Hot Masala Board - Free Indian Sex Stories & Indian Sex Videos. Nude Indian Actresses Pictures, Masala Movies, Indian Masala Videos

UKBL ~ 10 Second Banner Rotator


Go Back   Hot Masala Board - Free Indian Sex Stories & Indian Sex Videos. Nude Indian Actresses Pictures, Masala Movies, Indian Masala Videos > Urdu Sex Stories - Urdu font sex stories, urdu kahani, urdu sex kahani

Reply
 
Thread Tools Display Modes
  #1  
Old 08-28-2016, 11:59 AM
hotman hotman is offline
Administrator
 
Join Date: Nov 2006
Posts: 78,428
Red face بھاجے کے لںڈ کی پیاسی

چندر ایک كونتركٹور کے یہاں سوپرواذر تھا. تنخواہ ٹھیک ٹھاک تھی. بیٹی تارا کی پیدائش کے بعد چندر نے نس بندی کرا لی تھی. وہ زیادہ پڑھا لکھا نہیں تھا، لیکن سمجھدار تھا. شادی کے بعد جب تک کے اس کے آمدنی نہیں بڑھی اس نے كوپپر-ٹی کا استعمال کروایا تھا. تارا شادی کے چار سال بعد پیدا ہونے والی تھی.

تارا بھی اب 5 سال کی ہو گئی تھی، اور اسکول جانے لگی تھی. دوپہر میں گھر کاٹنے کو دوڑتا تھا. پڑوس کی عورتوں سے وہ گھل مل نہیں پائی تھی. شوہر اور بچی ہی اس کا سارا سنسار تھے. ان کے ایک رشتہ دار تھے ممبئی میں. لیکن شہر کی حصہ-دوڑ میں ان سے بھی ماہ میں کبھی مل پاتے تھے. چندر نے اسے ایک موبائل فون دیا ہوا تھا جس سے کی وہ گاؤں میں جب رہا نہیں جاتا، کال کر لیتی تھی. لیکن وہ بھی اس کے اکیلیپن کو کاٹنے کے لئے کافی نہیں تھا. ایسے میں کل شام چندر نے اسے بتایا کی مہیش آ رہا ہے. اسے کافی خوشی ہوئی کی چلو اسے بھی بتيانے کے لئے کوئی مل جائے گا، کچھ دن تو دل لگا رہے گا!

مہیش چندر کی سگی دیدی کا لڑکا یعنی کی ان کا بھاںجا تھا. اسے یاد تھا جب ان کی شادی ہوئی تھی تو مہیش 7 سال کا گول مٹول بچہ تھا. بہت گورا، بکھرے بال اور موتی موتی آنکھیں. بہت شرمیلا تھا. موٹا ہونے کی وجہ بالکل کسی گڈڈے کی طرح دیکھتا تھا. وہ شادی کے لئے تیار ہو رہی تھی تو دیدی کے ساتھ وہ بھی اس کے کمرے میں آیا تھا. تب وہ شرماتا ہوا دیدی کے پیچھے چھپ رہا تھا. دیدی جھللاتے ہوئے بولی،
"ارے مہیش کیا کر رہے ہو، مامی ہیں تمہاری. چلو ہیلو کہو ... جلدی ہیلو بولو نہیں تو مامی کو برا لگے گا."
"نہیں دیدی برا کیوں لگے گا. یہ گولو تو اپنی مامی کو ایک پپی دے گا. دے گا نہ گولو؟"
پھر اس نے مہیش کے گال کھینچ کے اسے ایک گال میں پپی دے دی. وہ شرما کے کمرے سے بھاگ گیا تھا!

اس کے بعد بھی کئی دفعہ وہ اس سے ملی تھی. همےش اسے چھیڑا کرتی تھی اور گال پہ پپی دینے کے بعد اسے ہلکے سے کاٹ دیتی، جس سے وہ رونے لگتا. پھر اسے چوكلےٹ اور ٹوپھي کا لالچ دے دے کے مناتي.

ایک بار اس نے بڑے ہی بھولےپن سے سب کے سامنے کہا تھا،
"چندہ مامی کتنی خوبصورت ہیں. میں بڑا ہو جاؤں گا تو صرف چندہ مامی سے شادی کروں گا."
ہنستے ہنستے سب کے پیٹ میں بل پڑ گئے تھے اور سب کے چہرے سرخ ہو گئے تھے.

وہ پیارا شرمیلا مامی کا چهےتا گولو ان کے پاس کچھ دنوں کے لئے آ رہا تھا، کچھ کام تھا اسے. چندر نے بتایا تو تھا، لیکن اس کے آنے کی خبر کی خوشی میں اس نے دھیان نہیں دیا تھا. بس پچھا تھا کہ کتنے دن رہے گا تو پتہ چلا کہ قریب پندرہ دن رہے گا ان کے پاس. لاڈلے بھاجے کے استقبال کہ تیاری میں لگ گييمهےش کے آنے کا وقت ہو رہا تھا. چندر لینے گئے تھے اس کے. وہ بھی جانا چاہتی تھی لیکن ٹرین رات کو دیر سے آنے والی تھی. لوٹتے-لوٹتے 12 بج جاتے. وہ بولے کہ تمہیں ساتھ نہیں لے جا سکتا. وہ سمجھتی تھی. برسات شروع ہونے والی تھی اور جس بلڈنگ کا کام چندر دیکھ رہا تھا وہ درمیان میں کچھ وجہ سے رک گیا تھا. اب جب کام پھر شروع ہوا تو بلڈر چاہتا تھا کہ برسات سے پہلے بلڈنگ سخت ہو جائے کیونکہ پھر برسات میں زیادہ کام نہیں ہو پاتا. اس وجہ سے کام میں 24 گھنٹے چلتا اور چندر کئی بار رات رات بھر کام کرتے.

ایک مہینہ بھر تھا برسات شروع ہونے میں.

ٹھیک ہے، دروازے پہ نظریں لگائے بیٹھی تھی. تارا کھانا کھا کر سو رہی تھی. نیند اسے بھی آ رہی تھی، لیکن بھاجے کو کھلا پلا کے ہی سونے والی تھی وہ.

تبھی دروازے میں چابی گھومی اور دروازہ کھلا، چندر ایک بڑا سا بیگ اٹھائے گھر میں گھسے. وہ اٹھ کے ان سے بیگ لے بڑھی. بیگ ہاتھ میں لیتے ہی، چندر کے پیچھے جهنكنے لگی، وہاں کوئی نہیں تھا.
"بیگ لے آئے، بھاجے کو کہاں چھوڑ آئے؟"
"ارے آ رہا ہے، تھوڑی دیر پہلے بولنے لگا، 'ماما، پیشاب کرکے آتا ہوں!'. میں نے کہا گھر تو آ ہی گیا ہے، گھر میں کر لینا. پر بولتا ہے ..." چندر حسن لگے، ".. . بولتا ہے، ایک سیکنڈ کہ اور دیر ہو گئی تو پینٹ میں ہو جائے گی. مامی کے سوچےگي؟ "
سن کر وہ بھی حسن لگی.
"تم کھانا عبادت کرو، تب تک وہ آ جائے گا، میں بھی ہاتھ پاؤں دھو لیتا ہوں."

بیگ کو ایک کرسی کے سوا رکھ کر وہ باورچی خانے چلی گئی اور دونوں کہ تھاليا لگانے لگی.

"چندر ماما!"، اس نے جب یہ آواز سنی تو ایک لمحے کے لئے وہ اٹک گئی. یہ تو کسی بالغ مرد کہ آواز تھی. وہ باہر آئی تو اس نے دیکھا کہ ایک طویل سا، پتلا سا لڑکا تھا. اس کی ہلکی ہلکی موچھے تھی. داڑھی ابھی ٹھیک سے نہیں آئی تھی. اسے دیکھتے ہی وہ مسکرایا اور اس کے پاؤں چھونے کے لئے جھک گیا.

"ارے مامی کے پیر نہیں چھوتے بیٹا کتنا بڑا ہو گیا ہے تو تو. کتنے سال کا ہو گیا رے؟"
"16 سال کا، مامی، ہمیشہ گولو بچہ تھوڑی نہ رہونگا!" وہ اٹھتے ہوئے بولا.
"دھت تیری کی! اب گال کس نوچگي؟"
"میرے تو نہیں نوچ سکوگی!" وہ ہنستے ہنستے بولا.

"ہو گیا مامی بھاجے کا میل ملاپ تو کھانا کھا لیں؟" چندر ہاتھ پیر دھو چکے تھے.
"میں تو پہلے نهاوگا ماما."
"ارے هاتھ پیر دھو کے کھانا کھا لو، کل نہا لینا. تھک گئے ہو گے، جلدی سو"، چندہ بولی.
"بھوک تو تیز لگی ہے لیکن نهايے بغیر نہیں رہا جائے گا. پانچ منٹ میں نہا کے آتا ہوں."، خطاب کرتے ہوئے مہیش نے بیگ کھولا اور اس میں سے تولیہ اور کچھ کپڑے لے باتھ کہ اور چل دیا.

گھر بہت بڑا نہیں تھا ان کا. ایک بلڈنگ کے تیسری اور آخری منزل پر ان کا گھر تھا. ایک بیڈروم، ایک ہال اور ایک کچن. شوہر بیوی اور بیٹی تینوں ایک ہی کمرے میں سوتے تھے. مہیش کے لئے اس نے ایک توشک نکل دیا تھا. اسی کو ہال میں بچھا کر اس کے سونے کا انتظام ہونا تھا.

بستر پہ لیٹی-لیٹی وہ سوچ رہی تھی. مہیش کتنا بدل گیا ہے. کتنا بڑا ہو گیا ہے. کتنا خوش بھی ہے. کھانا کھاتے کھاتے ہنسا ہنسا کے ماما مامی کہ حالت بگڈ گئی تھی! اس نے دیکھا کہ چندر سو گئے تھے. وہ آہستہ سے اٹھی اور ہال میں چلی گی. كھڈكي سے باہر سڑک کہ لائٹ سے روشنی اندر آ رہی تھی. اس روشنی میں مہیش اسے صاف صاف دکھائی دے رہا تھا. کافی لمبا تھا وہ. قریب 6 فٹ. چندہ کا قد تقریبا 5 پھوٹ تھا اور چندر کا قریب ساڑھے 5 پھوٹ. چہرے پہ ایک نوجوان دستک دے رہا تھا. کافی هےڈسم نوجوان. 'هےڈسم' لفظ اس نے کسی فلم میں سنا تھا.

اچانک اسے خیال آیا کہ وہ یہ کیا کر رہی تھی؟ رات کو چوری چوری اپنے بھاجے کو نہار رہی تھی؟ جب سے وہ آیا ٹھاٹ، وہ اس سے آنکھیں چرا رہی تھی اور شرما بھی رہی تھی. ایسا کیوں؟ ایک عجیب سا شرح اسکے سر سے پیر تک رینگ گیا. وہ سنبھلی اور اندر جا کر پھر لیٹ گئی. اس بار تھوڑی بے چین اور شورش زدہ تھی. کافی دیر تک طرح کے خیال اسے ٹرانسمیشن کرتے رہے. بار بار اسے مہیش کا مسکراتا چہرہ دیکھتا اور وہ سہم جاتی. کسی طرح سے کروٹ بدلتے بدلتے آخر میں سو گئی.

رات میں اس عجیب عجیب خواب پریشاں کرتے رہے. کبھی چندر اس سے دور کہیں جا رہے تھے اور اس کا رو رو کے برا حال تھا. کبھی تارا چیخ چیخ کے روتی دکھائی دی. کبھی اسے لگا کہ وہ ایک اونچے پہاڑ سے گر رہی ہے. کہتے ہیں خواب اترمن کا عکس ہوتے ہیں. آپ کے اترمن میں جو بھی چلتا رہتا ہے، آپ کے خواب اسے ظاہر کرتے ہیں. چندہ کے ان عجیب خوابوں کو سمجھنے کے لئے کسی نفسیاتی کہ ضرورت نہیں.

یہ بات ابھی اسے سمجھ نہیں آ رہی تھی، یا وہ سمجھنا نہیں چاہتی تھی. سچ یہ تھا کہ اس بار مہیش کو دیکھ کر، ممتا کے علاوہ اس کے اندر بہت سے جذبات ایسی جاگی تھی جو اس کے دنیا کو ہلا کے رکھ سکتی تھی.

چندہ کہ عمر قریب 27 سال تھی. اس کی شادی 18 سال کہ ہوتے ہی ماں باپ نے چندر سے کرا دی تھی. چندہ کا پڑھائی میں دل کبھی نہیں لگا تھا. کسی طرح سے وہ 10وي میں پهوچي. جب دو بار فیل ہو گئی تو اس کے ماں باپ سمجھ گئے کہ پڑھائی اب اس کے بس کی بات نہیں تھی. ماں نے اسے گھر کے کام کاج میں لگا دیا، جس سے کہ شادی کے لئے وہ تیار ہو. چندر بہت اچھا رشتہ تھا. آج بھی اس کے شکست باپ کو اپنے داماد پہ فخر تھا.

شادی کہ پہلی رات اس نے کام-رس پہلی بار چکھا تھا. شادی سے مغربی [اےهلے نہ تو کبھی اسے اس کا خیال اور نہ ہی کوئی دلچسپی تھی. سیدھی سادی لڑکی تھی چندہ. سہیلیوں نے اسے خوب ڈرایا تھا. لیکن چندر نے اسے بڑے پیار سے بغیر زور زبردستی ریٹویٹ سمجھا کر، خوب دیر تک چھو کر، سہلا کر اتیجت کیا تھا. اسے تھوڑا درد ہوا تھا اور خون دیکھ کر وہ تھوڑا دری تھی لیکن چندر اسے سمجھا چکے تھے. اسے بہت مزا بھی آیا تھا. ان دنوں چندر نرودھ کا استعمال کرتے تھے. جب اس نے كوپپر-ٹی لگوائی تب جاکر چندر نے بغیر نرودھ کے اس کے ساتھ سمبھوگ کیا تھا. تب جا کر اسے سهواس کے اصلی سکھ لطف آنے لگ گیا تھا. اب بھی درد ہوتا تھا لیکن اس درد میں اب اسے مزا آنے لگا تھا.

تقریبا تین سال تک انہوں نے خوب سمبھوگ کیا. پھر جب كوپپر-ٹی نکل کر تارا اس کے پیٹ میں آئی تو 8-9 ماہ انہوں نے کوئی سهواس نہیں کیا. جبکہ چندہ کئی بار اتنا تڑپ اٹھتی کہ چندر اپنے ہاتھوں سے اسے خوشی دینے کہ کوشش کرتے.

جب گھر میں اکیلی ہوتی اور اندر سے کام دیوتا جاگتے تو رضاکاری کر لیتی. رضاکاری تو وہ اب بھی کرتی تھی. آپ کے جسم کو وہ چندر سے بہتر جانتی تھی. ایسا نہیں تھا کہ چندر اسے خوش نہیں رکھتے تھے. ان کا جنس قریب 6 انچ کا لیکن کافی موٹا تھا. تارا کی پیدائش کے بعد، شادی کے 9 سال کے بعد، آج بھی جب چندر اس کے اندر داخل کرتے تو چند لمحات کے لئے اسے لگتا کہ اس کی يوني پھٹ جائے گی. اس کی سانس رک جاتی. چندر کافی دیر تک اس پر لگے رہتے. جب تک چندر جھڈتے، وو تین چار بار جھڈ چکی ہوتی.

اب جیسے جیسے تارا بڑی ہو رہی تھی اور چندر کا کام بڑھتا جا رہا تھا، ان کے سمبھوگ کے موقع گھٹتے جا رہے تھے. رات میں تارا کو بیڈروم میں بند کر کے، ہال میں آواز دھیمی رکھ کے وہ سمبھوگ کرتے تھے. بیٹی کے سوا کے کمرے میں ہونے کی وجہ سے وہ ٹھیک سے مزہ نہیں لے پاتے اور اوپر سے گلاني کا جذبہ دل میں ہمیشہ رہتا تھا.
نہا کر جب چندہ باتھ سے نکلی تو دروازہ کھولتے ہی مہیش دکھا. دونوں ٹاںگو کے درمیان ہاتھ بھینچ کے کھڑا تھا. اسے دیکھتے ہی وہ شرماگیا اور جھٹ سے باتھ روم میں گھس گیا. چندہ کو اچانک خیال آیا کہ ووہ صرف بلاز اور پےٹٹيكوٹ میں باتھروم سے نکل آئی تھی. وہ بھول گئی تھی شوہر اور بیٹی کے علاوہ اب گھر میں ایک جوان لڑکا بھی تھا. جھےمپتي ہوئی ووہ بیڈروم چلی گئی اور دروازہ بند کر لیا.

اندر جا کر لوہے کے كپاٹ پر لگے آئینے میں دیکھنے لگی کہ کہیں کچھ اپپتجنك تو نہیں تھا؟

اپنے آپ کو نہارتے نہارتے وہ کھو گئی. پلٹ پلٹ کے، گھوم گھوم کر اپنے آپ کو دیکھنے لگی. 27 کوئی زیادہ عمر نہیں ہے. بالی وڈ کہ کئی هےرونے اس سے بوڑھی تھی. چندہ کوئی هےرونے یا ماڈل تو نہیں لگتی تھی لیکن تھی بہت 'سیکسی'. چندر اسے اکثر سیکسی ڈارلنگ کہتے تھے. چہرہ اس کا لمبا تھا، ناک نکیلی، آنکھیں بھوری. قد زیادہ نہیں تھا. ہلکا سا پیٹ نکلا تھا، لیکن کمر اب بھی اس کی 30 ہی تھی. چھاتی کافی ابھری تھی. 34c اس کے برا کا سائیز تھا. چھاتی اس کے کافی بڑے تھے. چندر انہیں كھهوب دباتے اور چوستے تھے. جب تارا پیدا ہوئی تھی، تو اکثر چندر اس کا دودھ پی لیتے تھے. لیکن اس کے جسم میں کوئی دیکھنے لائق اعضاء اگر تھا، تو وہ تھے اس نتب، ہپ یعنی کہ 'گاںڈ'. 36 کہ گدراي گولائیوں کو چندر خوب مسلتے تھے. اس کی رانیں گدراي ہوئی تھی. یہ سب دیکھتے دیکھتے اور چندر کے ساتھ گزارے لمحات کے بارے میں سوچتے سوچتے اسے اچانک یاد آیا کہ اسے ساڑی پہن لینی چاہئے.

سویرے اٹھ کے چندر اور تارا کو تیار کرکے، ان کا دوپہر کا کھانا باندھ کر اس نے انہیں رخصت کر دیا تھا. مہیش تب بھی سو رہا تھا. کچن کے دیگر کام نمٹا کے جب وہ نہانے چلی تھی تب بھی مہیش سو رہا تھا. ساڑی پہن کے جب وہ باہر آئی تو دیکھا مہیش نہانے گیا ہے. اس کے لئے چائے چڑھا کر ناشتہ نکلنے لگی.
کچن میں چائے چھانتے ہوئے اسے مہیش کے باتھ روم سے نکلنے کی آواز سنائی دی. اس نے حلوہ ایک پلتے میں نکالا اور چائے کا کپ لے کر باہر نکل آئی. دیکھا تو مہیش صرف تولیے میں لپٹا پنکھے کے نیچے بدن سکھا رہا تھا.

وہ تھوڑی سی جھینپ گئی، پھر بولی، "بیٹا، چائے ناشتہ لے لو!"

مہیش اضطراری اور ہلکا سا جھینپ گیا. "اور تمہارا ناشتہ مامی؟"

"لا رہی ہوں. ساتھ میں کریں گے."

اپنا ناشتا اور چائے لے کر وہ واپس آئی. ساتھ میں بیٹھ کر دونوں ناشتہ کھانے لگے. وہ اس ادھیڑ بن میں تھی کہ بات کیا کرے. اسے بالکل بھی اندازہ نہیں تھا کہ گولو جوان ہو گیا ہو گا.

"مامی، ممبئی کیسی ہے؟" مہیش نے خاموشی توڑتے ہوئے کہا.

"ٹھیک ہی ہے." وہ بولی. اسے پتہ نہیں کیوں ایسا لگا کہ مہیش اسکے بلاس کہ گلی میں جھانک رہا ہے. پیروں کے درمیان ایک ہلکی سی تیس اٹھی. اس کا چہرہ سرخ ہو گیا.

"کیا ہوا مامی؟" مہیش کے پوچھنے پر وہ بولی، "کچھ نہیں، گرمی کچھ زیادہ ہے، ہے نا؟"

"ہے تو! مامی میں کپڑے بدل لوں اندر جا کر؟" اس نے دیکھا کہ مہیش ناشتا اور چائے، دونوں ختم کر چکا ہے. "ارے، پوچھتا کیا ہے. تیرا ہی گھر ہے."

مہیش اندر گیا تو چندہ گہری سوچ میں پڑ گئی. یہ سب کیا ہو رہا تھا. اسے معلوم تھا کہ یہ شاید کچھ غلط تھا، لیکن اسے روکنے میں وہ خود کو بہت لاچار محسوس کر رہی تھی.

مہیش لوٹا تو ایک سفید رنگ کہ ہاف پینٹ پہنے تھا. تولیے سے پوچھنے کے باوجود جسم پر لگے پانی کو لینا کر اس کے پتلون اس جنس سے سیٹ کر اس کے سائز اور قسم کا مظاہرہ کر رہا تھا. اوپر اس نے کچھ نہیں پہنا تھا.

چندہ اسے ٹکٹکی لگا کر دیکھتی رہی. اس کی نظر کو اپنے لںڈ پر دیکھ مہیش اتیجت ہو اٹھا. پچھا، "کیا بات ہے مامی؟"

"کچھ نہیں." وو بولی اور سارے پلیٹ گلاس وغیرہ اٹھا کر کچن کہ طرف چل پڑی. اس کی سانسیں تیز ہو چلی تھی.


"مامی میں ذرا باہر گھوم کے آتا ہوں"
"ہاں ٹھیک ہے"

جب اس نے مہیش کے نکلنے کے بعد دروازے کے بند ہونے کہ آواز سنی تو اس کے قدم نہ جانے کیوں باتھ کہ طرف بڑھ چلے. باتھ روم کے فرش پہ اس نے ویرے پڑا ہوا دیکھا. وہ سمجھ گئی کہ ضرور مہیش نے موٹھ ماری تھی. نہ جانے اسے کیا ہوا کہ اس نے اس ویرے کو اپنی اوںگلی سے چھو لیا. اب بھی گرمی تھی اس میں. اس کا انرڈروےر وہیں رکھا تھا. مدہوش سی چندہ نے مہیش کہ چڈڈھي اٹھائی اور اسے سونگھنے لگی. سوگھتے سوگھتے اس کی آنکھوں کے سامنے مہیش کہ ہاف پینٹ سے ابھرے هوے لںڈ کا تصاویر اس کی آنکھوں کے سامنے گھومنے لگا.

اسے جیسے کوئی نشہ ہو گیا تھا. مہیش کہ چڈڈھي پكڈے جب وہ بیڈروم میں پہنچی تو اس کے پاؤں شتل پڑ گئے تھے. اس کا جسم گرم ہو گیا تھا اور اس کی چھوٹ گیلی ہو گئی تھی. اس کے دل میں مہیش کا لںڈ اسکی چوت کو چيرنے کے لئے تیار تھا. ہاف پینٹ میں سے وہ سمجھ گئی تھی کہ مہیش کا لںڈ راكششي تھا. قریب 8- ساڑھے 8 انچ لمبا اور خوب موٹا.

بستر میں لیٹتے لیٹتے لانكھو خیال اس کے دل سے گزر رہے تھے. "مجھے چودو نا گولو، میرے بیٹے" "پھاڑ دو میری چوت" "پاگل مت بن، یہ سب کیا سوچ رہی ہے؟" وغیرہ وغیرہ. اس نے اسے گود میں کھلایا تھا. پر آج اس کے تن من میں جو آگ لگی تھی، اس کا وہ کیا کرے؟ اسی كشموكش میں اس نے اپنی ساڑی ڈھیلی کی اور پےٹٹيكوٹ کا ناڈا کھول کر اپنی اوںگلی سے اپنی چوت سہلائی.

اسے اتنا لطف سالوں میں نہیں ملا تھا. ڈر اور غیر اخلاقی كھيالو سے اسکی چوت کچھ زیادہ ہی گیلی ہو گئی تھی. اس نے اپنی اوںگلی کہ رفتار تیز کر دی. جلد ہی وہ پست ہو گئی. جب ہوش میں آئی تو اسے احساس ہوا کہ رمیش کہ چڈڈھي جو وہ منہ میں دبائے ہوئے تھی، اس سے پیشاب کہ بدبو آ رہی تھی. جھٹ سے اس نے اپنے کپڑے ٹھیک کئے اور چڈڈھي واپس باتھ روم میں رکھ آئی. وہ سمجھ نہیں پا رہی تھی کہ اس آگ کا وہ کیا کرے.

ایک طرف اس کی چوت نہ جانے کیوں اس کے بھاجے کے لںڈ کہ پیاسی تھی تو دوسری طرف اس کے تدفین اسے الاهنا دے رہے تھے اس کے گنہگار خیالات پر.
چندہ دوپہر کا کھانا بنا کر، چندر اور مہیش کہ راہ دیکھنے لگی. چندر نے کہا تھا کہ آج دوپہر میں کھانا کھانے گھر آئے گا اور پھر مہیش کو ساتھ لے کر وی. ٹی. جائے گا. وہیں پر مہیش کو کچھ مرچٹ نیوی کے لئے رجسٹریشن کرانا تھا.

مہیش کو گھومنے گئے ہوئے کافی دیر ہو چکی تھی. 2 بجنے میں کچھ منٹ ہی بچے تھے. تارا کے سکول سے واپس آنے کا وقت ہو رہا تھا. اچھا ہے! پورا خاندان ساتھ میں کھانا کرے گا!

تھوڑی دیر میں جب گھر کہ گھنٹی بجی تو دروازہ کھولنے پر اس نے دیکھا کہ تینوں ساتھ میں کھڑے تھے. تارا کو مہیش نے گود میں اٹھا رکھا تھا. تینوں تارا کے بچپنے پہ ہنس رہے تھے. گھر میں گھستے ہی تارا مہیش کہ گود سے اتر کر تارا کے پاس دؤڈی آئی. چندہ سب کے لئے کھانا پروسنے لگی. باہر چندر اور مہیش اس مرچٹ نیوی کے بارے میں باتیں کر رہے تھے.

کھانا کھا کر ماما اور بھاںجا نکلنے لگے. چندر نے تارا کو ساتھ لے لیا. زمانے کے مطابق تارا کو بھی ٹیوشن جانا پڑتا تھا. ٹیوشن کے بعد، پاس میں ہی وہ كتھك سیکھنے جاتی تھی. شام کو 7 بجے تارا یا چندر اسے لے آتے.

ان سب کے جانے کے بعد، چندہ نے سوچا کہ 7 بجے کے پہلے کوئی آنے والا تو ہے نہیں، نہ ہی اسے کہیں جانا تھا. گرمی بھی کافی تھی، اسپر سے امس نے اس کا حال برا کر دیا تھا. گھر کے سارے پردے لگا کر چندہ نے اپنے سارے کپڑے نکال دئے اور پنکھا تیز کر ننگی ہوکر ٹی وی دیکھنے لگی.

ایسا وہ اکیلے میں اکثر کرتی تھی. ٹی وی دیکھتے دیکھتے کسی سرل کے کردار کو دیکھ کر اسے اچانک مہیش کہ یاد آئی. پھر صبح کہ باتیں بھی یاد آئی. کچھ دیر کے لئے وہ سب کچھ بھول چکی تھی. لیکن پھر اس کے اندر ایک عجیب سی اتھل پتھل پھر شروع ہو گئی. تبھی دروازے کہ گھنٹی بجی. اچانک تندرا سے باہر آ کر وہ سوچ ہی رہی تھی کہ کیا کرے کہ گھنٹی پھر بجی. اس نے جھٹ سے بغیر برا اور پیںٹی پہن جھٹ سے پیٹیکوٹ بندھا، بلاس پہنا اور پھٹاپھٹ صدی لپیٹ کر پلو ڈال کر برا اور پیںٹی کو باتھ فیںک کر دروازہ دیکھنے چلی گئی.

دروازہ کھولنے پر اس نے مہیش کو پایا، چندر ساتھ نہیں تھا.

"ماما اپنا پرس بھول گئے، اس لئے مجھے بھیج دیا لے."

تھوڑی چندہ کہ حالت خراب تھی اور اسے پسینے چھوٹ رہے تھے. کپڑے بھی اس نے جلدی میں پہنے تھے. مہیش جب گھر میں گھسا تو وہ بیڈروم میں چلی گئی چندر کا پرس تلاش. اس سے پہلے کہ وہ اپنے کپڑے ٹھیک کرتی مہیش بھی اس کے پیچھے پیچھے چلا آیا. اچانک اسے چندر کا پرس فرش پر پڑا ہوا دکھا. اسے اٹھانے کے لئے وہ جھکی تو اس کا پلو گر گیا. سکپکا کر وہ پلو ٹھیک کرتے ہوئے اٹھی تو اس نے دیکھا کہ مہیش سنن سا کھڑا ہے اور اس کے چہرے کا رنگ اڑ گیا ہے. ٹکٹکی لگائے وہ اس بوبو کو نہار رہا تھا. اس نے اسے پرس تھمایا تو مہیش کو کچھ ہوش آیا. ججناساپوروك چندہ کی توجہ مہیش کہ پنت کہ طرف گیا تو اس جنس میں ہوئی حرکت اسے صاف صاف نظر آنے لگی.

مہیش پرس لے کر جب چلا گیا تو دروازہ اندر سے بند کر کے وہ آئینے کے سامنے سخت ہوئی اور پلو ہٹا کر جھک گی. وہ دیکھنا چاہتی تھی کہ آخر مہیش نے کیا دیکھا. جیسے ہی وہ جھکی، اس کا بایاں چھاتی بلاس سے تقریبا باہر نکل آیا تھا. اس کا نپل تقریبا باہر جھانک رہا تھا. دائیں کہ گولائی بھی صاف نظر آ رہی تھی.

یہ دیکھ کر اس کا چہرہ سرخ اور گرم ہو گیا. وہ سمجھ گئی کہ مہیش کی جنس میں پھڈكن تو ہونی ہی تھی. وہ سمجھ پا رہی تھی کہ مہیش کا جنس وسیع تھا. اس پنت میں اس کے جنس کے ابھر کو وہ دو بار دیکھ چکی تھی. وہ دل ہی دل اس جنس کے طور سائز کو دیکھنے لگی اور یہاں اس کی يوني گیلی ہونے لگی. اب اسے صاف دکھ رہا تھا کہ مہیش اس ستنوں کو جانور کہ طرح مسل رہا تھا، کاٹ رہا تھا اور چوس رہا تھا. اس کا لمبا، موٹا اور سیاہ جنس اس کی چوت کو پھاڑ رہا تھا. اس کے نیچے پسینے سے تار، وہ اچك اچك کر اس سے چدوا رہی تھی. یہ سوچتے سوچتے کب اس کی اوںگلی نے اسے پست کر دیا اسے پتہ ہی نہیں چلا. ہوش میں آتے ہی وہ پھر تڑپ اٹھی. اس اندرونی كشموكش کے چلتے اس کے دماغ نے کام کرنا بند کر دیا تھا.


شام کو قریب 6 بجے چندر کا فون آیا کہ وہ دونوں ٹرین میں آدھے رستے پہنچ چکے تھے اور تارا کو لیتے ہوئے آئیں گے. چندہ سے مہیش نے کھانا جلدی تیار کرنے کو کہا کیوںک دن کہ چھٹی کے بعد رات میں انہیں کام کرنا ہوگا اور پھر دو دن کہ انہیں چھٹی ملے گی.

چندر کھانا ساتھ لے جانا چاہتے تھے. چندہ نے آدھی نیند میں بغیر آنکھیں کھولے فون پر بات کی اور اںگڈائی لے کر اٹھی. آپ نے چندہ کے نیرس اور عام زندگی کے بارے میں جانا ہے. آپ جانتے ہیں کہ چندہ مہیش کی طرف کافی متوجہ ہے. لیکن مہیش کا کیا؟

حصہ 2 سے آپ کو یاد ہوگا کہ مہیش ایک 20 سال کا لڑکا تھا. اتر پردیش کے ایک چھوٹے سے گاؤں میں اس کے والدین رہتے تھے. آٹھویں تک وہ گاؤں میں ہی پڑھ رہا تھا. نویں سے اس کے والدین نے اسے الہ اس نانا نانی کے یہاں بھیج دیا. شہر میں کچھ اچھے اسکول تھے جو گاؤں میں کبھی نہیں ہو سکتے تھے. اس کے والدین چاہتے تھے کہ چندر محنت کرے اور پڑھ لکھ کر بڑا آدمی بنے.

مہیش کو الہ آباد میں کسی نے بتایا کہ مرچٹ نوی میں مستقبل اچھا ہے. ممبئی جاکر ٹریننگ لے. بارہویں کہ امتحان دے کر ممبئی میں معلومات لینے آیا تھا. ممبئی دیکھنے کہ لالسا بھی تھی. مہیش پڑھائی میں بہت ہوشیار نہیں تھا، لیکن پاس ہمیشہ ہو جاتا تھا. اس وجہ وہ آس پاس کے فیل ہونے والے مڈڈل اسکول کے بچوں کو پڑھا دیا کرتا تھا. جس سے اس کا جیب خرچ بھی نکل جاتا اور کافی پیسے بچ بھی جاتے. جب اس نے اپنے والدین کو بتایا کہ وہ ممبئی جانا چاہتا ہے، کیوں جانا چاہتا ہے اور یہ کہ اس نے کس طرح تتو سے کچھ ہزار روپے بچا ليے ہے جس سے وہ اپنے سفر کا خرچ اٹھا سکتا ہے، تو اس کے والدین فخر سے پھول اٹھے . انہیں اسے اکیلے بھیجتے ہوئے ڈر تو لگ رہا تھا، لیکن مہیش کی ذمہ داری دیکھ کر وہ اسے جانے سے روک نہ سکے. چندر ماما اور مامی ممبئی میں تھے، وہ جانتا تھا. کافی سالوں سے اس کی ان سے بات چیت بھی نہیں ہوئی تھی. لیکن اس کے والدین بھی جانتے تھے کہ وہ ان کے اپنے تھے. نسسكوچ انہوں چندر کو فون کرکے مہیش کے آنے کے بارے میں بتایا تھا.

چندر اور چندہ، جیسا کہ آپ جانتے ہیں، اس کے آنے سے بہت خوش تھے. بلکہ چندہ مہیش کو لے کر ایسی مشکوک میں پھاسي تھی کہ اندر ہی اندر جلے جا رہی تھی.


مہیش کو اپنے پرشتو کا احساس 20 سال کہ عمر سے ہونے لگا تھا. لڑکیوں کے چھاتی اور نتب اسے اتیجت کرتے. بوبے اؤر گاںڈ، یہ لفظ رات کو اسے بہت پریشان کرتے. اس اسکول کہ لڑکیاں اس کے سپنوں میں اکثر ننگی ہوکر اس کی باہوں میں آ جاتی تھی. دوستوں نے اسے مٹھ مرنے کا علم دے دیا تھا. لڑکیوں کے بوبے اؤر گاںڈ دیکھو اور ان کی تعریف کرنا ان کا پسندیدہ ٹامپاس تھا!

کئی بار اس کے دوستوں نے اسے کسی لڑکی پر دھکیل دیا تھا جس سے ان کے بوبے دبانے کا خوشگوار تجربہ بھی اسے مل چکا تھا. لیکن اس سے زیادہ اسے کچھ نہیں مل پایا تھا. ایک تو وہ بہت شرمیلا تھا اوپر سے لڑکیاں بھی بہت شریف تھی. کوئی بھی بات ہونے پر پرنسپل صاحب یا گھر پر بات پہنچنے کا ڈر اسے روک کر رکھتا تھا کوئی ایسی ویسی حرکت کرنے سے.

لیکن جنسی میں اسکی اتنی دلچسپی تھی کہ وہ کبھی کبھی دن میں 8-10 مرتبہ بھی ہلا لیا کرتا تھا.

اس نے سنا تھا کہ ممبئی میں لڑکیاں کافی فارورڈ اور چددككڑ ٹائپ کہ ہوتی ہیں. وہاں لڑکیاں اتنے کم کپڑے پہنتی ہیں کہ خواب دیکھنے کہ بھی ضرورت نہیں. اس لئے جب ممبئی جانے کا فیصلہ اس نے لیا تو اپنے ایک دوست سے جو ممبئی میں ہی رہتا تھا اس نے اس بارے میں پچھا. تب وہ کافی مایوس ہو گیا. دوست نے اسے بتایا کہ یہ سب کہنے سننے کہ چیزیں ہیں. سب جگہ لڑکیاں ایک جیسی ہی ہوتی ہیں. یہ سوچ لینا کہ ممبئی کہ ساری لڑکیاں رڈيا ہے، وقوفی ہوگی!

لیکن جیسے ہی وہ ممبئی پہنچا لفظی تنگ کپڑوں میں، آدھے بوبے دکھاتی، گاںڈ مٹكاتي ایک سے ایک سیکسی لڑکیوں کو اسٹیشن سے ماما کے گھر تک دیکھتے ہوئے آیا. رات کو جب وہ پہنچا تو سونے سے پہلے انمے سے دو تین لڑکیوں کو چھوڑنے کے خواب دیکھتے دیکھتے مٹھ مارتے کے بعد ہی وہ سویا.

صبح جب اس کی نیند کھلی تو اسے بہت زور سے پیشاب لگی تھی. باتھ بند تھا، شاید مامی اسمے نہا رہی تھی. وہ چپ چاپ ان نکلنے کا بے صبری سے انتظار کرنے لگا. جب مامی نکلی تو وہ صرف بلاس اور پیٹیکوٹ میں تھی. اس کے بوبے تھوڑے تھوڑے دکھ رہیں تھے. ٹھیک سے دیکھ نہیں پایا کیوںک موتنے کہ اسے جلدی تھی.

نہا کے جب وہ لوٹا تو اسے لگا کہ مامی اس جنس کو گھور رہی تھی. یا پھر اس کے جوان من کا وےهم تھا. اسے برا بھی لگ رہا تھا. یہ تو اس کی ماممي تھی. مامی کے بارے میں ایسے گندے خیال؟

ناشتہ کرتے کرتے جب وہ بات کر رہیں تھے تو اچانک اسے احساس ہوا کہ مامی کے بلاس میں بوبو کے درمیان کہ گلی کافی صاف دکھ رہی تھی. اتنے پاس سے اس نے کبھی گلی کو نہیں دیکھا تھا، اس لیے وہ اس میں کچھ دیر کے لئے اٹک گیا. شاید مامی نے اسے پکڑ لیا تھا!

بعد میں جب چندر مام اپنا پرس بھول گئے تھے اور اسے لینے ووہ گھر لوٹا تھا تب مامی پرس اٹھانے کے لئے جب جھکی، تو ان کے ببلے بلاس کے باہر تقریبا نکل ہی گئے، ان کے بائیں بوبے کا گہرا گلابی نپل بھی اسے دکھ گیا تھا. پہلی بار اس نے ایسا نظارہ دیکھا تھا. اس کے دماغ سے سارا خون دوڑ کے اس کے جنس میں پہنچ گیا اور اچانک اس کا جنس حرکت میں آ گیا. مہیش ڈر گیا. کہیں مامی کو سمجھ میں آ گیا کہ اس کے دل میں ان کے لئے ایسے گندے خیالات ہیں تو نہ جانے وہ کیا کریں گی.

یہ سوچ کے اس کی تھوڑی پھٹ گئی تھی لیکن من اس کا مان نہیں رہا تھا. رستے بھر اسے مامی کا پھگر، ان بوبے اور اب ان کی گاںڈ بھی پریشاں کر رہیں تھے.

ماما نے جب دیکھا کہ مہیش کے چہرے پر ہوائیاں اڑ رہی ہیں تو پوچھ ہی لیا، "کیا بات ہے بیٹا، کچھ پریشانی ہے کیا؟"

مہیش ڈر گیا کہ کہیں ماما سمجھ تو نہیں گئے کہ اس کے دل میں کیا گناہ پنپ رہا ہے. چندر ماما نے ہی اسے اس کشمکش سے بچا لیا،
"لگتا ہے گرمی نے تمہاری حالت خراب کر دی ہے. سٹشن رسائی کے ایک ٹھنڈا پی لینا، ٹھیک؟"

مہیش نے ہاں میں سر ہلا ہوئے چین کہ سانس لی. لیکن دن بھر بار بار چندہ مامی کو لے کر عجیب عجیب خیال اس کے دل میں آتے رہیں. شام تک سارے کام کرتے کرتے، اس کا دل ان باتوں سے تھوڑا بھٹکا تو وہ پھر عام ہو گیا.

شام کو تارا کو اسکول سے لینے کے بعد اسے گود میں کھلتے کھلتے ماما کے ساتھ گھر لوٹتے لوٹے، وہ صبح کہ واقعات کو بھول گیا.

چندہ کھانا تیار کر سب کا انتظار کرنے لگی. قریب 8 بجے تینوں گھر پہنچے. تارا اور مہیش کو پاس کے ایک باغ میں چندر گھمانے لے گئے تھے. سب نے کھانا کھایا اور پھر چندر اندر کچھ دیر آرام کرنے چلے گئے. قریب 10 بجے وہ نکلنے والے تھے.

پھر تارا اور مہیش ساتھ میں ٹی وی دیکھنے لگے. چندہ بھی دیکھ رہی تھی. چور نگاہوں سے وہ بار بار مہیش کو دیکھ رہی تھی. لیکن مہیش تارا کے ساتھ کھیلنے میں مصروف تھا.

تیار ہو کر چندر سائٹ کے لئے چل پڑے. انہیں الوداع کر ووہ تارا کو لے کر اندر چلی گئی. مہیش باہر ٹی وی دیکھتا رہا. تھودي دیر بعد تارا سو گئی. چندہ دن میں سو چکی تھی. اسے ابھی نیند نہیں آ رہی تھی. اس نے سوچا باہر جا کر ٹی وی دیکھ لے. ساتھ ہی مہیش سے کچھ دیر گپ شپ ہو جائے گی.


باہر گئی تو دیکھا مہیش وہیں توشک پر سو گیا تھا اور پسینے سے بھیگا پڑا تھا. ٹی وی اب بھی چل رہا تھا. وہ سمجھ گئی کہ دن بھر کہ تھکاوٹ کی وجہ سے وہ ٹی وی دیکھتے دكھتے سو گیا. اچانک اسے یاد آیا کہ پنکھا تو بند تھا. مہیش پسینے میں لت پت تھا.

جا کر جب وہ پنکھا چالو کرنے گئی تو دیکھا کہ سوئچ تو چالو تھا. اس نے سوئچ کو کئی بار چال بند کیا اور رےگلےٹر کو بھی خوب گھمایا لیکن پنکھا چلنے کا نام نہیں لے رہا تھا. گرمی بھی بہت تھی. مہیش پر اسے رحم آنے لگی. پہلے اس نے ٹی وی بند کیا.

ٹی وی بند ہوتے ہی اچانک ایک دم امن ہو گئی اور مہیش جگ گیا. اٹھ کر اس نے دیکھا کہ مامی نے ٹی وی بند کر دیا ہے. پھر اس کا دھیان اپنے حال پر آیا. ہاتھ سے اس نے اپنا چہرہ پوچھا اور پنکھے کہ طرف دیکھا. پھر چندہ کہ طرف دیکھا.

"پنکھا شاید خراب ہو گیا ہے گولو."، چندہ بولی. مہیش تھوڈا كھيج گیا. اتنی گرمی میں بن پنکھے کے دوبارہ سو پانا مشکل تھا. تبھی چندہ بولی، "اندر چلے چلو، پنکھا چل رہا ہے. تارا بھی سو گئی ہے. تم بھی آ جاؤ. یہاں تو سو نہیں پاؤگے." بولتے بولتے ہی چندہ کے ذہن میں متعدد امکانات کے خیال اٹھے. کان کے قریب ایک ہلکی سی سهرن محسوس ہوئی.

مہیش لفظی تھکا ہوا تھا اور اسے کافی نیند آ رہی تھی. وہ کچھ نہیں بولا اور اٹھ کر سر کھجاتے ہوئے اندر جاگر بستر کہ بائیں طرف پیٹ کے بل لیٹ گیا. تارا بستر کے درمیان میں سو رہی تھی.

چندہ نے ہال کہ لائٹ بجھا دی اور خود بھی بیڈروم میں چل پڑی. اب بھی وہ ساڑی پہنے ہوئے تھی. زیادہ تر گرمی میں وہ صرف ایک مےكسي (بڑی ڈھیلی ڈھالي اور طویل نائیٹی) پہنا کرتی تھی. اندر کچھ نہیں. ابھی تک کپڑے تبدیل کرنے کا موقع اسے نہیں ملا تھا. اس کے دل میں تھوڑا سنکوچ بھی تھا. من کا گناہ بھی اسے پریشان کر رہا تھا. اسے لگا کہ اگر اس نے مےكسي پہن لی تو رات میں کہی کچھ غیر اخلاقی نہ ہو جائے. اس لئے ساڑی پہنے ہوئے ہی سونا اس نے مناسب سمجھا.


اگرچہ رات کا وقت تھا اور اندھیرا بہت تھا وہ مہیش کافی حد تک صاف صاف دکھائی دے رہا تھا. کہنی کے بل وہ بستر سے تھوڈا اٹھ کر مہیش کو دیکھنے لگی. اگرچہ وہ اب بھی دنیا کہ نظر میں بچہ ہی تھا، چندہ اس کے مانسل جسم کو دیکھ کر حوصلہ افزائی ہو رہی تھی. مہیش بیشتر لڑکوں کہ طرح ہاف پینٹ پہنے ہوئے تھا. کافی هرشٹ تصدیق تھا. چندہ کہ نظر خاص طور سے اس کے پیروں کے درمیان گھور رہی تھی. اسے یاد تھا کہ اس نے مہیش کی جنس کہ ابھارن کو دیکھا تھا جس سے وہ سمجھ گئی تھی کہ مہیش ایک بہت بڑا لنڈ کا مالک ہے.

گرمی تو تھی ہی، ساتھ میں چندہ کے تن میں آہستہ آہستہ جو آگ سلگ رہی تھی اس نے اس کی نیند حرام کر رکھی تھی. آگ میں جلتی وہ کچھ سمجھ نہیں پا رہی تھی کہ وہ کیا کرے. سہی غلط کا کھیل اب بھی اس کے دل میں جاری تھا. وہاں مہیش کے موٹے لںڈ کا توجہ اس پگلا رہا تھا اور یہاں اسک چوت میں جو آگ لگی تھی، اسے ٹھنڈا بھی کرنا تھا. بہت دیر تک اسی ادھیڑ بن میں جلتے جلتے آخر تن کہ آگ نے دماغ کے دودو کا فیصلہ قرار دیا.

اب جو بھی چندہ کے ذہن میں چل رہا تھا اس کا ناطہ نہ تو اس بات سے تھا کہ وہ مہیش کہ مامی ہے، اس کے ماں یکساں، نہ تو اس بات سے کہ مہیش اس سے کافی چھوٹا تھا، نہ اس بات سے کہ اس کی بیٹی تارا بھی اسی بستر پر تھی اور نہ اس بات سے کہ اس کا شوہر اسيكے لئے اتنی رات میں محنت کر رہا تھا.

اس وقت وہ ایک ناری نہیں ایک عورت تھی جسے ایک مرد چاہئے تھا. اس کی کوشش صرف اپنی چوت میں ایک لںڈ ڈلوانے کہ تھی. اس کے تن بدن میں آگ لگی تھی اور آگ میں جلتی وہ اس آگ کو بجھانے چاہتی تھی. اسے بجھانے کا ایک ہی طریقہ اسے سفارش.
وہ بستر سے اٹھ کھڑی ہوئی اور جلدی سے اپنی ساڑی اتار پھینکی. پھر تارا کو دھیرے سے بستر کے کنارے کھسکا کے اس اور مہیش کے درمیان لیٹ گئی. اس کی سانسیں تیز چل رہی تھی. ڈر بھی اسے خوب لگ رہا تھا، لیکن جس راستے وہ نکل چکی تھی، وہاں سے واپسی کے بارے میں سوچنے کے قابل اس کی ہوس نے اسے نہیں چھوڑا تھا.

مہیش کے بالکل قریب جا کر اس نے اپنے بلاس کے اوپر کے دو بٹن کھول دئے. اب اس کے بوبے آدھے باہر جھلک رہیں تھے. اب اس نے پیٹیکوٹ کو کھینچ کر اپنی چڈڈھي تک کر لیا. اس کی گدرے گوری ٹاںگے اور مست دودھیالے جاںگھے رات کے اندھیرے میں بھی چمک رہی تھی. پھر وہ مہیش کہ طرف پلٹی اور بلاس کا ایک اور بٹن کھول دیا. پھر بائیں نپل کو ہلکا سا برا کے باہر کھینچ لیا. اب اس نے آنکھیں بند کہ اور آپ کی ران کو مہیش کہ ران پر ایسے رکھ دیا کہ اس کا لںڈ اسکی ران پر محسوس ہونے لگا. اس کی سانسیں تیز چل رہی تھی اور دل گویا دھڑكتے دھڑكتے پھٹ جانے والا تھا. اب وہ صرف انتظار کر سکتی تھی. گرم سانسوں کے ساتھ وہ مہیش کے کچھ کرنے کا انتظار کرنے لگی.

جی ہاں، اسے ڈر لگا تھا کہ کہیں مہیش نے اسے دتكار دیا اور چندر سے کہہ دیا تو کیا ہوگا؟ لیکن تن کہ شعلہ دماغ کو ٹھیک سے سوچنے بھی نہیں دے رہی تھی.

تھوڑی دیر بعد اسے اپنی ران پر مہیش کے لںڈ کے بڑھنے کا احساس ہوا. ایک بار تو اس کا دل دھك رہ گیا. کیا اس 18 سال کے لڑکے کا لنڈ اس کے شوہر کے لںڈ سے دگنا بڑا ہے؟ اس نے ہلکے سے آنکھیں کھولی تو دیکھا کہ مہیش اٹھ چکا ہے اور آنکھیں پھاڑ پھاڑ کے اسے دیکھ رہا ہے. کبھی اس کے ادھنگے ببلو کو تو کبھی اس کی گوری رانوں کو. لیکن وہ ڈرا بھی ہوا تھا. سمجھ نہیں پا رہا تھا کیا کرے. بس یہی موقع تھا. چندہ نے نیند میں پلٹنے کا بہانہ کرتے ہوئے پیٹھ کے بل لیٹ گئی. ٹاںگے موڈ کر اٹھا لی جس سے اس کی پوری ٹاںگیں ننگي ہو گئی. اور نیند کے ہی بہانے اس نے اپنے بلاس میں ہاتھ ڈال اپنے بايے بوبے کو ننگا کر دیا اور مہیش کا انتظار کرنے لگی.


/یہاں مہیش کہ حالت خراب تھی. اس کی چندہ مامی کے کپڑے نیند میں اتھل پتھل ہو گئے تھے جس کی وجہ سے ان کا بلاس آدھا کھلا ہوا تھا اور ان کا ایک ببے کا نپل باہر جھانک رہا تھا. اف ان گورے گورے بادل جیسے بوبے. ان کی ٹاںگے ننگی تھی ان کی گدراي رانوں کو دیکھ مہیش کا جنس تن گیا تھا. اس سے پہلے مامی کے پاؤں اس کے اوپر تھے. اس کا دل زوروں سے دھڑک رہا تھا اور سانس تیز ہو چلی تھی. اس نیم برہنہ حالت میں اس نے کبھی کسی عورت کو اتنے قریب سے نہیں دیکھا تھا. اس کا جنس پھول کے خوب موٹا اور خوب سخت ہو چکا تھا. اسکے لںڈ کہ ایسی حالت کبھی نہیں ہوئی تھی.

مامی کے سانس لینے کے ساتھ ان کی چھاتی بھی اوپر نیچے ہو رہی تھی. مامی کے ہونٹ ادھكھلے تھے. اور ان کی جاںگھے ... مہیش ہوش کھو کر مدہوش ہونے لگا تھا. اسے ہلکا ہلکا شک تھا کہ چندہ یہ جان بوجھ کے کر رہی تھی، لیکن اگر شک غلط نکلا تو؟

ادھر چندہ بھی بے چین ہو رہی تھی. وہ جانتی تھی کہ مہیش پر من پسند اثر ہو چکا ہے. پھر بھی وہ کچھ کر نہیں رہا تھا. شاید ڈر گیا تھا. اس نے سوچا کہ وہی کچھ شروات کردے تو؟ لیکن اگر مہیش برا مان گیا یا ضرورت سے زیادہ ڈر گیا تو؟

دونوں شہوانی، شہوت انگیز ہو چکے تھے. چندہ کہ چوت گیلی اور گرم ہو چکی تھی. وہیں مہیش کا لںڈ بھی مکمل طور پر تیار تھا اور ریس رہا تھا. ایک مرد اور ایک عورت، چدائی کا فطری کھیل کھیلنے کے لئے بے چین اور آتر تھے لیکن دونوں کے دل میں سماج کے بنائے قوانین اندر سے ڈر کے طور پر انہیں روکے ہوئے تھے.

ہوس اور اخلاقیات کا یہ جدوجہد کتنی دیر تک چل سکتا ہے. چندہ اور مہیش کے لئے یہ جدوجہد قریب 3 منٹ تک چلتا رہا جس کی وجہ سے دونوں کہ كاموتتےجنا بڈھتی جا رہی تھی. آخر میں دونوں اتنے مشتعل ہو گئے کہ چندہ نے کروٹ بدل کے مہیش کہ طرف چہرہ کر لیا اور پھر اپنی بائیں ٹانگ کو اس کے اوپر رکھ دیا. اسی وقت مہیش کا ہاتھ چندہ کہ ران پر جا پہنچا. چندہ نے آنکھیں کھول دی. مہیش کو نیم باز آنکھوں کہ پیاسی نظروں سے اس نے دیکھا اور اس سے لپٹ گی. مہیش نے بھی اسے بھینچ لیا اور اپنے ہونٹ اس کے ہوںٹھو پر رکھ دئے. آہستہ آہستہ دونوں نے چمبن کرنا شروع کیا. مہیش چندہ کہ ران کو سہلا رہا تھا. چندہ بہت زیادہ مشتعل ہو چکی تھی. مہیش کے ہوںٹھو کو جور جور سے چوسنے لگی اور اسے اپنے اوپر کھینچنے لگی.

مہیش نے بھی اپنی زبان اس کے منہ میں گھسا دی اور اس کے اوپر چڑھ گیا. کپڑے پہنے ہوئے ہی، قدرت سے مجبور دونوں ایک دوسرے سے رگڑنے لگے. چندہ کو اس کے موٹے لںڈ کا احساس ہونے لگا تھا. لیکن اس رگڈ سے اس کا جی نہیں بھر رہا تھا. اس کی چوت پانی رہی تھی اور اسے صرف مہیش کا موٹا لںڈ ٹھنڈا کر سکتا تھا.

اس نے مہیش کو ہٹانے کہ بہت کوشش کہ لیکن مہیش اپنے لںڈ کو شاید پتلون پھاڑ کر اس کی چوت میں اتارنا چاہتا تھا. بہت مشکل سے ہی وہ اس سے الگ ہوا. اس کے ہٹتے ہی، چندہ اٹھ بیٹھی. مہیش اس کے سامنے ہی بیٹھا تھا. چندہ نے بلاس کا ایک اور ہک کھولتے ہوئے، آنکھوں ہی آنکھوں میں مہیش کو مدعو کیا. مہیش سمجھ گیا. جھٹ سے اسکا بلاس اتار پھینکا. برا نکالنے میں اسے مشکل ہو رہی تھی تو چندہ کو ہلکی سی ہنسی آ گئی. مہیش جھینپ گیا. چندہ نے خود ہی برا اتار دی.




اب اس کے گورے گورے گول گول بوبے اپنے پورے جلوے کے ساتھ اندھیرے میں چمک اٹھے. مہیش آنکھیں پھاڑ پھاڑ کے انہیں دیکھنے لگا. چندہ نے اس کا ہاتھ پکڑ کے اپنے بوبو پر رکھ دیا. انہیں دباتے ہی مہیش چونک گیا. اتنے ملائم بوبے! اس نے انہیں بے رحمی سے مسلنا شروع کر دیا. چندہ کے منہ سے سسکاری نکال پڑی، بولی، "ہای. آرام سے گولو بیٹا، اكھاڈ دو گے کیا؟"

"درد ہو رہا ہے کیا؟" مہیش نے پچھا.

"اتنی زور رگڑوگے تو درد نہیں ہوگا؟"

"اچھا چلو انکا درد غائب کر دیتا ہوں مامی." کہتے ہوئے مہیش نے اس کے ایک بوبے کو چوم لیا. چندہ کو مانو کوئی کرنٹ لگ گیا ہو. دوسرے بوبے کو وہ ہلکے ہاتھ سے دباتا رہا. چندہ کہ چوت اتنا پانی چھوڑ رہی تھی کہ اس کی پیںٹی گیلی ہو گئی تھی.

چندہ نے پھر مہیش کو بڑی مشکل سے اپنے سے الگ کیا اور اوںگلی سے نیچے کہ طرف اشارہ کیا. مہیش سمجھ گیا. اس نے اس کے پیٹیکوٹ کا ناڈا کھول دیا اور پیںٹی اؤر پیٹیکوٹ کو ایک ساتھ اتار دیا. پہلی بار مکمل طور پر ننگی عورت کو دیکھ مہیش کو لگا کہ وہ ابھی جھڈ جائے گا. تبھی چندہ نے اس کی پتلون کو کھینچنا شروع کر دیا. مہیش بھی ننگا ہو گیا.

اس کے لںڈ کو دیکھ کر چندہ کے چہرے کا رنگ اڑ گیا. قریب 8 انچ لمبا تھا. خوب موٹا بھی. پتہ نہیں اس کا کیا ہوگا؟ اچانک جیسے اس نے دل میں دیکھ لیا کہ اس کا کیا ہو گا اور وہ مسکرائی. مہیش کے لںڈ کو سہلانے لگی. مہیش نے آنکھیں بند کر لی. اب چندہ سے رہا نہیں جا رہا تھا. جھٹ سے لیٹ گئی اور مہیش کو اپنے اوپر کھینچ لیا.

مہیش کے لںڈ کو پکڑ کر چوت میں ہلکا سا اتار دیا. مہیش کو چوت کہ گرمی اور گیلاپن جیسے ہی محسوس ہوئے اس نے كھچچ سے پورا لںڈ اندر اتار دیا. چندہ کے منہ سے ایک چیخ نکال گئی اور آنکھوں سے آنسو نکال پڑے.

مہیش ڈر گیا اور چندہ کو دیکھنے لگا. قریب آدھے منٹ کے بعد چندہ کو کچھ ہوش آیا. مہیش کا لںڈ ابھی بھی پورا کا پورا اس کی چوت میں سمايا ہوا تھا. اسے لگ رہا تھا جیسے اس کے بچہ دانی کو پھاڑ کے اسکا لںڈ اسکے پیٹ تک پہنچ گیا ہے. مہیش کہ آنکھوں میں اس نے دیکھا تو اسے سہما ہوا پایا. چندہ مہیش کے کان کے پاس ہونٹ لائی اور بولی، "اتنی زور پےلا ہے یار کہ یہ تو ہونا ہی تھا. گھبراو مت، کتیا سمجھ کے پےلو. آج خوب چود میرے بادشاہ. بہت وقت سے کسی نے میری چوت نہیں پھاڑي ہے. آج پھاڑ دے. کتنا بھی چيكھو، کتنا بھی چللاو، خبردار اگر چودنا روک تو. چود مجھے حرامی، چود. "

یہ سن کر جتنا حیرت مہیش کو ہوا اس سے زیادہ چندہ کو ہوا. وہ نہیں جانتی تھی وہ یہ سب بھی بول سکتی تھی. لیکن ایسی گندی بولی سن، مہیش اور اتیجت ہو گیا. وہ بھی كھيالو میں لڑکیوں کو بھدی بھدی گالیاں دے کے چودتا تھا. سو، یہاں اسے موقع مل گیا.

"کیوں کتیا؟ مجھے نہیں پتہ تھا کہ تو اتنی بڑی رنڈی ہے. تجھپے رحم کون کھاتا؟ تو چہ رو چاہے چللا، مئی تو تیری بر پھاڑ کے ہی دم لوں گا. راڈ مامی، چھنال کہیں کہ، میرا لؤڑا پسند ہے تجھے؟" ، دھکے لگتا ہوا ووہ بولا.

اگرچہ اتنے موٹے لںڈ سے چدتے ہوئے چندہ کو تھوڑی تکلیف ہو رہی تھی، لیکن اسے مزا بھی بہت آ رہا تھا، "ہاں میرے مادھرچود بھاجے، تیرا لؤڑا مجھے بہت پسند ہے. روز پیلنا ایسے ہی مجھے، میں تو تیری ہی رنڈی ہوں، کتیا ہوں تیری، خوب چود. ذرا اور زور سے دھکا لگا نا، کتے. ذرا جلدی جلدی چود نہ. تھک گیا کیا؟ "


"تھک گیا ہوگا تیرا شوہر، تبھی تو تو رنڈی بن گئی ہے."

اس طرح کہ بھدی باتیں کرتے ہوئے مہیش اسے چودے جا رہا تھا. پورے کمرے میں اس کے لنڈ کے اس کی چوت کے دیوار سے ہوتے رگڑ سے ان کے رس کے مرکب کہ كھشب پھیل گئی تھی. ان کی اهے، گالیاں اور چندہ کہ ہلکی ہلکی چيكھو کے درمیان، چدائی کہ پھچچ پھچچ کہ آواز بھی گونج رہی تھی.

تھوڑی دیر میں مہیش کہ رفتار تیز ہو گئی. دونوں صرف آہیں بھر رہیں تھے اور کمرے میں صرف چدائی کا شور تھا. پھر اچانک مہیش نے ایک زور کا دھکا لگایا اور جھڈ گیا. چندہ کو ناف کے اندر اندر، خوب اندر اس گرم ویرے کا احساس ہوا تو وہ بھی خود کو روک نہیں پائی اور اسے زور سے بھینچ کے جھڈ گئی .13


تھوڑی دیر بعد جب دونوں کو ہوش آیا تو چندہ مسکرا رہی تھی اور مہیش شتل ہو چکا تھا. اسے بہت نیند آ رہی تھی. دن بھر کے گھومنے پھرنے اور پھر زندگی میں پہلی بار اتنی زبردست چدائی کے بعد وہ کافی تھک چکا تھا. وہ صرف سوچ رہا تھا کہ سب نے اس سے کہا تھا کہ پہلی بار مرد بہت جلد جھڈ جاتا ہے. كيك وہ پہلے ہی مٹھ مار چکا تھا اور شاید کیوںک وہ اتنا تھکا ہوا تھا، وہ سمبھوگ کا اتنا لطف اندوز پایا. چدائی کے بعد وہ اتنے خوشی اور لطف کہ احساس کر رہا تھا کہ اس کے چہرے پر بھی ایک ہلکی سی مسکراہٹ تھی.

چندہ تو جیسے آسمان میں تھی. پہلی بار کسی نے اسے ایسے چودا تھا. اپنے شوہر سے وہ کبھی ایسے نہیں چدواتی تھی. اگرچہ چندر اسے خوب بڈھيا چودتے تھے اور دونوں زبانی سمبھوگ کا بھی لطف لیتے تھے، اس طرح گالیاں دیتے ہوئے اور اتنے بڑے اور موٹے لںڈ سے چدنے کا سکھ کچھ مختلف ہی تھا. شوہر سے چدنا تو فطری ہے لیکن اپنے بھاجے سے چدنے میں جو مہم جوئی تھا وہ اس کے اور کہاں ملتا.

اسی درمیان مہیش دھیرے سے چندہ کے اوپر سے اٹھنے لگا. جب اسکا لںڈ اسکی چوت سے باہر نکلنے لگا تو چندہ نے مہیش کو روک لیا. مہیش نے سوالیہ نظروں سے اسے دیکھا تو چندہ نے آنکھیں بند کر کے اپنے ہونٹ اس کی طرف بڑھا دئے. مہیش سے رہا نہ گیا. وہ بھی اسپر جھک گیا اور دونوں پھر ایک گیلے اور گہرے چمبن میں ڈوب گئے.

تھوڑی دیر بعد جب دونوں کے ہونٹ الگ ہوئے تو چندہ کو محسوس ہوا کہ اس کی چوت پھر گیلی ہو چکی تھی اور مہیش کا لںڈ پھر تن گیا تھا. بغیر وقت گواے مہیش نے لںڈ کو چوت میں پیلنے کا کام پھر شروع کر دیا. اس بار دونوں کچھ نہیں بول رہیں تھے. دونوں کہ آنکھیں بند تھی. صرف تیز سانس چل رہی تھی. چندہ درمیان میں سکھ سے کراہ رہی تھی اور ہلکے ہلکے چیخ رہی تھی. ان کی چدائی پھر انتہائی پہ پہنچ گئی. جب مہیش آخر میں چندہ کے اندر جھاڈا تب تک چندہ تین چار بار جھڈ چکی تھی اور پست ہو چکی تھی.

جب مہیش نے اپنا لںڈ باہر نکالا تو اسپر تھوڈا خون تھا. چندہ کہ چوت میں ہلکا درد ہو رہا تھا اور اس کی چوت ہلکی ہلکی پانی بھی رہی تھی. مہیش کا لںڈ بھی دکھ رہا تھا اور ہلکا سا جل رہا تھا. دونوں پسینے سے بھیگے ہوئے تھے. چندہ نے اٹھ کر مہیش کو چوما اور اس کا هاتھ پکڑ کر اسے باتھ کہ طرف کھینچنے لگی. دونوں گئے اور اپنے اپنے گپتاگو کو دھونے لگے. مہیش پیشاب کرنے چلا گیا تو چندہ کو بھی پیشاب کرنے کا خیال آیا. مہیش کے باہر نکلنے کا انتظار کرنے کہ بجائے اس نے وہیں باتھ روم میں پیشاب کر لینا مناسب سمجھا. پھر وہ جا کر لیٹ گی. اس کے لیٹتے ہی مہیش بھی باتھ سے واپس آمدنی اور پتلون پہننے لگا. چندہ بھی اٹھی اور جا کر ایک نائیٹی پہن لی. پھر جب بستر میں واپس آئی تو مہیش سو چکا تھا.

چندہ اس کے سوا لیٹ گئی اور اس کے سینے سہلانے لگی. پھر اس کے ہاف-پتلون میں ہاتھ ڈال کر اسے نیچے کھینچ لیا اور اس کے لںڈ اور ٹٹٹو سے کھیلنے لگی. مہیش کے لںڈ اور گوٹے، تینوں پہ خوب بال تھے جنہیں وہ سہلانے لگی. مہیش گہری نیند میں تھا پھر بھی اس کے گوٹے اس سہلانے کہ وجہ سے کافی حرکت کر رہیں تھے اور اسکا لںڈ بھی آہستہ آہستہ تننے لگا.

چندہ جانتی تھی کہ اس بار مہیش نہ تو اٹھے گا نہ اسے چودیگا. اس کی چوت بھی چھل چکی تھی. ایک اور بار اگر وہ چدتی تو کل چلنے پھرنے میں بھی تکلیف ہوتی. لیکن نیند ابھی اسے آ نہیں رہی تھی. اچانک اس کے ذہن میں ایک خیال آیا اور وہ اٹھ کر مہیش کے لںڈ کے پاس گئی اور اسے سونگھنے لگی. اب بھی اس کے لںڈ سے ویرے کے بعد نکلنے والا چیکنا دروي ریس رہا تھا. اس کی كھشب اسے اچھی لگ رہی تھی. اس کی چوت بھی ہلکی سی مچلنے لگی. اس نے جیب سے لںڈ کے سرے کو چاٹ لیا اور اس کے رس کا ذائقہ چکھا جو اسے بہت اچھا لگا. پھر تو اس نے مہیش کے لںڈ کو اپنے مںہ میں لے لیا اور اسے ہلکے ہلکے چوسنے لگی. پھر چوستے ہوئے اس نے اس کے لںڈ کو اپنے مںہ سے نکالا اور مہیش کہ طرف دیکھنے لگی. مہیش سو رہا تھا لیکن اس کا لنڈ ابھی جگا ہوا تھا.

پھر کیا تھا، چندہ گرسنہ سی اسکے لںڈ کو چوسنے اور چاٹنے لگی. بیچ بیچ میں وہ اس گوٹو کو ایک ایک کرکے اپنے مںہ میں بھر لیتی اور زبان سے خوب چاٹتي. اسکا لںڈ مکمل منہ میں لینے کی کوشش کرتی لیکن لںڈ اسکے حلق میں رشوت جاتا. اسے بدبو آ جاتی لیکن اس کی چوت خوب رسنے لگی تھی. درمیان درمیان ایک بال اس کے منہ میں رہ جاتا تو ایک هاتھ سے وہ بال نکلتی اور دسرے هاتھ سے مہیش کے لںڈ کو رگڑتي. پھر مہیش کو چوستے چوستے، ایک ہاتھ سے وہ اپنی چوت بھی سہلانے لگی. بالآخر مہیش نیند میں ہی جھڈ گیا. چندہ نے جیسے سی اسکا ویرے نکلتے دیکھا اس نے اسکا لںڈ اپنے مںہ میں لیا اور چوس چوس کر سارا ویرے اپنے منہ بھے بھر لیا. اس نے سوچا کہ وہ باتھ روم جا کے اسے تھوک دے. اس کا منہ مکمل بھر چکا تھا. لیکن مہیش ابھی خالی نہیں ہوا تھا. اب بھی اس کے لںڈ سے ویرے نکلا جا رہا تھا. اسکا ویرے گرم تھا اور اس کی كھشب تیز تھی. باقی ویرے چندہ نے اپنے ہاتھ میں جمع کر لیا. بھرے ہوئے ہاتھ اور بھرے ہوئے منہ سے چندہ باتھ جانے کے لئے اٹھ رہی تھی کہ غلطی سے تھوڈا ویرے اس کے گلے سے اتر گیا.

چندہ کو کچھ بھی پریشانی نہیں ہوئی. پھر تو چندہ سارا ویرے نگل گئی. نگلنے کے بعد منہ میں باقی باقی ویرے کا ذائقہ اور اس کی كھشب اسے بہت اچھے لگ رہے تھے اور اسے اتیجت بھی کر رہیں تھے. پھر اس نے اپنے هاتھ میں بچے ویرے کو بھی سوگھنا، چاٹنا اور پینا شروع کر دیا. ساری انگلیوں کو چاٹ چاٹ کے صاف کرنے کے بعد اس نے مہیش کے لںڈ کو بھی چاٹ چاٹ کے صاف کیا. پھر اپنی انگلی کو اپنی چوت سہلانے پر لگا دیا. کچھ دیر بعد جب وہ جھڑنے لگی تو خود کے رس کو بھی اس نے خوب چہٹا اور اس کے ذائقہ اور كھشب کا خوب لطف لیا. پھر باتھ جاکر خود کو صاف کیا اور مہیش کے حلف پتلون میں ہاتھ ڈال کر، اس کی کندھے پر سر ٹکا کر اور اس کی رانوں پر ران چڑھا کر وہ سو گئی.

مہیش جب صبح نیند سے جاگا تو اسے پیشاب لگی تھی جس کی وجہ سے اسکا لںڈ تنا ہوا تھا. ہوش آتے ہی اسے محسوس ہوا کہ چندہ کا ہاتھ اس کے لںڈ کو پكڈے ہوئے تھا. اس کے هاتھ کے رابطے سے اسکا لںڈ اور کھڑا ہو گیا تھا اور مہیش بھی اتیجت ہی گیا. اسے خیال ہوا کہ شاید چندہ رات میں اسکا لںڈ چوس رہی تھی یا شاید وہ اس کا خواب تھا. لیکن چندہ کو وہ دو بار چود چکا تھا، یہ اسے اچھے سے یاد تھا. چندہ کا هاتھ اس نے الگ کیا اور اس کی ٹانگ کو اپنے اوپر سے اٹھا کر جب وہ موتنے جانے کے لئے اٹھا تو چندہ کہ نیند بھی کھل گئی. مہیش نے اشارے سے اسے سمجھا دیا کہ وہ باتھ روم جا رہا ہے تو چندہ نے پھر آنکھیں بند کر لی اور سو گئی.

لوٹ کر جب مہیش آیا تو دیکھا کہ نیند میں چندہ کہ نائیٹی اسکی جاںگھوں سے اوپر سرک چکی تھی. چندہ پیٹھ کے بل لیٹی تھی اور طویل اور گہری ساںسے لے رہی تھی جس کی وجہ سے اس کے بوبے اوپر نیچے گوٹے لگا رہیں تھے. مہیش کا لںڈ مچلنے لگا اور تننے لگا. اس نے نائیٹی کو اور اٹھا دیا اور چندہ کہ چوت کو اس کی رانوں کے درمیان تلاش کرنے لگا، چندہ بھی نیند سے جاگ گئی اور اپنے پاؤں پھیلا لیے. مہیش نے اپنی اوںگلی اسکی چوت میں اتار دی. وہ اپنی اوںگلی سے ہلکے ہلکے اس کی چوت کو سہلانے لگا. چندہ کے چوت گیلی ہونے لگی تھی. وہ اس کی طرف پلٹ گئی. اور اسے اپنے اوپر کھینچنے لگی. مہیش اسپر چڑھ بیٹھا اور لںڈ کو اس کی چوت پر رگڑنے لگا. چندہ بیتاب ہوئے جا رہی تھی. اس نے مہیش کے لںڈ کو پکڑا اور چوت میں گھسا دیا. مہیش نے ایک جهتكے میں اس کی چوت میں اپنے پورے لںڈ کو گھسا دیا تو چندہ کہ کراہ کے ساتھ ساتھ اسے ایک اجنبی آواز بھی سنائی پڑی. یہ آواز چندہ نے بھی سنی. تارا جگ رہی تھی. هڈبڈاهٹ میں اس نے مہیش کو اپنے سے الگ کیا اور گھڑی کہ طرف دیکھا. تارا کے جاگنے کا وقت ہو گیا تھا. اسے تیار کر کے اسکول بھیجنا تھا. وہ تارا کو اٹھا کر باتھ لے گئی.

مہیش من مسوستے اور لںڈ مسلتے رہ گیا. تارا کو نےهلا دھلا کے چندہ نے اسے تیار کیا اور کچن میں ناشتا، چائے اور تارا کے تپھپھن کہ تيياريو میں لگ گئی. مہیش تارا کے ساتھ کھیلنے لگا. تھوڑی دیر میں تارا کو اسکول لے جانے والی بس آئی تو چندہ اسے چھوڑنے باہر چلی گئی. اس درمیان مہیش نے بھی صبح کے کام ختم کر لئے.

تارا کو جب وہ چھوڑ رہی تھی تب ڈرائیور اسے خوب گھور رہا تھا. اچانک اسے خیال آیا کہ کیوںک وہ صرف ایک نائیٹی پہنے تھی اور ہلکی ہلکی ہوا چل رہی تھی، اس کے بدن کہ ایک ایک گولائی صاف صاف سمجھ آ رہی تھی. ڈرائیور کہ نظروں میں بھری ہوس کو وہ بھانپ گئی اور اس کی چوت میں ایک ہلکی سی لہر اٹھی جس سے اس کے سارے جسم میں ایک دلچسپ سهرن دوڑ گئی. دل میں متعدد خیال دوڑنے لگے. جب تک وہ گھر میں واپس آئی، اس کی چوت پھر سے گیلی ہونے لگی تھی. اب چندر کو آنے میں دو گھنٹے باقی تھے. دو گھنٹے وہ کیا کرنے چاہتی تھی، یہ بتانے کہ ضرورت یہاں ہے ہی نہیں. مسکراتے ہوئے وہ بیڈروم میں پیوست ہوئی.

چندہ جب کمرے میں پیوست ہوئی تو مہیش جیسے اسی کا انتظار کر رہا تھا. اسپر جھٹ سے لپکا اور اس کی نائیٹی نکال پھینکی، پھر اسے بستر پر دھکیل کے اپنی پتلون نکال کر اس پر چڑھ گیا. چندہ نے پورا زور لگا کر اسے اپنے سے الگ کیا اور اسپر چڑھ گئی. مہیش کہ سینے پر بیٹھ کر اس نے مہیش کو اشارے سے رکنے کو کہا.

اب وہ پلٹ گئی جس سے اس کی پیٹھ مہیش کے چہرے کہ طرف تھی اور آہستہ آہستہ وہ مہیش کا لںڈ اور گوٹے سہلانے لگی. مہیش چندہ کہ گاںڈ کہ گولیوں کو نظروں سے ناپ رہا تھا. چندہ کا ٹچ اسے بہت بھا رہا تھا. وہ چندہ کہ ہموار پیٹھ سہلانے لگا اور اس کے چتتڈو کو دبانے اور مسلنے لگا. اچانک اسے اپنے لںڈ پر گیلے اور ٹھنڈا رابطے کا احساس ہوا. چندہ اس کے لںڈ پر جھک گئی تھی اور اسے اپنی زبان سے چاٹ رہی تھی. ایسا کرنے کے لئے وہ مہیش کہ چھاتی سے تھوڑا اٹھ گئی تھی جس سے مہیش کو اس کے چوت کے نزدیکی فلسفہ مل رہیں تھے.

مہیش اس چتتڈو کو پھیلا کر اس کی چوت کو چھونے لگا. چندہ کو اتنا مزہ آیا کہ اس نے جھک کر مہیش کا لںڈ منہ میں لے لیا اور اپنی گاںڈ مہیش کے چہرے کے بالکل قریب لے آئی. پھر اس نے اپنی گاںڈ کو اس کے سینے پر سے اٹھا لیا جس کی وجہ سے اس کی چوت مہیش کے چہرے کے اوپر آ گی .

مہیش نے کئی فلموں میں لڈكو کو اور لڑکیوں کو بھی چوت چاٹتے ہوئے دیکھا تھا لیکن اسے اس سے کافی نفرت تھی. اسے یہ سب کافی گندا لگتا تھا. لیکن چندہ اسکے لںڈ اور ٹٹٹو کو چوس چاٹ کر اسکی اتیجنا بڑھائے جا رہی تھی. ساتھ ہی چندہ بھی شہوانی، شہوت انگیز ہو چکی تھی جس سے اس کی چوت بہت گیلی ہو گئی تھی اور اس سے رس باہر چو رہا تھا. اس کی كھشب مہیش کے دماغ پر اثر کرنے لگی تھی. چندہ کہ چوت سہلاتے سہلاتے اسے سمجھ میں ہی نہیں آیا کہ کب اس کی جیب اس کی چوت کے ہوںٹھو کو چاٹنے لگی تھی. اس کی چوت کے دو ہونٹ بہت گلابی، نرم، رسیلے تھے. مہیش انہیں کبھی چومتا، کبھی چاٹتا اور کبھی چوس لیتا. چوت کے ہونٹ جہاں مل کر ایک ہوتے تھے وہاں وہ جانتا تھا کہ چندہ کا دانا ہے. وہاں جب بھی اس کے ہونٹ یا زبان پہنچتی، چندہ اس کے لںڈ کو زور سے چوستی.

پھر مہیش نے اس کی چوت میں اپنی جیبھ کہ نوک گھسا دی. چندہ نے اس کے لںڈ کو چوسنے کہ رفتار بڑھا دی. اب مہیش اپنی زبان، ہونٹ، ناک، ٹھڈڈي اور انگلیاں، ان تمام لطف چندہ کہ چوت کو دے رہا تھا. اسے بھی اس میں خوب مزا آ رہا تھا. چندہ کہ چوت رستي جا رہی تھی جسے مہیش پیتا جا رہا تھا. اس کا رس ہلکا نمکین اور بہت ہلکا ھٹی بھی تھا اور اس کی كھشب نشیلی اور مزہ تھی.

دونوں ایک دوسرے کو چوستے اور چاٹتے رہیں. چندہ نے تو جیسے مہیش کے سر کو اپنی جاںگھوں کے بیچ جكڈ لیا تھا اور اسے اپنی چوت میں دبائے جا رہی تھی. وہیں مہیش بھی کمر اچھال اچھال کر اس کے منہ میں اپنا لںڈ ٹھوسے جا رہا تھا. تھوڑی دیر بعد اسی طرح ایک دوسرے کہ سانس روکتے ہوئے دونوں جھڈ گئے. جب چندہ پلتي تو اس کے منہ سے مہیش کا ویرے ہلکا سا ہوںٹھو کے کونے سے بہہ رہا تھا. مہیش کے تو سارے چےرے پر چندہ کا رس تھا. اسی حالت میں دونوں نے ایک دوسرے کو چومنا شروع کیا. تب دونوں کے کشتوں کا ملا جلا ذائقہ دونوں نے پایا اور پھر سے کام دیوتا کی تیر ان کے جسم کو بھےدنے لگے.

چندر کے گھر لوٹنے سے پہلے دونوں نے جانوروں کہ طرح تین بار ایک دسرے کو چودا. جی ہاں! چندہ بھی اتنے جوش سے اس کام-كريڈا میں لیں تھی کہ کبھی کبھی لگتا تھا مہیش اسے نہیں، وہ مہیش کو چود رہی تھی.

چندر کے آنے سے قریب آدھے گھنٹے پہلے دونوں نہا دھو کر تیار ہوئے اور چندہ گھر کے کام کاج میں لگ گئی. مہیش چندہ کو بار بار چھیڑ دیتا. کبھی اس کے چتتڈ پر چكوٹ دیتا تو کبھی اس کے بوبے مسل دیتا. کبھی اسے جكڈ کر اس کے چتتڈو کے درمیان لںڈ ٹکا کر اس کی گردن اور کان چوم لیتا.

چندہ بھی اس سوراخ کھانی کا خوب لطف لے رہی تھی. قریب 11 بجے چندر گھر پہنچے تو دونوں نے عام رہنے کہ کوشش شروع کر دی.

اگر ہم اور آپ ان دیکھتے تو بھانپ جاتے کہ کچھ گڈبڈ ہے، لیکن چندر نہایت ہی شریف قسم کا اور سیدھا سعد بھولا انسان تھا. اس کی شرمیلی بیوی اپنے بیٹے یکساں بھاجے کے ساتھ راسليلا رچ رہی ہے، اس بات کو وہ خواب میں بھی نہیں سوچ سکتا تھا. دونوں کے چہرے پر اس نے رونق دےكھ لیکن اس کا سبب اس نے مامی بھاجے کے درمیان کا ہنسی مذاق سمجھا.

اس بار چندر دو دنوں کہ چھٹی لے کر آیا تھا. یہ بات چندہ اور مہیش دونوں کو ہی یاد نہیں تھی. دونوں دل مسوس کے رہ گئے. حسرت بھری نگاہوں سے دونوں نے ایک دوسرے کو دیکھا. پتہ نہیں اب انہیں پھر موقع ملے نہ ملے!

دو دنوں تک چندر گھر پر ہی رہنے والا تھا. اس بات کو سوچ کر مہیش اور چندہ کافی پریشان تھے. صبح سے چندر گھر پر ہی تھا. کئی دنوں کے بعد اسے اتنی فرصت ملی تھی. دوپہر کا کھانا کھاتے کھاتے دونوں ایک دوسرے کو تباہی سے دیکھ رہیں تھے. چندر نے دیکھا کہ دونوں کے چےرو پر سویرے کہ رونق کے بجائے مایوسی چھائی تھی. وہ سمجھ نہیں پا رہا تھا کہ مامی اور بھاجے کہ اس مایوسی کی وجہ کیا تھی.

کھانا کھانے کے بعد چندر سونے چلا گیا. چندہ برتن صاف کرنے کچن چلی گئی. مہیش ٹی وی دیکھنے لگا. ہال روم میں بیٹھے بیٹھے مہیش چندہ کو دیکھ سکتا تھا. برتن صاف کرتی ہوئی چندہ کہ پیٹھ مہیش کہ طرف تھی. اس ہلتی ہوئی گول گدراي گاںڈ اسے لالايت کر رہی تھی. اسکا لںڈ تننے لگا تھا.

وہ ہلکے سے بغیر آواز کے اٹھا اور بیڈروم کہ طرف گیا. اس نے دیکھا کہ چندر ابھی تک سویا نہیں تھا لیکن اسے نیند آ رہی تھی. وہ دبے پاؤں واپس حال میں آیا اور ٹی وی کا واليوم بڑھا دیا. تبھی چندر اٹھا اور بیڈروم کا دروازہ بند کر دیا. مہیش کہ منصوبہ کامیاب ہوئی!

ابھی تک چندہ کو اس کی منصوبہ بندی کا احساس نہیں تھا. مہیش آہستہ آہستہ دبے پاؤں کچن میں گیا اور ہلکے سے چندہ کہ گاںڈ سے لںڈ سٹا کر کھڑا ہو گیا. چندہ کو اچانک اپنی گاںڈ پر مہیش کے لںڈ کا احساس ہوا تو وہ پلٹنے لگی. لیکن اس سے پہلے ہی مہیش نے اسے بھینچ لیا اور اس کی گردن چومنے لگا. چندہ اس سے الگ ہونے کے لئے چھٹپٹانے لگی تو کچھ برتن آپس میں ٹكراے اور مہیش بھی اس سے الگ ہو گیا. دونوں چندر کہ رد عمل کا انتظار کرنے لگے. دونوں سانس روکے کھڑے تھے. کچھ دیر تک جب کچھ نہیں ہوا تو مہیش سمجھ گیا کہ چندر سو گیا ہے اور دروازہ بند ہونے کی وجہ سے اس نے کچھ نہیں سنا. اس سے پہلے کہ چندہ کچھ سمجھ پاتی، مہیش نے اسے پھر جكڈ لیا. اس کے کانوں میں اس نے پھسپھسا دیا کہ ماما سو رہے ہیں.

چندہ بولی، تو کیا ہوا، اگر درمیان میں آ گئے تو، کچھ دیکھ لیا تو. تھوڈا تو صبر کرو.

نہیں، صبر نہیں، میں تو سب کروں گا، کہتے کہتے مہیش اسکی گاںڈ کو اپنے لںڈ سے کپڑوں سمیت ہی رگڑنے لگا. اس نے چندہ کو سنک سے لگا کر دبا لیا تھا. ایک ہاتھ سے اس کے ایک بوبے کو مسلتے ہوئے اور اس کی گردن کو چومتے ہوئے، دوسرے ہاتھ سے اس کی ساڑی اٹھا رہا تھا. ساڑی اٹھاتے ہوئے، اس کے رانوں کو بھی سہلا رہا تھا.

مہیش کہ حرکتیں اور شوہر کے کبھی بھی آ سکنے کا خوف مل کر چندہ کو کچھ زیادہ ہی اتیجیت کر رہیں تھے. اس کا شوہر وہیں پاس کے کمرے میں تھا اور کبھی بھی آ سکتا تھا، یہ بات اس کی چوت کو اؤر گیلی کر رہی تھی. وہ بھی مہیش کا ساتھ دینے کے لئے پلٹنے کہ کوشش کرنے لگی. لیکن مہیش اسے ہلنے نہیں دے رہا تھا. اب اس کی سسدي کو کمر تک کھینچ چکا تھا اور اس کے ہاتھ اس کی جھانٹوں سے ملاقات کر رہا تھا. چندہ سمجھ نہیں پا رہی تھی کہ مہیش کےدل میں کیا ہے. تبھی مہیش اس کے کان میں پھسپھسايا،

ایسے ہی رہنا، پلٹنا مت.

وہ چاہتی تو تھی، لیکن نہیں پلٹی. اسے بھی ہلکا ہلکا مہم جوئی ہو رہا تھا. وہ دیکھنا چاہتی تھی کہ مہیش آخر کیا نیا کرنے والا ہے. تبھی مہیش نے اس کی چڈڈھي کھینچی اور نیچے اتارنے لگا. چندہ نے اس کی مدد کہ اور نیم برہنہ ہو گئی. اب مہیش نے پھر اس کی ساڑی کو کمر تک کھینچ لیا اور اس سے چپک گیا. اس بار چندہ کو اس کے موٹے اور تانے ہوئے لنڈ کا احساس اپنی گاںڈ پر ہوا. مہیش نے اسے اپنے دباؤ سے ہلکا جھکایا اور اس کے پیروں کے درمیان ہاتھ ڈال انہیں پھیلانے کا اشارہ کر دیا. چندہ جھک گئی اور ہلکے سے پاؤں پھیلا دیئے. اب اسے اپنی چوت پر اس کے لںڈ کہ دستک دینے لگی. چندہ نے اس کی مدد کہ جس سے کہ اس کا لڈا اسکی چوت میں گھس گیا. مہیش نے چندہ کہ کمر پکڑی اور لںڈ پورا اندر تک پیل دیا. چندہ اور جھک گی. تھوڈا تو اس اكسمات وار کے درد سے اور تھوڑا لطف سے اسے اور اندر لینے کے لئے. اس نے کچن کا پلیٹپھورم پکڑ لیا اور تھوڑا پیچھے آ گئی. مہیش نے لںڈ کو تھوڈا باہر کھیںچا اؤر پھر پیل دیا. اس بار لںڈ بہت محبت سے چندہ کہ گیلی چوت میں رگڑ کے ساتھ مکمل اتر گیا. ہرش کہ ایک لہر دونوں کے چہروں پر دوڑ گئی. اتیجنا کی وجہ دونوں کہ آنکھیں بند ہو گئی اور منہ سے ہلکی آہ نکال پڑی.

اس کے بعد مہیش رکا نہیں. ایک کے بعد ایک دھکے لگانے لگا. چندہ بھی اپنی گاںڈ اسکے لںڈ پر آگے بڑھانے لگی. باہر ٹی وی چل رہا تھا اور کچن کے نل سے پانی بہہ رہا تھا. پھر بھی چندہ کہ چوت اتنی گیلی تھی اور ان کی چدائی اتنی زوردار کہ كھچچ پھچچ کہ آواز صاف سنائی دے رہی تھی. کتا-كٹٹي کا یہ کھیل دونوں کو بہت مزے دے رہا تھا. چندہ ہونٹ دبائے مہیش کے لںڈ کے مزے لے رہی تھی اور مہیش اس کی چوت کو اندر اندر تک امتیاز رہا تھا. اسی طرح کچھ دیر میں چندہ جھڈ گئی. چندہ کے جھاڑتے ہی مہیش نے اپنا لںڈ اسکی چوت سے نکالا اور اس کی گاںڈ پر مٹھ مارنے لگا. ایک دو سیکنڈ میں ہی اس نے اپنا سارا ویرے اسکی گاںڈ پر گرا دیا. سانس اور ہوش سبھالتے ہوئے دونوں ایک دوسرے کو دیکھ مسكرايے. دونوں ایک دوسرے کہ باہوں میں آ چمبن کرنے لگے. پھر دونوں نے کپڑے ٹھیک کیے. مہیش مطمئن ہوکر ٹی وی دیکھنے لگا. چندہ نے اپنی پیںٹی سے اپنی گاںڈ کو پوچھا اور ساڑی نیچے کر بچے-كھچے برتن دھونے میں لگ گئی.
اگلے دن چندر کہ چھٹی ہونے کے سبب وہ زیادہ تر گھر پر ہی رہتا. وہ کہیں باہر بھی گیا تو تارا گھر پر ہی تھی.

مہیش کے منہ تو نیا نیا خون (یا چوت کہیں؟) لگا تھا. وہ بے چینی سے تلملا اٹھا تھا. ادھر چندہ بھی موقع کہ تلاش میں تھی. دونوں آنکھوں ہی آنکھوں میں اپنی پیاس ظاہر کر رہیں تھے. لیکن کچھ ہو نہیں پایا.

بے چین پریشان سب رات کو سونے چلے گئے. چندر چندہ کو نہیں چود رہا تھا کیونکہ مہیش گھر میں تھا. وہ تو سو گیا. لیکن چندہ کہ آنکھوں میں نیند کہاں تھی. باہر مہیش بھی کروٹیں بدل رہا تھا اور اپنے دکھی لںڈ کو تسلی دے رہا تھا
رات میں کچھ بھی کرنا خطرے سے خالی نہیں تھا. خاص کر اس لئے کہ رات کو کافی سکون ہوتی ہے. 12 بج چکے تھے. كاموتتےجنا سے پریشان مہیش اٹھا اور سوچا باتھ جاکر مٹھ مر کر سو جائے گا. باتھ کہ طرف بڈھتے ہوئے اچانک بیڈروم کا دروازہ کھلا اور چندہ باہر نکلی. مہیش اچانک خوش ہو گیا. اسے لگا کچھ ہو سکتا ہے. وہ چندہ کہ طرف لپکا. چندہ هڈبڈا گئی اور جھٹ سے بیڈروم کا دروازہ بند کر دیا. مہیش کو دور ہٹایا اور پھسپھسائی:
"پاگل ہو گئے ہو؟ یہ اٹھ گئے تو؟"
"اور جو میرا اٹھا ہوا ہے؟"، مہیش اس بائیں چوچی کو مسلتے ہوئے بولا.
"دیکھو جو تم چاہتے ہو، وہ میں نے بھی چاہتی ہوں. لیکن سمجھ سے کام لو. اب ہم جو چاہتے ہیں، وہ نہیں ہو سکتا. صبر کرو بابو."
"اچھا چلو، آپ چود نہیں سکتا لیکن میری حالت بہت خراب ہے، سویا نہیں جا رہا. کچھ تو کرو مامی." کہتے ہوئے چندہ کا هاتھ پکڑ اپنے لںڈ پر پینٹ کے اوپر سے ہی رکھ دیا.
چندہ کو اپنے بھوکے بھاجے پر تھوڑی ہنسی آئی، کیوںک وہ اس سے تقریبا سمبھوگ کہ بھیک مانگ رہا تھا. لیکن اسپر پیار بھی آ رہا تھا اور رحم بھی. اس کی بھی چوت ویاکل تھی مہیش کے لںڈ کے لئے. جھٹ پٹ اس نے ایک ترکیب نکالی.

باتھ کا دروازہ کھولا اور مہیش کو اندر کھینچ کر دروازہ اندر سے بند کر لیا. پھر نائیٹی کو گھٹنوں تک كھچ کر فرش پر گھٹنوں کے بل بیٹھ گئی. جھٹ سے مہیش کہ پینٹ كھچ دی اور اس کے اكڑے ہوئے لؤڈے کو مںہ میں بھر لیا. مہیش کے منہ سے یکایک ایک آہ نکل گئی. پھر لنڈ کو منہ سے نکال لیا اور زبان سے اس کے سرے کو چاٹنے لگی. اس کی چمڑی کو کھینچ کر اس کے ننگے لںڈ کو چھومنے، چاٹنے اور چوسنے لگی. اس گوٹو کو بھی چوسا اور چہٹا. مہیش کا لںڈ اکڑ کر مکمل طور پر تیار تھا.

اب وہ اٹھی اور دیوار کہ طرف مڈ گئی. ایک پاؤں ایک چھوٹے سٹول پر رکھ کر پانی کے نل کو پکڑ لیا اور جھک گئی. مہیش جانتا تھا اسے کیا کرنا ہے. جھٹ سے نشانہ لگایا اؤر لںڈ کو چھوٹ میں داغ دیا. چندہ اب نہ تو مکمل طور پر گیلی تھی نہ پھیلی تھی، نہ ذہنی طور پر اس کے اس وار کے لئے تیار تھی. اسے لگا مہیش تھوڈا آہستہ شروات کرے گا. لیکن مہیش نے تو تو میں سائز پورا لںڈ اكسمات ہی اسکی چوت میں گھسےڈ دیا تھا. سکھی چھوٹ میں اتنا رگڑ ہوا اور اتنا درد ہوا کہ اسک آنکھوں کے آگے اندھیرا چھا گیا. کچھ ہی لمحوں میں اندھیرا جب صاف ہوا تو اسے احساس ہوا کہ مہیش توه پرزور وار پر وار کر رہا تھا. اب درد اسے لطف دینے لگا تھا. اس بدحواس، بھسن درد کہ صورتحال میں اسے ایک نشہ سا لگتا ہو رہا تھا جس سے اسے کچھ مختلف قسم کی مہم جوئی ہو رہا تھا. وہ بھی چتتر اچكا اچكا کر چد رہی تھی. سارا بدن پسینے سے بھیگ چکا تھا اور اس کی سانس بھی کافی پھول رہی تھی. لیکن اتنا مزہ اسے کبھی چدنے میں نہیں آیا تھا.
مہیش کو تو کچھ سدھ ہی نہیں تھی. اس کا دماغ اس کے لںڈ سے مشروط تھا. اس کی مامی کہ صورتحال کا نہ اسے اندازہ تھا نہ ہی فکر. اكے بند ریٹویٹ وہ اسے پیل رہا تھا. کچھ دیر میں اس کی رفتار دوگنی ہو گئی اور چندہ کہ چوت بھی اس کے لنڈ پر کسنے لگی تھی اور اسے نچوڑنے لگی تھی. تبھی مہیش نے چندہ میں اپنے بیج بو دیے اور چندہ کہ چوت نے جتنا ہو سکا انہیں نگل لیا.

جب مہیش نے اپنا لںڈ باہر نکالا تو اسپر خون کے دھبوں تھے. چندہ بھی پلتي تو اس کے چہرے کے بھاو دیکھ وہ سمجھ گیا کہ مامی پر کیا بیتی تھی. چندہ کو اپنی بانہوں میں بھر لیا اور اس کا ماں چومتے ہوئے اس سے معافی مانگی. اپنا لںڈ دھو کر مہیش باہر آ گیا اور چندہ خود کو صاف کرنے کے لئے باتھ روم میں ہی رک گئی. جیسے ہی مہیش بستر پر لیتا، چندر بیڈروم کا دروازہ کھول باہر آ گیا.
Reply With Quote
Sponsored Links
CLICK HERE TO DOWNLOAD INDIAN MASALA VIDEOS n MASALA CLIPS
Sponsored Links - Indian Masala Movies
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator
UKBL ~ 10 Second Banner Rotator

"Uncensored Indian Masala Movies" - The hottest Indian Sex Movies and Mallu Masala clips

Check out beautiful Indian actress in sexy and even TOPLESS poses

Indian XXX Movies!

Widest range of Indian Adult Movies of shy, authentic Desi women.....FULLY NUDE DESI MASALA VIDEOS!!! Click here to visit now!!!
Reply

Thread Tools
Display Modes

Posting Rules
You may not post new threads
You may not post replies
You may not post attachments
You may not edit your posts

BB code is On
Smilies are On
[IMG] code is On
HTML code is Off

Forum Jump


All times are GMT -4. The time now is 02:47 PM.


Powered by vBulletin® Version 3.8.3
Copyright ©2000 - 2017, Jelsoft Enterprises Ltd.

Masala Clips

Nude Indian Actress Masala Clips

Hot Masala Videos

Indian Hardcore xxx Adult Videos

Indian Masala Videos

Uncensored Mallu & Bollywood Sex

Indian Masala Sex Porn

Indian Sex Movies, Desi xxx Sex Videos

Disclaimer: HotMasalaBoard.com DOES NOT claim any responsibility to links to any pictures or videos posted by its members. HotMasalaBoard has a strict policy regarding posting copyrighted videos. If you believe that a member has posted a copyrighted picture / video, please contact Hotman super moderator. Members are also advised not to post any clandestinely shot material.