Reply With Quote
Sponsored Links
CLICK HERE TO DOWNLOAD INDIAN MASALA VIDEOS n MASALA CLIPS
Sponsored Links - Indian Masala Movies
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator

"Uncensored Indian Masala Movies" - The hottest Indian Sex Movies and Mallu Masala clips

Check out beautiful Indian actress in sexy and even TOPLESS poses

Indian XXX Movies!

Widest range of Indian Adult Movies of shy, authentic Desi women.....FULLY NUDE DESI MASALA VIDEOS!!! Click here to visit now!!!

 

UKBL ~ 10 Second Banner Rotator
Sponsored Links
  #165  
Old 11-19-2015, 07:33 PM
gabbar gabbar is offline
Senior Member
 
Join Date: Jan 2012
Posts: 221,811
Default سالی: پورے گھر والی

جی بالکل۔۔ بہنوئی کا لن دوبارہ سے اپنی سالی کی شاندار چدائی کرے گا۔
Reply With Quote
Sponsored Links
CLICK HERE TO DOWNLOAD INDIAN MASALA VIDEOS n MASALA CLIPS
Sponsored Links - Indian Masala Movies
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator

"Uncensored Indian Masala Movies" - The hottest Indian Sex Movies and Mallu Masala clips

Check out beautiful Indian actress in sexy and even TOPLESS poses

Indian XXX Movies!

Widest range of Indian Adult Movies of shy, authentic Desi women.....FULLY NUDE DESI MASALA VIDEOS!!! Click here to visit now!!!
  #166  
Old 11-19-2015, 07:33 PM
totapuri totapuri is offline
Senior Member
 
Join Date: Jan 2012
Posts: 220,374
Default سالی: پورے گھر والی

بہت بہت شکریہ۔ کسی بھی رائٹر کے لیے اسکی تحریر کی تعریف بہت اہم ہوتی ہے۔ حوصلہ بڑھتا ہے
Reply With Quote
Sponsored Links
CLICK HERE TO DOWNLOAD INDIAN MASALA VIDEOS n MASALA CLIPS
Sponsored Links - Indian Masala Movies
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator

"Uncensored Indian Masala Movies" - The hottest Indian Sex Movies and Mallu Masala clips

Check out beautiful Indian actress in sexy and even TOPLESS poses

Indian XXX Movies!

Widest range of Indian Adult Movies of shy, authentic Desi women.....FULLY NUDE DESI MASALA VIDEOS!!! Click here to visit now!!!

 

UKBL ~ 10 Second Banner Rotator
Sponsored Links
  #167  
Old 11-19-2015, 07:33 PM
totapuri totapuri is offline
Senior Member
 
Join Date: Jan 2012
Posts: 220,374
Default سالی: پورے گھر والی

bhot acha update hai thanks for sharing it umeed ha ke baqi update be ap juldi juldi karo ge waiting for more hot hot update
Reply With Quote
Sponsored Links
CLICK HERE TO DOWNLOAD INDIAN MASALA VIDEOS n MASALA CLIPS
Sponsored Links - Indian Masala Movies
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator

"Uncensored Indian Masala Movies" - The hottest Indian Sex Movies and Mallu Masala clips

Check out beautiful Indian actress in sexy and even TOPLESS poses

Indian XXX Movies!

Widest range of Indian Adult Movies of shy, authentic Desi women.....FULLY NUDE DESI MASALA VIDEOS!!! Click here to visit now!!!
  #168  
Old 11-19-2015, 07:33 PM
sherkhan sherkhan is offline
Senior Member
 
Join Date: Jan 2012
Posts: 221,781
Default سالی: پورے گھر والی

Bhoot hi ala ilfaz nahi mil rahy tareef ka liye shandar tehreer ha:thanks:
Reply With Quote
Sponsored Links
CLICK HERE TO DOWNLOAD INDIAN MASALA VIDEOS n MASALA CLIPS
Sponsored Links - Indian Masala Movies
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator

"Uncensored Indian Masala Movies" - The hottest Indian Sex Movies and Mallu Masala clips

Check out beautiful Indian actress in sexy and even TOPLESS poses

Indian XXX Movies!

Widest range of Indian Adult Movies of shy, authentic Desi women.....FULLY NUDE DESI MASALA VIDEOS!!! Click here to visit now!!!

 

UKBL ~ 10 Second Banner Rotator
Sponsored Links
  #169  
Old 11-19-2015, 07:33 PM
aamjayadakha aamjayadakha is offline
Senior Member
 
Join Date: Feb 2009
Posts: 281,504
Default سالی: پورے گھر والی

Bhout achi likh rahi ho.
Reply With Quote
Sponsored Links
CLICK HERE TO DOWNLOAD INDIAN MASALA VIDEOS n MASALA CLIPS
Sponsored Links - Indian Masala Movies
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator

"Uncensored Indian Masala Movies" - The hottest Indian Sex Movies and Mallu Masala clips

Check out beautiful Indian actress in sexy and even TOPLESS poses

Indian XXX Movies!

Widest range of Indian Adult Movies of shy, authentic Desi women.....FULLY NUDE DESI MASALA VIDEOS!!! Click here to visit now!!!
  #170  
Old 11-19-2015, 07:34 PM
desiman7 desiman7 is offline
Senior Member
 
Join Date: Jan 2012
Posts: 221,141
Default سالی: پورے گھر والی

i have read both your stories. exceptional narration, outstanding continuation, brilliant, brilliant, brilliant.... is there any other story by you which i have not read yet???
Reply With Quote
Sponsored Links
CLICK HERE TO DOWNLOAD INDIAN MASALA VIDEOS n MASALA CLIPS
Sponsored Links - Indian Masala Movies
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator

"Uncensored Indian Masala Movies" - The hottest Indian Sex Movies and Mallu Masala clips

Check out beautiful Indian actress in sexy and even TOPLESS poses

Indian XXX Movies!

Widest range of Indian Adult Movies of shy, authentic Desi women.....FULLY NUDE DESI MASALA VIDEOS!!! Click here to visit now!!!

 

UKBL ~ 10 Second Banner Rotator
Sponsored Links
Reply

Thread Tools
Display Modes

Posting Rules
You may not post new threads
You may not post replies
You may not post attachments
You may not edit your posts

BB code is On
Smilies are On
[IMG] code is On
HTML code is Off

Forum Jump


All times are GMT -4. The time now is 02:36 PM.


Powered by vBulletin® Version 3.8.3
Copyright ©2000 - 2018, Jelsoft Enterprises Ltd.

Masala Clips

Nude Indian Actress Masala Clips

Hot Masala Videos

Indian Hardcore xxx Adult Videos

Indian Masala Videos

Uncensored Mallu & Bollywood Sex

Indian Masala Sex Porn

Indian Sex Movies, Desi xxx Sex Videos

Disclaimer: HotMasalaBoard.com DOES NOT claim any responsibility to links to any pictures or videos posted by its members. HotMasalaBoard has a strict policy regarding posting copyrighted videos. If you believe that a member has posted a copyrighted picture / video, please contact Hotman super moderator. Members are also advised not to post any clandestinely shot material.